کسی بھی قانون کی خلاف ورزی نہیں کی گئی: قمر زمان کائرہ

کسی بھی قانون کی خلاف ورزی نہیں کی گئی: قمر زمان کائرہ

اسلام آباد(آن لائن)پاکستان پیپلز پارٹی کے وسطی پنجاب کے صدر قمر زمان کائرہ نے کہا کہ ریمنڈ ڈیوس واقعے کے وقت خطے کے حالات انتہائی کشید ہ تھے جس کی وجہ سے پاکستان پر امریکی دباؤ بہت زیادہ تھا ، اس لئے امریکا نے وفاقی، پنجاب حکومت اور پاک فوج پر اثر و رسوخ استعمال کیا، ریمنڈ ڈیوس نے سیلف ڈیفنس میں دو نوجوانوں کو قتل کیا جس کے باعث اگر اس کیس کی ٹرائل کی جاتی تو پاکستانی قانون کا فائدہ اٹھا کر وہ باعزتی بری ہوجاتا۔نجی ٹی وی گفتگو کرتے ہوئے پاکستان پیپلز پارٹی وسطی پنجاب کے صدر قمر زمان کا کہنا تھا کہ ریمنڈ ڈیوس کو رہا کرنے میں پاکستان کے کسی بھی قانون کی خلاف ورزی نہیں کی گئی تھی، ریمنڈ ڈیوس کے ہاتھوں قتل ہونے والے نوجوانوں کے ورثا دیت پر رضامند نہیں تھے، ورثا ، قوم اور مذہبی جماعتوں کے جذبات اپنی جگہ لیکن اگر اس کیس کو پاکستان کے عدالتوں میں شروع کیا جاتا تو ٹرائل کے دوران ریمنڈ ڈیوس کی رہائی کے امکانات بڑھ جاتے ،امریکی شہری کی رہائی میں پاکستانی ایجنسیاں ، حکومتیں اور تمام ادارے ملوث تھے۔ دیت کا فیصلہ اہتمام حجت کے طور پر کیا گیا لیکن اس کے باوجود قانون کی خلاف ورزی نہیں کی گئی، ریمنڈ ڈیوس کو اگر خصوصی ہیلی کاپٹر کے ذریعے اور قانون کی خلاف ورزی کر کے بھیجا گیا تو اس پر ضرور کمیشن بنایا جائے۔دیت کی رقم کے سوال پر قمرزمان کائرہ کا کہنا تھا کہ مجھے اندازہ نہیں ہے کہ پیسے کس نے دئیے، آئی ایس آئی، وزارت خزانہ اور تمام ادارے وفاق کے انڈر ہیں، کان ادھر سے پکڑیں یا ادھر سے پکڑیں ظاہر سی بات ہے وہ پیسے وفاقی حکومت ہی نہیں دئیے۔

مزید : علاقائی