افغانستان میں داعش اور طالبان کے خلاف ایک ایسی طاقت میدان میں آگئی کہ سُن کر ہی مَردوں کی جان نکل جائے، یہ امریکہ یا کوئی اور ملک نہیں بلکہ۔۔۔

افغانستان میں داعش اور طالبان کے خلاف ایک ایسی طاقت میدان میں آگئی کہ سُن کر ...
افغانستان میں داعش اور طالبان کے خلاف ایک ایسی طاقت میدان میں آگئی کہ سُن کر ہی مَردوں کی جان نکل جائے، یہ امریکہ یا کوئی اور ملک نہیں بلکہ۔۔۔

  

کابل (مانیٹرنگ ڈیسک) داعش اور طالبان جیسی شدت پسند تنظیموں سے ایک دنیا خوفزدہ ہے، لیکن افغانستان کے انتہائی شمال میں سنگلاخ چٹانوں پر بسنے والی خواتین ناصرف ان سے ڈرتی نہیں ہیں بلکہ بندوق اٹھا کر ان کے شکار کے لئے نکل کھڑی ہوئی ہیں۔

ویب سائٹ آئی بی ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق شدت پسندوں کو اس غیر متوقع دشمن کا سامنا شمالی افغانستان کے کئی علاقوں میں کرنا پڑرہا ہے، جہاں قبائلی خواتین نے دہشتگردی کے خلاف اعلان جنگ کر دیا ہے۔ طالبان افغانستان میں کئی دہائیوں سے موجود ہیں لیکن داعش کی یہاں آمد قدرے نئی پیشرفت ہے۔ عراق اور شام سے اس کی پسپائی کے بعد یہ تنظیم افغانستان میں اپنا نیا مرکز قائم کرنے کی جدوجہد کررہی ہے۔

’میں وہ کام کرنے جارہی ہوں جو آج تک کسی پاکستانی لڑکی نے نہیں کیا‘ مقابلہ حسن جیتنے والی پاکستانی لڑکی نے ایسا کام کرنے کا اعلان کردیا جو ہوگیا تو ملک میں ہنگامہ برپاہوجائے گا

خامہ پریس کی رپورٹ کے مطابق حالیہ کچھ عرصے میں داعش کے بڑھتے ہوئے حملوں کے بعد افغانستان کے دور دراز شمالی ضلع جوزجان میں خواتین ہتھیار اٹھانے پر مجبورہوگئیں۔ کلاشنکوف اٹھائے ہوئے ان خواتین کی تصاویر اب سوشل میڈیا پر عام ہوگئی ہیں، اور شدت پسندوں کو بھی خبر ہوچکی ہے کہ شمالی افغانستان کا رخ کرنا ان کے لئے خطرے سے خالی نہیں رہا۔

ضلع درزاب میں خواتین جنگجوﺅں کی قیادت کرنے والی 53 سالہ خاتون فاطمہ کا کہنا تھا کہ اس کے گروپ میں شامل خواتین کی تعداد 45 تک پہنچ چکی ہے۔ یہ بہادر خواتین ناصرف شدت پسندوں کے خلاف جنگ لڑرہی ہیں بلکہ علاقے میںسکیورٹی گشت بھی کرتی ہیں۔

یاد رہے کہ افغان خواتین کی جانب سے ہتھیار اٹھانے کا یہ پہلا واقعہ نہیں ہے ۔ اس سے پہلے 2014ءمیں رضا گل نامی خاتون نے اس وقت بہت شہرت حاصل کی جب اس نے طالبان سے بدلہ لینے کے لئے بندوق اٹھا لی۔ رضاگل کا خاوند فرہاد صوبے میں ایک چیک پوسٹ پر تعینات تھا کہ طالبان کے حملے میں ہلاک ہوگیا۔ خاوند کی ہلاکت کا بدلہ لینے کے لئے رضاگل نے تن تنہا 24طالبان جنگجوﺅں کو ہلاک کیا۔

مزید :

بین الاقوامی -