نوشہرہ پولیس کی جرائم پیشہ عناصر کیخلاف گذشتہ سال کی کارروائیاں

نوشہرہ پولیس کی جرائم پیشہ عناصر کیخلاف گذشتہ سال کی کارروائیاں

  



نوشہرہ (بیورورپورٹ)نوشہرہ پولیس نے جرائم پیشہ افراد کیخلاف گزشتہ سال میں بھر پور اور موثر کاروائیاں کی گئی۔جن میں 9 سالہ مناہل قتل کیس،10 سالہ ریحان قتل کیس یا نوشہر ہ کی تاریخ کی سب سے بڑی چوری 9 کروڑ کا کیس ہو نوشہرہ پولیس نے اپنے پیشہ وارنہ صلا حیتوں کا لوہا منواتے ہوئے ہر کیس کو قلیل وقت میں ٹریس کرکے ملزمان کو قانون کے کٹہرے میں کھڑا کیا۔2019ضلع بھر میں سماج دُشمن عناصر کے خلاف جاری بھر پور کاروائیوں کے دوران قتل،اقدام قتل ڈکیتی، راہزنی اور دوسرے سنگین مقدمات میں مطلوب 2033مجرمان اشتہاری گرفتار کئے گئے۔جرائم کی شرح میں کمی کیلئے نیشنل ایکشن پلان پر عملد رآمد کو یقینی بنا کر روزانہ کی بنیاد پر سرچ اینڈ سٹرائیک آپریشن کئے گئے۔نوشہرہ پولیس نے مجرمان اشتہاریوں کیخلاف کاروائیوں کے دوران82 کلاشنکوف،186رائفل، 1394 پستول،55900کارتوس برآمد کر لیے۔ نوجوان نسل کو نشے کی لت میں مبتلا کرنے والے منشیات فروشوں اور سمگلروں کے خلاف کاروائی کرتے ہوئے 2037 کلوگرام چرس،103 کلو گرام ہیروئن، 207 کلوگرام افیون او 4.3 کلوگرام آئس برآمد کرکے ملزمان کو پابند سلاسل کیا گیا۔ اور ساتھ ہی امن و امان کی صورت حال برقرار رکھنے کے لئے11528افراد کے خلاف انسدادی کاروائیاں جبکہ 8395 مشتبہ گان کیخلاف کاروائیاں عمل میں لائیں گئی۔جس سے قتل اور اقدام قتل کی شرح میں کمی واقع ہوئی۔2018میں قتل 151اوراقدام قتل 171جبکہ2019 میں قتل131اور اقدام قتل 145 ہیں۔ٹریفک اصلاحات اور بہترین ٹریفک منیجمنٹ کی وجہ سے روڈ ایکسڈنٹ میں کافی کمی لائی گئی۔ 2018میں 499 روڈ ایکسڈنٹ ہوئے جسمیں کئی قیمیتی جانیں گئی جبکہ2019 میں یہ کم ہوکر 268 تک محدود رہی۔ڈسٹرکٹ پولیس افیسر کاشف ذوالفقار نے پولیس افسران کو احکامات جاری کرتے ہوئے کہا کہ نوشہرہ کو جرائم سے پاک کرنے اور قانون کی بالادستی کیلئے تمام تر اقدامات اُٹھائے جائیں۔منشیات جیسے لعنت سے عوام کو چھٹکارا دلایا جائے۔اشتہاریوں،غیر قانونی اسلحہ رکھنے والوں اور منشیات فروشوں کے خلاف بھر پوراوربلا متیاز کاروائیوں کا سلسلہ انشاء اللہ اسی طرح جاری رہے گی۔

مزید : پشاورصفحہ آخر