عراقی فضائی اڈے پر ایرانی جنرل کی ہلاکت لیکن دراصل وہ کہاں سے آرہے تھے؟

عراقی فضائی اڈے پر ایرانی جنرل کی ہلاکت لیکن دراصل وہ کہاں سے آرہے تھے؟
عراقی فضائی اڈے پر ایرانی جنرل کی ہلاکت لیکن دراصل وہ کہاں سے آرہے تھے؟

  



بغداد(ڈیلی پاکستان آن لائن)عراق میں مارے گئے ایرانی جنرل قاسم سلیمانی سے متعلق تفصیلات کی آمد کا سلسلہ جاری ہے۔عراقی سینئر سکیورٹی عہدیدار کے مطابق ایرانی جنرل شام یا لبنان سے ہوتے ہوئے بغداد آئے تھے جبکہ المہندس ان کے استقبال کیلئے وہاں پہنچے تھے۔

تفصیلات کے مطابق عراقی دارالحکومت بغداد کے ایئرپورٹ پرامریکی راکٹ حملوں میں ایرانی فوج کے ٹاپ کمانڈراور نیشنل گارڈ کے سربراہ جنرل قاسم سلیمانی کے ساتھ جاں بحق ہوگئے ہیں۔ایئرپورٹ کے سینئر سکیورٹی عہدیدار نے امریکی خبررساں ادارے کو بتایا ہے کہ رات کے آخری پہر کئے گئے اس حملے میں مارے جانے والوں میں جنرل سلیمانی اور المہندس بھی شامل ہیں۔ جبکہ ایران کے وفادار دو ملیشیا لیڈروں نے بھی دونوں کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے۔

انڈی پنڈنٹ کے مطابق سکیورٹی عہدے دار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ دیگر لوگوں کے قافلے کے ساتھ المہندس جنرل قاسم سلیمانی کے استقبال کے لیے ہوائی اڈے پہنچے تھے، جن کا طیارہ لبنان یا شام سے بغداد پہنچا تھا۔کارگو ایریا میں اس وقت حملہ کیا گیا جب جنرل قاسم سلیمانی طیارے سے اترے اور المہندس سمیت دوسرے افراد نے ان کا استقبال کرنا تھا۔

مزید : عرب دنیا /بین الاقوامی


loading...