امریکہ میں ہونہار طالبہ نے سکول میں پہلی پوزیشن حاصل کرلی لیکن انتظامیہ نے بیچاری کو ایسے شرمناک سلوک کا نشانہ بنا ڈالا کہ جان کر آپ بھی افسردہ ہو جائیں گے

امریکہ میں ہونہار طالبہ نے سکول میں پہلی پوزیشن حاصل کرلی لیکن انتظامیہ نے ...
امریکہ میں ہونہار طالبہ نے سکول میں پہلی پوزیشن حاصل کرلی لیکن انتظامیہ نے بیچاری کو ایسے شرمناک سلوک کا نشانہ بنا ڈالا کہ جان کر آپ بھی افسردہ ہو جائیں گے

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ انسانی حقوق کا نام نہاد علمبردار اور مساوات کا بڑا دعویدار تو بنتا ہے لیکن وہاں اب بھی نسلی امتیاز کس قدر پایا جاتا ہے، اس کا اندازہ ریاست میسسپی کے شہرکلیولینڈ کے ایک سکول میں پیش آنے والے اس واقعے سے لگایا جا سکتا ہے۔

میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق رواں برس کلیولینڈ ہائی سکول کی 110سالہ تاریخ میں پہلی بار سیاہ فام طالبہ جیسمین شیپرڈ نے سب سے زیادہ نمبر لیے۔ روایت کے مطابق جیسمین کو تقسیم اسناد کی تقریب سے خطاب کرنے اور تمام طلبہ سے آگے چلنے کا اعزاز دیا جانا تھا لیکن سکول کی انتظامیہ نے اسے یہ اعزاز ایک گوری طالبہ کے ساتھ شیئر کرنے پر مجبور کر دیا۔

رپورٹ کے مطابق جیسمین کی والدہ شیری شیپرڈ نے سکول کی انتظامیہ کے خلاف مقدمہ درج کروا دیا ہے جس میں اس نے موقف اختیار کیا ہے کہ ’’جیسمین کا جی پی اے اس سفید فام طالبہ سے کہیں زیادہ تھا لیکن جیسمین کو اس طالبہ کے پیچھے چلنے اور اس کے بعد خطاب کرنے پر مجبور کیا گیا۔ میری بیٹی نے سکول کی تاریخ میں یہ ریکارڈ قائم کیا تھا۔ سکول انتظامیہ نسلی امتیاز برتتے ہوئے اس کے ساتھ توہین آمیز سلوک کیا۔‘‘ رپورٹ کے مطابق سکول انتظامیہ کی طرف سے اس مقدمے کو غیرسنجیدہ قرار دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ دونوں طالبات کے گریڈز برابر تھے اس لیے انہیں اعزاز شیئر کرنے کو کہا گیا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس