وزیر اعلٰی کی صوبہ بھر کے تمام مساجد کو شمسی توانائی کے نظام سے منسلک کرنیکی ہدایت

وزیر اعلٰی کی صوبہ بھر کے تمام مساجد کو شمسی توانائی کے نظام سے منسلک کرنیکی ...

پشاور( سٹاف رپورٹر)وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے صوبے بھر میں مساجد کو شمسی توانائی کے نظام سے منسلک کرنے پر کام جلد ازجلد شروع کرنے کی ہدایت کی ہے اور واضح کیا ہے کہ اس سلسلے میں پہلے سے طے شدہ ٹائم لائن پر سختی سے عمل درآمد یقینی بنایا جائے جس میں تاخیر کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی وہ وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں مساجد کی سولرائزیشن سے متعلق اجلاس کی صدارت کر رہے تھے جس میں سیکرٹری توانائی انجینئر محمد نعیم خان نے وزیراعلیٰ کو اُن کی ہدایات کے تحت مساجد میں شمسی نظام کی تنصیب سے متعلق پیش رفت پر آگاہ کیا۔ اُنہیں بتایا گیا کہ اس اہم منصوبے کا کنٹریکٹ جنوری کے آخری ہفتے تک دے دیا جائے گاجبکہ مساجد کی سولرائزیشن کا پور ا عمل وزیراعلیٰ کی ہدایات کے مطا بق پوری تیزی کے ساتھ مئی تک مکمل کرلیا جائے گا۔ پرویز خٹک نے ہدایت کی کہ وہ اس اہم منصوبے کی تکمیل اور مختلف مراحل کا ٹائم لائن تحریری شکل میں سٹرٹیجک سپورٹ یونٹ کے سربراہ صاحبزادہ سعید اور اُن کے پرنسپل سیکرٹری سید شہاب علی شاہ کے حوالے کریں تاکہ نگرانی کا عمل بھی موثر بنایا جاسکے۔انہوں نے سیکرٹری توانائی کو بھی ہدایت کی کہ مساجد کی سولرائزیشن کے منصوبے پر عمل درآمد کے پورے عمل کی لمحہ بہ لمحہ نگرانی کریں تاکہ کسی بھی مرحلے پر غفلت کا مظاہرہ دیکھنے میں نہ آئے ۔ وزیراعلیٰ نے حکام کو سختی سے ہدایت کی کہ مساجد کی سولرائزیشن مئی تک ہر صورت میں مکمل ہونی چاہیئے تاکہ آئندہ موسم گرما کے دوران مساجد میں شمسی توانائی کا متبادل نظام یقینی طور پر دستیاب ہو اور لوڈ شیڈنگ کی صورت میں نمازیوں کو تکالیف سے بچایا جا سکے ۔

پشاور( سٹاف رپورٹر)وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت نے کھیلوں سمیت تمام شعبوں میں ریکارڈ کام کیا اور سو فیصد اہداف حاصل کئے انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے ساڑھے چار سال کی مختصر مدت میں صوبے بھر میں ایک سو نئے سپورٹس گراؤنڈز بنائے جبکہ مزید تیس پر کام آخری مراحل میں ہے اسی طرح ڈیڑھ سو سے زائد چھوٹے گراؤنڈز کی تعمیر کے علاوہ نوجوانوں کیلئے ان ڈور اورآؤٹ ڈور سہولیات میں بے پناہ اضافہ کیا کیونکہ نوجوانوں کی تعلیم و صحت اور تفریح کیلئے زیادہ سہولیات اور کھیلوں و یوتھ پروگرامز کا بندوبست پی ٹی آئی حکومت کے ایجنڈے میں شامل ہے۔وہ حیات آباد سپورٹس کمپلیکس پشاور میں زلمی سکولز لیگ کی اختتامی تقریب سے بحیثیت مہمان خصوصی خطاب کر رہے تھے یہ انٹر سکولز صوبائی ٹورنامنٹ پہلی بار منعقد کیا گیا جو آئندہ ہر سال محکمہ تعلیم ،محکمہ کھیل اور پشاور زلمی فاونڈیشن کی معاونت سے منعقد ہو گا ٹورنمٹ کا فائنل ملاکنڈ اور پشاور ڈویثرن کی ٹیموں کے مابین کھیلا گیا جو آخر الذکر نے واضح برتری سے جیت لیا، تقریب میں صوبائی وزیر تعلیم محمد عاطف خان، صوبائی وزیر کھیل محمود خان ، وزیر اعلیٰ کے مشیر برائے بہبود آبادی شکیل خان ایڈوکیٹ ،رکن صوبائی اسمبلی ارباب جہانداد خان اور پشاور زلمی فاؤنڈیشن کے صدر و سابق ٹیسٹ کرکٹر ظہیر عباس نے بھی شرکت کی۔وزیر اعلیٰ نے کہا کہ پشاور میں کروڑں روپے کی لاگت سے قیوم سپورٹس کمپلیکس، ارباب نیاز کرکٹ سٹیڈیم اور کھیلوں کے دیگر گراؤنڈز کو اپ گریڈ اور جدید بنا کر بین الاقوامی معیار پر لایا گیا اسی طرح ہماری کوشش ہے کہ کم از کم ڈویثرنل سطح پر عالمی سطح کے سٹیڈیم اور سپورٹس گراؤنڈز تیار ہو ں تاکہ صوبے بھر میں بین الاقوامی سطح کے مقابلے منعقد کرائے جا سکیں اور ہمارے نوجوان اور کھلاڑی بھی کھیلوں کے قومی دھارے میں شامل ہوں ۔انہوں نے سکولوں کے طلبا و طالبات اور نوجوانوں پر بھی زور دیا کہ وہ تعلیمی سرگرمیوں کے ساتھ ساتھ کھیلوں میں بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لیں اور اس ضمن میں حکومت کی مہیا کردہ سہولیات سے بھرپور استفادہ کریں انہوں نے کہا کہ ہماری سرزمین زر خیز اور ٹیلنٹ سے مالا مال ہے اور بہتر سہولیات کی ذریعے نہ صرف کھیلوں بلکہ ہر شعبہ زندگی میں جوہر قابل ابھر سکتے ہیں اور قومی و بین الاقوامی سطح پر ملک و قوم کا نام روشن کر سکتے ہیں۔پرویز خٹک نے میڈیا کے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ صوبائی حکومت کو امید ہے کہ وفاق پشاور اور خیبر پختونخوا کے دوسرے پلے گرا ؤنڈز میں بھی قومی اور بین الاقوامی مقابلوں کا اہتمام کرے گا کیونکہ صوبے میں کھیلوں کی بہتر سہولیات اور ساز گار ماحول کے ساتھ ساتھ امن و امان کی صورت حال بھی تسلی بخش حد تک پہنچا دی گئی ہے انہوں نے ٹورنامنٹ کے فاتح کھلاڑیوں کو مبارکباد دی جبکہ ہارنے والی ٹیموں کی حوصلہ افزائی بھی کی ۔انہوں نے صوبے کی تاریخ میں پہلی بار انٹر سکولز ٹورنامنٹ کے انعقاد پر محکمہ تعلیم ،محکمہ کھیل اور پشاور زلمی فاونڈیشن کے علاوہ سکولوں کے پرنسپلز اور ٹرینرز کا بھی شکریہ ادا کیا۔

مزید : کراچی صفحہ اول