مقبوضہ بیت المقدس ، یہودیوں کا قبلہ اول پر دھا وابے، حرمتی

مقبوضہ بیت المقدس ، یہودیوں کا قبلہ اول پر دھا وابے، حرمتی

مقبوضہ بیت المقدس (صباح نیوز)یہودیوں کی انتہا پسند تنظیموں کی اپیل پرسوموار کو درجنوں یہودی آباد کاروں نے تلمودی تعلیمات کے مطابق مذہبی رسومات کی ادائیگی کی آڑ میں مسجد اقصی میں گھس کر مقدس مقام کی بے حرمتی کی۔ فلسطینی محکمہ اوقاف کے شعبہ تعلقات عامہ کے سربراہ فراس (بقیہ نمبر48صفحہ7پر )

الدبس نے بتایا کہ سوموار کو 43 یہودی آباد کار پولیس کی فول پروف سکیورٹی میں قبلہ اول میں داخل ہوئے اور مذہبی رسومات کی ادائیگی کی آڑ میں مقدس مقام پر اشتعال انگیز حرکات کا ارتکاب کیا، ان میں 25 یہودی مذہبی اسکولوں اور جامعات کے طلبا بھی شامل تھے۔ یہودی آباد کاروں کے ایک گروپ کی قیادت شدت پسند یہودی مذہبی لیڈروں اور یہودی ر اہبوں نے کی۔ اس موقع پر مسجد کے محافظوں نے یہودیوں کو قبلہ اول میں داخل ہونے سے روکنے کی کوشش کی تو یہودیوں نے انہیں زدو کوب کیا۔ اسرائیلی پولیس نے بھی فلسطینی محافظوں کو پیچھے دھکیل دیا اور یہودی آباد کاروں کو آزادی کے ساتھ مسجد میں گھومنے کی اجازت دی گئی ، یہودی آباد کاروں کی قبلہ اول پر یلغار کے وقت فلسطینیوں کی بڑی تعداد بھی مسجد اقصیٰ میں جمع ہوگئی۔ فلسطینیوں نے یہودیوں کی اشتعال انگیزی کا مقابلہ کرنے اور انہیں روکنے کی کوشش کی مگر قابض فوج نے فلسطینیوں کو تشدد کا نشانہ بنایا۔ عینی شاہدین نے بتایا کہ یہودی آباد کاروں کی اشتعال انگیز یلغار کے باعث مسجد اقصیٰ میں کشیدگی پائی جار ہی ہے۔ مسجد اقصیٰ کے تمام داخلی اور خارجی راستوں پر صہیونی فوج اورپولیس کی بھاری نفرتی تعینات رہی ۔خیال رہے کہ یہودی انتہا پسند تنظیموں نے گذشتہ دونوں آباد کاروں سے اپیل کی تھی کہ وہ ہفتے اور اتوار کے ایام میں مسجد اقصی میں داخل ہو کراجتماعی انداز میں تلمودی تعلیمات ادا کریں۔ دوسری جانب فلسطینی مذہبی جماعتوں اور قبلہ اول کے دفاع کے لیے کام کرنے والی انجمنوں نے بھی فلسطینیوں سے اپیل کی ہے کہ وہ یہودی شرپسندوں کی یلغار روکنے کے لیے مسجد اقصیٰ میں اپنی حاضری کویقینی بنائیں۔ یہودیوں کی یلغار روکنے کے لیے فلسطینیوں کی بڑی تعداد مسجد اقصی کے اندر اور باہر موجود ہے۔ اسرائیلی فوج اور پولیس نے فلسطینیوں کو مسجد کے اندر جانے سے روک دیا ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر