ننکانہ صاحب میں گردوارہ جنم استھان پر ہجوم نے حملہ کردیا

ننکانہ صاحب میں گردوارہ جنم استھان پر ہجوم نے حملہ کردیا
ننکانہ صاحب میں گردوارہ جنم استھان پر ہجوم نے حملہ کردیا

  



ننکانہ صاحب (ڈیلی پاکستان آن لائن) ننکانہ صاحب میں سکھ مذہب کے بانی گرونانک کی جائے پیدائش پر واقع گردوارہ جنم استھان پر مشتعل ہجوم کی جانب سے حملہ کیا گیا ہے۔

سوشل میڈیا پر سامنے آنے والی ویڈیوز میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ایک آدمی ہجوم کو اشتعال دلا رہا ہے اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کو چیلنج کر رہا ہے۔ ہجوم کی قیادت کرنے والے شخص نے کہا ہم نے ننکانہ صاحب میں ایک بھی سکھ نہیں رہنے دینا، ہم نے غازی علم دین، عامرچیمہ اور ممتاز قادری کو دفنایا ہے لیکن ابھی تک غازی ممتاز قادری کی رائفل نہیں دفنائی، اسلام کل بھی زندہ تھا اور آج بھی زندہ ہے، ہم نے تمہاری اینٹ سے اینٹ بجادینی ہے، ہم ننکانہ صاحب کا نام بدل کر غلامانِ مصطفیٰ ﷺ شہر رکھیں گے۔

انڈیا ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق گردوارہ جنم استھان پر حملہ اس مسلمان نوجوان کے اہلخانہ نے کیا ہے جس نے کچھ عرصہ پہلے ایک سکھ لڑکی کو مسلمان کرکے اس کے ساتھ پسند کی شادی کی تھی۔گردوارہ جنم استھان پر حالات ابھی تک کشیدہ ہیں ، مظاہرین نے گردوارے پر پتھر بھی پھینکے ہیں تاہم پولیس نے انہیں ایک خاص حد پر روکا ہوا ہے۔

خیال رہے کہ اگست ستمبر 2019 میں ننکانہ صاحب میں مسلمان لڑکے محمد حسان اور سکھ لڑکی جگجیت کور (اسلامی نام عائشہ ) نے پسند کی شادی کی تھی۔ لڑکی کے اہلخانہ نے الزام عائد کیا تھا کہ لڑکی کو اغوا کرکے زبردستی مسلمان کیا گیا ہے ، اس حوالے سے دنیا بھر میں سکھ کمیونٹی نے تشویش کا اظہار کیا تھا ۔ بعد ازاں گورنر پنجاب چوہدری سرور نے دونوں خاندانوں میں صلح کرادی تھی۔

مزید : Breaking News /علاقائی /پنجاب /ننکانہ صاحب


loading...