پاکستان، چین سے سب سے زیادہ ’سافٹ لون‘ حاصل کرنے والا ملک بن گیا

پاکستان، چین سے سب سے زیادہ ’سافٹ لون‘ حاصل کرنے والا ملک بن گیا
پاکستان، چین سے سب سے زیادہ ’سافٹ لون‘ حاصل کرنے والا ملک بن گیا

  

اسلام آباد (ویب ڈیسک)پاکستان دنیا میں چین سے سب سے زیادہ رعایتی قرضے حاصل کرنے والا ملک بن گیا ہے، پاکستان کے لئے چار ارب ڈالر کا سافٹ لون پہلے ہی منظور کیا جا چکا ہے جو بنیاد ی ڈھانچے کے جاری منصوبوں کے لئے ہے اور پاک چائنا اکنامک کوریڈور کے تحت ریلوے لائنوں کی اپ گریڈیشن کے لئے اضافی 8 ارب ڈالر کے قرض پر غور کیا جا رہا ہے، اس بات کا دعوی دفتر خارجہ میں ذرائع نے کیا ہے۔

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔

روزنامہ جنگ کے مطابق چین میں ہونے والی بات چیت سے آگاہی رکھنے والے ایک ذریعے نے منگل کو بتایا کہ پاکستان کے ساتھ اس بڑے پیمانے پر تعاون کے باوجود چین کے خلاف منفی اور غلط رپورٹنگ پر بیجنگ میں سنگین تشویش پیدا ہورہی ہے، چینی دونوں ممالک کے دشمنوں کی جانب سے بیرونی پروپیگنڈے کے درمیان سی پیک سے متعلق پاکستان کے کچھ میڈیا کے اداروں میں جھوٹی رپورٹنگ سے متعلق شکایت کر رہے ہیں۔ چین پہلے ہی قراقرم ہائی وے اور ملتان سکھر موٹر وے کے دو جاری منصو بو ں کے لئے 4 ارب ڈالر کا سافٹ لون منظور کر چکا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ایک اور اہم بنیادی ڈھانچے کا منصوبہ جس کا نام کراچی پشاور مین لائن (ایم ایل ون) ہے جلد ہی چین کے رعایتی8.2  ارب ڈالر کے قرض سے شروع ہوگا۔ اس منصوبے کے تحت ریلوے ٹریک کو مکمل طور پر تبدیل کیا جائے گا جس سے کراچی اور پشاور کے مابین چلنے والی ریل 160 کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چل سکے گی جو اس وقت 70 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک کے تحت بنیادی ڈھانچے کے مختلف منصوبوں کے لئے پاکستان کو جس سافٹ لون کی پیش کش کی گئی ہے وہ 20 برس میں قابل ادا ہوگا اور اس پر 2 اعشاریہ 5سے 2 اعشاریہ 6 کی شرح سے سود ادا کرنا ہوگا۔

شہادت کے بعد بھارتی فوجیوں نے پاک فوج کے کیپٹن کی تلاشی لی تو اسکی جیب سے ایسی چیز نکلی کہ انہوں نے فوری اسکی لاش پاک فوج کے حوالے کردی۔کارگل کے اس بہادر کے بارے جان کر آپ کو اس پر رشک آئے گا

رپورٹ کے مطابق مزید براں گوادر پورٹ اور ماسٹر سٹی بیجنگ کی گرانٹ سے تعمیر کیے جارہے ہیں تاہم ذرائع نے کہا کہ یہ درست نہیں ہے کہ پاکستان سی پیک کے لئے بڑے پیمانے پر قرض لے رہا ہے، توانائی کے زیادہ تر منصوبوں کی آئی پی پیز کی جانب سے فنڈنگ کی جارہی ہے جو چینی بینکوں سے قرض لے رہے ہیں تاکہ بجلی پیدا کرکے پاور پرچیز ایگریمنٹ کے تحت پاکستان کو بجلی فروخت کریں، انفرااسٹرکچر کے منصوبوں کو چین کے سافٹ لون سے فنانس کیا جارہا ہے۔ انہوں نے یہ دعوی بھی کیا کہ یہ مکمل طور پر من گھڑت بات ہے کہ چین نے کسی منصوبے کے لئے فنانس روک دیا ہے، سی پیک کے کچھ منصوبوں کے لئے مالی معاہدوں پر ابھی تک اتفا ق نہیں ہوا ہے لیکن میڈیا میں جو روکنے کا دعوی کیا جاتا ہے وہ درست نہیں ہے۔ ذرائع نے پاکستانی میڈیا میں رپورٹس کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ سی پیک چین کے لئے لائف لائن نہیں ہے جیسا کہ کچھ لوگ دعوی کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک چین کو دستیاب واحد راستہ نہیں ہے کیونکہ چین کے بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹیو کے تحت پانچ دیگر راہداریاں بھی بنائی جا رہی ہیں۔ گزشتہ برس ہی چین اور یورپ کے مابین 3 ہزار کارگو ٹرینیں چلی ہیں، یہ وہ حقیقت ہے جو چینی معیشت کے بارے میں بہت کچھ بتاتی ہے۔

کویت کے آرمی چیف کا ہیلی کاپٹر کریش ہوگیا اور پھر ۔۔ ۔

دوسری جانب دفتر خارجہ کے مطابق سی پیک پاکستان کے لئے بہت ہی عظیم موقع ہے جس کے تحت توانائی اور بنیادی ڈھانچوں کے منصوبوں کے علاوہ پاکستان کے تمام خطوں میں 9 صنعتی زون بنائے جائیں گے۔ جو ملک کی معیشت کو زبردست تقویت پہنچائیں گے اور ملازمتوں کے مواقع پیدا کریں گے۔ ذرائع نے کہا کہ اس دعوے میں کوئی صداقت نہیں ہے کہ چین سی پیک کے ذریعے پاکستان کو اپنی نوآبادیات بنا نا چاہتا ہے۔ ہماری مثالی باہمی تعاون کی 60 سال کی تاریخ ہے اور چین نے کبھی پاکستان پر شرائط نہیں تھوپیں۔ 2013 میں جب کوئی ملک پاکستان میں سرمایہ کاری میں دلچسپی نہیں رکھتا تھا تو چین نے آگے بڑھ کر اسلام آباد کو بھرپور تعاون فراہم کیا تھا۔ ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ چینی پاکستان میں حکومت کی تبدیلی سے پریشان نہیں ہیں کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ یہ ریاست کا ریاست سے تعاون ہے اور سی پیک کے مستقبل کے حوالے سے پاکستان میں سیاسی اتفاق رائے پایا جاتا ہے۔ چینی سفارت خانے کے مطابق اس وقت پاکستان میں 25 سے 26 ہزار چینی باشندے موجود ہیں تاہم دفتر خارجہ کے ذرائع نے اس تاثر کی تردید کی ہے کہ سی پیک کے منصوبے خالصتا چینی مزدوروں کے ذریعے تعمیر کیے جا رہے ہیں۔ مثال کے طور پر ساہیوال پاور پلانٹ پر صرف 30 فیصد چینی ورک فورس ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ چین نے پاکستانی بینکوں اور مالیاتی اداروں کو چین کے اندر اپنی شاخیں قائم کرنے کے لئے خصوصی مراعات دینے کی پیش کش کی ہے، ان رعایتوں کا فائدہ اٹھاتے ہوئے حبیب بینک لمیٹیڈ نے اڑمچی میں اپنی شاخ کھولی ہے۔

عامر خان نے فریال مخدوم سے کشیدگی کی انتہائی حیران کن وجہ بتا دی

مزید : علاقائی /اسلام آباد