گناہوں کے شہر کو شدید خشک سالی کا سامنا

گناہوں کے شہر کو شدید خشک سالی کا سامنا

  

لاس ویگاس (نیوز ڈیسک) فحاشی، شراب نوشی اور جوئے بازی کا عالمی مرکز ہونے کی وجہ سے ”گناہوں کا شہر“ کہلانے والے امریکی شہر لاس ویگاس کے بارے میں پیشن گوئی کی گئی ہے کہ خشک سالی کی وجہ سے یہاں آنے والے کچھ سالوں میں پانی کا قال پڑ جائے گا۔ ماہر ماحولیات ٹم بارنیٹ کا کہنا ہے کہ 14 سالہ خشک سالی کے بعد بالآخر لاس ویگاس کا شہر پانی سے محروم ہوجائے گا۔ اس شہر کی پانی کی سپلائی کا انحصار کلی گور پر ہوورڈیم کی جھیل پر ہے جس میں پانی کی سطح آدھے سے بھی کم رہ گئی ہے۔ 1936ءمیں ڈیم کی تعیر کے بعد اس شہر کی آبادی 4 لاکھ سے بڑھ کر 20 لاکھ ہوچکی ہے اور جھیل سے 4 کھرب گیلن پانی نکالا جاچکا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر پانی اسی شرح سے ہی استعمال ہوتا رہا تو 2036ﺅ¿ تک جھیل خالی ہوجائے گی۔ دوسری جانب شہر کے باسی اس خطرے سے بے خبر اپنے گناہوں کی رنگینیوں میں مدہوش ہیں۔

مزید :

علاقائی -