شریف برادران کی سعودی ولی عہد سے ڈیڑھ گھنٹہ ملاقات ، ٹرمپ کا بیان غیر ذمہ دارانہ ، پوری قوم متحد ہو کر پاک فوج کے ساتھ کھڑی ہو جائے : شہباز شریف

شریف برادران کی سعودی ولی عہد سے ڈیڑھ گھنٹہ ملاقات ، ٹرمپ کا بیان غیر ذمہ ...

ریاض(آئی این پی ) سابق وزیراعظم نواز شریف اور وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کی سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان سے گزشتہ روز ملاقات ہوئی جو تقریبا ڈیڑھ گھنٹے تک جاری رہی،ملاقات کے بعد نواز شریف سعودی ولی عہد کے طیارے میں ہی مدینہ منورہ روانہ ہوئے،شہباز شریف6روزہ قیام کے بعد سعودی عرب سے وطن واپس پہنچ گئے ہیں ۔ منگل کو ترجمان شریف فیملی کے مطابق سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان سے شریف برادران کی ملاقات تقریبا ڈیڑھ گھنٹے تک جاری رہی جس کے بعد نواز شریف سعودی ولی عہد کے طیارے میں ہی مدینہ منورہ روانہ ہوئے۔شریف فیملی کے ترجمان کے مطابق نواز شریف نے روضہ رسول ﷺ پر حاضری دی جس کے بعد وہ دوبارہ جدہ روانہ ہوگئے جہاں سے عمرے کے لیے مکہ مکرمہ گئے۔ عمرے کی ادائیگی کے بعد نواز شریف گزشتہ روزاسلام آباد پہنچ گئے۔ ان کی پاکستان واپسی نجی ایئر لائن کی پرواز سے ہوئی۔ اسلام آباد ایئرپورٹ پر سابق وزیرِ اعظم کے استقبال کیلئے وفاقی وزرا اور کارکنوں کی بڑی تعداد موجود تھی۔ خیال رہے کہ نواز شریف کل صبح احتساب عدالت پیش ہوں گے ۔دوسری جانب وزیراعلی پنجاب شہباز شریف سعودی عرب سے وطن واپس پہنچ گئے جہاں انہوں نے 6 روز قیام کیا۔دریں اثنا لاہور پہنچنے کے بعد گفتگو کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب نے کہا ہے کہ پاکستان کیلئے امریکی امداد کے حوالے سے صدر ٹرمپ کابیان انتہائی غیر ذمہ دارانہ اور نا پسندیدہ ہے۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ ٹرمپ نے پاکستان اور پاکستانی قوم پر انتہائی سنگین الزامات عائد کیے ہیں اور اس وقت پوری قوم کو متحد ہو کر اس پر اپنا ردعمل ظاہر کرنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ ٹرمپ کے بیان کے تناظر میں صورت حال کا تقاضا یہ ہے کہ ہم پوری قومی یکجہتی کے ساتھ ذہانت اور معاملہ فہمی سے کام لیتے ہوئے اپنے آئندہ طرز عمل کی تشکیل کریں۔ انہوں نے کہا کہ اس متحدہ اور مشترکہ طرزعمل کی تشکیل میں ملک کے تمام طبقوں، سیاسی جماعتوں، قائدین، عسکری قیادت اور دوسرے سٹیک ہولڈرز کو اپنا بھرپور کردار ادا کرنا ہو گا۔انہوں نے کہا کہ حالات کے اس نازک موڑ پر پاکستان اندرو نی سطح پر انتشار انگیز سرگرمیوں اور قومی یکجہتی کے منافی رویوں کا کسی طور متحمل نہیں ہو سکتا۔محمد شہبازشریف نے کہا کہ پاکستان کی عسکری قیادت نے اس ضمن میں بجاطور پر یہ واضح کیا ہے کہ اگر پاکستان کیخلاف کوئی جارحیت ہوئی تو پاکستانی عوام متحد ہو کر اسکا جواب دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہم دیانتداری سے سمجھتے ہیں کہ ملکی دفاع اور سا لمیت کے تحفظ کیلئے پوری قوم اپنے تمام سیاسی اور گروہی اختلافات کو پس پشت ڈال کر افواج پاکستان کیساتھ کھڑے ہونا چاہیے۔

ملاقات

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک ،نیوز ایجنسیاں)وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے سعودی عرب کے دورے سے آج وطن واپسی کے فوراً بعدبغیر آرام کیے پاکستان کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ کا اچانک دورہ کیااورمختلف شعبوں کا معائنہ کیا۔ وزیراعلیٰ نے ادارے کے پہلے مرحلے میں مریضوں کو فراہم کی جانے والی علاج معالجے کی سہولتوں کا معائنہ کیا اوروہاں مریضوں کو فراہم کی جانے والی جدید طبی سہولتوں کا جائزہ لیا۔ وزیراعلیٰ نے ہسپتال میں علاج کیلئے آنے والے مریضوں کی عیادت کی اورطبی سہولتوں کے بارے میں دریافت کیا۔ مریضوں نے ہسپتال میں فراہم کی جانے والی طبی سہولتوں پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے وزیراعلیٰ کوبتایا کہ آپ نے گردے اور جگر کے مریضوں کیلئے شاندار ہسپتال بنایا ہے اور اللہ تعالیٰ آپ کو اس کا اجر دے گا۔مریضوں نے بتایا کہ وہ لاہور کے علاوہ منڈی بہاوالدین،قصور اوردیگر شہروں سے آئے ہیں اوریہاں ہمارا بہترین علاج ہورہا ہے۔ہمیں خوشی ہے کہ آپ نے دکھی انسانیت کی خدمت کیلئے شاندار ادارہ بنایا ہے،مریضوں نے وزیراعلیٰ کا شکریہ ادا کیااورکہاکہ ہم گردے اورجگر کے امراض کے علاج کیلئے ایسا شاندار اورسٹیٹ آف دی آرٹ ہسپتال بنانے پر آپ کو مبارکباد پیش کرتے ہیں۔وزیراعلیٰ نے ڈاکٹرز، نرسوں اور پیرامیڈیکل سٹاف سے گفتگو کی اورکہا کہ یہ ادارہ دکھی انسانیت کی خدمت میں ایک مثالی ادارہ بنے گا اورآپ سب نے عزم اورجذبے کے ساتھ مریضوں کی خدمت کرنی ہے ۔ وزیراعلیٰ نے امریکہ،برطانیہ اوردیگر ممالک سے اپنی ملازمتیں چھوڑ کر اس ادارے کیلئے کام کرنیوالے ڈاکٹرز،سرجنز اورفزیشنز کے جذبے کو سراہا اورکہا کہ آپ کا یہ جذبہ قابل تعریف ہے۔ وزیراعلیٰ نے ہسپتال میں اجلاس کی صدارت کی ،جس میں منصوبے کے پہلے مرحلے کے بقیہ کاموں کی تکمیل کیلئے ٹائم لائن کا جائزہ لیاگیاجبکہ دوسرے مرحلے کی جلد تکمیل کے حوالے سے وزیراعلیٰ نے ضروری ہدایات جاری کیں۔انہوں نے کہاکہ پنجاب حکومت، پاکستان کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ اورانفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ اتھارٹی پنجاب نے ملکر ایک کارنامہ سرانجام دیا ہے اورآپ سب کی محنت کے باعث پہلا مرحلہ وقت پر مکمل ہوا ہے ،اب آپ نے دوسرے مرحلے کی تکمیل کیلئے محنت کیساتھ کام کرکے اسے مکمل کرنا ہے ۔انہوں نے کہا کہ میں سعودی عرب سے واپسی کے بعد سیدھا ہسپتال آیا ہوں تاکہ یہاں طبی سہولتوں کا خود جائزہ لے سکوں اورمجھے بے حد خوشی ہے کہ ڈاکٹرزاورنرسیں محنت سے کام کررہی ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ہسپتال میں بجلی کا تعطل کسی صورت نہیں ہوناچاہیے۔اس ضمن میں متبادل انتظامات مکمل رکھے جائیں اورسٹیرنگ کمیٹی ازخود تمام اقدامات کرے،انہوں نے ہدایت کی کہ منصوبے کے دوسرے مرحلے کی تکمیل کیلئے دن رات محنت سے کام کیا جائے۔جس طرح پہلا مرحلہ مکمل کیا گیا ہے، اسی طرح دوسرے مرحلے کو بھی مکمل کرنا ہے۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ صفائی کے نظام پر مکمل توجہ دی جائے ۔بعدازاں وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہ ہسپتال پورے خطے میں رول ماڈل بنے گا اور دکھی انسانیت کی خدمت میں اس ادارے کا اپنا منفرد مقام ہوگا۔اس ہسپتال کے پہلے مرحلے کو شبانہ روز محنت کر کے مکمل کیا گیاہے اورمیں سعودی عرب کے دورے کے بعدوطن واپس پہنچتے ہی سیدھا ہسپتال آیا ہوں اورمیں نے یہاں ادارے کے زیر تکمیل کاموں کے بارے میں جائزہ میٹنگ لی ہے۔ ہسپتال میں مریضوں کو بہترین علاج معالجہ فراہم کیا جا رہا ہے اور مجھے ڈاکٹروں، نرسوں اور پیرامیڈیکل سٹاف کو دکھی انسانیت کی خدمت میں مصروف دیکھ کر خوشی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پہلے مرحلے کی کچھ چھوٹی موٹی چیزیں جلد آپریشنل ہوجائیں گی جبکہ دوسرے مرحلے کو 23مارچ کو مکمل کیا جائے گا ۔ہماری کوشش ہے کہ رواں ماہ ہی اس ادارے میں گردے کی ٹرانسپلانٹ شروع کردی جائے جبکہ جگر کی ٹرانسپلانٹ کا کام مارچ میں شروع کیا جائے گا۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ پی کے ایل آئی میں ملک بھر سے غریب مریضوں کو مفت علاج کی سہولت فراہم کریں گے۔ گردے اور جگر کے امراض میں مبتلا غریب مریضوں کے علاج کے اخراجات حکومت پنجاب ادا کرے گی اورکسی مریض کو ٹرانسپلانٹ،ادویات یا ٹیسٹوں کیلئے کوئی رقم نہیں دینا پڑے گی۔انہوں نے کہا کہ حکومت پنجاب گزشتہ 9سال میں گردے اورجگر کے امراض میں مبتلا غریب مریضوں کے علاج پر ڈیڑھ ارب سے زائد خرچ کرچکی ہے اورہم نے ان مریضوں کو چین،بھارت اوردیگر ممالک علاج کیلئے بھجوایا ہے لیکن اب ایسے مریضوں کاعلاج پاکستان کڈنی اینڈ لیورٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ میں ہوگااوروہ بھی مفت ہے وہ تبدیلی ،تغیر اورانقلاب جو پنجاب حکومت نے صحت عامہ کے شعبے میں برپا کیاہے۔انہوں نے کہا کہ پی کے ایل آئی کے پہلے فیز کی تکمیل کے بعد دوسرا فیز بھی انشاء اللہ 23مارچ تک پایہ تکمیل تک پہنچ جائے گا۔پی کے ایل آئی کے دوسرے مرحلے کی تکمیل کے بعد گردوں کی پیوندکاری کا عمل شروع ہوجائے گا،جس سے چین اوردیگر ممالک میں علاج کی غرض سے جانے والے مریضوں کا علاج وطن میں ہی ممکن ہوگا۔انہوں نے کہاکہ پاکستان کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ اینڈ ریسرچ سینٹر میں دنیا بھر سے بہترین پاکستانی ڈاکٹر بھی آرہے ہیں۔میں اہل وطن کی خدمت کی خاطر پاکستان آنے والے ڈاکٹروں کے جذبے کو سلام پیش کرتا ہوں ،جنہوں نے مراعات اورتنخواہ پر غریب اوردکھی لوگوں کی خدمت کو ترجیح دی اورایسے مسیحا ہمارے سروں کے تاج ہیں،جنہوں نے مجھ ناچیز،حکومت پنجاب اورڈاکٹر سعید اختر پر اعتماد کیا ہے۔میڈیا کہ ایک سوال کے جواب میں وزیراعلیٰ نے کہا کہ سعودی عرب پاکستان کا بہترین اوربااعتماد دوست ہے جس نے مشکل اور آفات میں ہمیشہ پاکستان کا ساتھ دیا ہے۔پاکستان اورسعودی عرب کے درمیان رشتے دلوں کے ہیں اوردونوں ملک ایک دوسرے پر مکمل اعتماد کرتے ہیں۔ سعودی عرب نے کبھی کوئی شرط نہیں رکھی۔پاکستان نے ہمیشہ برادر ملک سعودی عرب پر اندھا اعتماد کیا کیونکہ یہ بناوٹی اور روایتی رشتے نہیں، دونوں ممالک ایک دوسرے کیساتھ اعتماد کے رشتے میں بندھے ہوئے ہیں،پاکستان کی 70 سالہ تاریخ میں ہر مشکل اور آفات کے دور میں سعودی عرب قابل اعتماد ساتھی بن کر سامنے آیاہے، چاہے یہ سیلاب ہو یا زلزلے کی آفت، پاک سعودیہ دوستی ہر آزمائش پر پورا اتری ہے،سعودی عرب جنگوں ،سفارتی سطح پر اوربین الاقوامی فورمز پر پاکستان کے ساتھ کھڑا رہا ہے،پاکستان کی سیاسی،اخلاقی،سفارتی اورمالی لحاظ سے مدد کی ہے اورکبھی کوئی شرط نہیں رکھی ۔ وزیراعلیٰ نے ایک اورسوال کے جواب میں کہا کہ میرا سعودی عرب کا دورہ کوئی اچھنبے کی بات نہیں۔مجھے سعودی عرب کی حکومت نے عمرہ کی دعوت دی تھی اور میں نے عمرے کی سعادت حاصل کی ہے اور میں اس پر اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرتا ہوں۔ سعودی عرب نے ہر بار کی طرح اس مرتبہ بھی بہترین مہمان نوازی کی۔ ایک اورسوال کے جواب میں وزیراعلیٰ نے کہا کہ کچھ کہتے ہیں کہ میں سعودی عرب کے خصوصی جہاز میں گیا اورکچھ کہتے ہیں کہ میں نجی جہاز میں گیا۔بعدازاں وزیراعلیٰ پنجاب نے پاکستان کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ کی رابطہ سڑک کا افتتاح کر دیا۔۔دریں اثناوزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف کی زیر صدارت اعلی سطح کا اجلاس منعقد ہوا ،جس میں گنے کے کاشتکاروں کے مسائل کے حل کے لئے حکومتی ا قدامات پر پیشرفت کا جائزہ لیا گیا۔وزیر اعلی پنجاب محمدشہبازشریف نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ پنجاب حکومت نے گنے کے کاشتکاروں کے حقوق کے تحفظ کو یقینی بنایاہے ۔کسان میرے بھائی ہیں انہیں محنت کا معاوضہ دلایا جائیگا اورگنے کے کاشتکاروں کے مفادات کے تحفظ کے لئے ہر ضروری اقدام ا ٹھایا جارہا ہے۔کسی کو کسان کی حق تلفی نہیں کرنے دوں گا ۔وزیراعلی نے وزن کی کٹوتی کرنے والی ملوں کے خلاف بلاامتیاز کارروائی جاری رکھنے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ وزن میں کٹوتی کی شکایت کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی ۔انہوں نے کہاکہ غیر قانونی کنڈوں کے خلاف بھی بلا تفریق ایکشن جاری رکھا جائے اور متعلقہ صوبائی وزراء اور سیکرٹریز کاشتکاروں کے حقوق کے تحفظ کے لئے ہمہ وقت فیلڈ میں موجود رہیں کیونکہ فیلڈ کے دوروں کے باعث صورتحال میں بہتری آئی ہے۔وزیرخزانہ عائشہ غوث پاشا ، ترجمان حکومت پنجاب ملک محمد احمد خان، چیف سیکرٹری ، ایڈیشنل چیف سیکرٹری داخلہ ، چیئرمین منصوبہ بندی و ترقیات اور دیگر متعلقہ حکام نے اجلاس میں شرکت کی جبکہ صوبائی وزیربلال یاسین فیصل آباد ، شیخ علاؤالدین ننکانہ صاحب ، نعیم اختر بھابھہ اور اقبال چنڑبہاولپور ، فرخ جاوید سرگودھا اور دیگر حکام ویڈیولنک کے ذریعے اجلاس میں شریک ہوئے۔

شہباز شریف

مزید : صفحہ اول