ریلوے سگنل کرپشن کیس، 5ملزمان کے جوڈیشل ریمانڈ میں 6 روز کی توسیع

ریلوے سگنل کرپشن کیس، 5ملزمان کے جوڈیشل ریمانڈ میں 6 روز کی توسیع

  



لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت کے جج محمد امیر خان نے 55 کروڑ روپے ریلوے سگنل کرپشن کیس میں ملوث 5ملزمان کے جوڈیشل ریمانڈ میں 6 روز کی توسیع کردی،عدالت نے ملزموں کو دوبارہ8 جنوری کو عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیاہے،ملزمان میں پراجیکٹ ڈائریکٹر فہیم انور شاہ، سابق چیف سگنل انجینئر ملزم عطاء اللہ، سابق چیف فائنینشل آفیسر ڈاکٹر محمد سعید،ڈپٹی پراجیکٹ ڈائریکٹر محمد احمد اور پرائیویٹ فرم کے مالک (کنٹریکٹر) ڈاکٹر معاذ محی الدین شامل ہیں، نیب کے پراسیکیوٹر کا موقف ہے کہ دوران تحقیقات ملزمان کی الیکٹرک سگنل پراجیکٹ میں آپس کی ملی بھگت سے کروڑوں روپے کی کرپشن منظر عام پر آئی، پاک ریلوے کی جانب سے 2016 میں بن قاسم یارڈ پر سگنل سسٹم کی تعیناتی کیلئے میسرز اکیوی ناکس نامی کمپنی کو ٹھیکہ جاری کیا گیا، 550 ملین مالیت کاٹھیکہ مبینہ طور پر قواعد و ضوابط کیخلاف میسرز اکیوی ناکس کو دیا گیا۔

میسرز اکیوی ناکس کیٹگری-5 کی ایک کمپنی تھی حالانکہ یہ ٹھیکہ صرف کیٹگری-3 کی فرم کو دیا جا سکتا تھا، ریلوے افسران کی جانب سے میسرز اکیوی ناکس کو ٹھیکہ دینے کیلئے جعلی دستاویزات تیار کی گئیں، تحقیقات کے مطابق ملزمان نے آپس کی ملی بھگت سے کمپنی کو مطلوبہ تجربہ میں بھی رعایت دی گئی، میسرز ایکوی ناکس کی جانب سے فراہم کئے گئے آلات کی مالیت 38 کروڑ روپے ظاہر کی گء جبکہ ان آلات کی اصل قیمت 9 کروڑ 70 لاکھ روپے تھی۔

مزید : علاقائی


loading...