بھارت نے فلمی صنعت کے مفاد پرستوں کوکامیابی سے استعمال کیا

بھارت نے فلمی صنعت کے مفاد پرستوں کوکامیابی سے استعمال کیا

لاہور(حسن عباس زیدی)پاک بھارت کشیدگی میں روز بروز اضافہ ہوتا جا رہا ہے بھارت نے ہمارے ڈراموں اور کامیڈینز کے پروگرام اپنے چینلز پر بند کردیئے ہیں ایسی صورتحال میں شوبز حلقوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ سنیما گھروں میں بھارتی فلموں کی نمائش پر مکمل پابندی لگائی جائے جذبہ حب الوطنی کے تحت متعدد سنیماؤں بھارتی فلموں کی نمائش روک دی ہے جبکہ دوچار سنیما ؤں میں اب بھی بھارتی فلموں کی نمائش جاری ہے اس بات کی جتنی مذمت کی جائے وہ کم ہے ہمیں بھارت کو بتانا چاہیے کہ ہم اپنے پیارے وطن کی حرمت پر جان قربان کرنے کا جذبہ رکھتے ہیں اور سبز ہلالی پرچم کے سائے تلے پوری قوم ایک تھی اور تا قیامت ایک ہی رہے گی۔لاہور جو کسی زمانے میں فلم انڈسٹری کا گڑھ اور مرکز ہوا کرتا تھا اپنے مرکز سے دور چلا گیا ہے۔ جبکہ کراچی میں فلموں کے حوالے سے جو شور مچایا جارہا ہے اور کہا جارہا ہے کہ فلم انڈسٹری کی ترقی وبحالی کا دور شروع ہوچکا ہے۔ یہ سراسر غلط ہے۔ صورتحال یہ ہے کہ کراچی میں ٹی وی اور اشتہاری صنعت سے وابستہ افراد جدید ٹیکنالوجی کی آڑ لیکر جو فلمیں بنارہے ہیں۔ ان فلموں کی اکثریت کمرشل حوالے سے ناکام جارہی ہے ان فلموں کے سپکرٹس بھی زیادہ تر بے مقصد اور عارضی تفریح فراہم کررہے ہیں۔ ہماری فلم انڈسٹری کی جتنی عمر ہے اسے بھارت نہیں تو کم ازکم ایران، ترکی، بنگلہ دیش، سری لنکا کے برابر ہی ہونا چاہئے تھا مگر افسوس ہم نے فلمی مارکیٹ جو پہلے ہی محدود تھی وہ بھی تیزی سے بھارت کے حوالے کردی۔ بھارت نے ہمارے ملک میں موجود غداروں اور مفاد پرستوں کو جس کامیابی سے استعمال کیااس کی مثال نہیں ملتی۔ بھارت، ترکی، ایران، بنگلہ دیش سمیت تمام دیگر ممالک فلمسازی کرتے ہوئے اپنی ثقافت اور حب الوطنی کے جذبات کو فروغ دیتے ہوئے کام کرتے ہیں۔

مزید : کلچر