فاٹا اصلاحات میں مزید تاخیر ناقابل برداشت ،اسلام آباد مرتے دم تک دھرنا یا مرنا ہو گا:فرہاد علی

فاٹا اصلاحات میں مزید تاخیر ناقابل برداشت ،اسلام آباد مرتے دم تک دھرنا یا ...

جمرود (نمائندہ خصوصی) آل فاٹا سٹوڈنٹس فورم کے چیئرمین فرہاد علی نے باجوڑ پریس کلب میں ایک ہنگامی پریس کانفرنس کیدوران کیا اُنہوں نے کہا کہ فاٹا میں شدید بد امنی افراتفری کے اصل وجوہات ایف سی آر کے ظالمانہ غیر انسانی و غیر آئینی قوانین ہیں موجودہ حکومت کے روئیے سے یہ بات واضح ہو چکی ہے کہ 2018 کے الیکشن میں فاٹا کے بلدیاتی انتخابات ناممکن ہیں فاٹا کے سفارشات کیلئے بنائی گئی اصلاحاتی کمیٹی کے مطابق اسی فیصد قبائل ایف سی آر کے ظا لمانہ قوانین کے خلاف ہیں لیکن موجودہ حکومت نے اس پر فوری کام رُکوا کر قبائل کیساتھ سنگین مزاق کی مثال قائم کی ہے این ایف سی ایوارڈ میں قبائل کو محروم رکھنا اور رواج ایکٹ کا ڈھنڈورا پیٹنے والوں سے قبائل مایوس ہو چکے ہیں رواج ایکٹ ہمیں قطعی طور پر نامنظور اور فاٹا کو ایک دفعہ پھر اندھیروں میں دھکیلنے کے مترادف ہیں فاٹا کے طلباء اس ٹوپی ڈرامے کے خلاف 5 جولائی کو باجوڑ ،7 جولائی کو کرم ،10 جولائی کو مہمند ایجنسی 12 جولائی کو مہمند ایجنسی اور مطالبات کی منظوری تک اسلام آباد میں مرتے دم تک دھرنا ہوگا پریس کانفرنس سے فاٹا سٹوڈنٹس ارگنائزیشن اور دیگر طلباء تنظیموں کے عہدیداروں نثار باز ،خائستہ الرحمان آتش، مجیب الرحمان ،مسعدو جان ،سعید اللہ ،زیب اللہ ،و دیگر نے کہا کہ حکمران ہوش کے ناخن لیں قبائل میں اُس وقت تک امن قائم نہیں ہو سکتا جب تک فا ٹامیں ایف سی آر کا مکمل خاتمہ نہ ہو یہاں دور جدید میں تھری فور جی اور موٹر سائیکل چلانے پر پابندی کے ذریعے نوجوان نسل اور پوری دنیا کو کیا پیغام دینا مقصود ہے ہم محب وطن پاکستانی اور پر امن قبائل ہیں ہمیں تعلیم کے حصول کیلئے جدید یو نیورسٹیاں،کالجز اور دیگر تعلیمی سہولیات فراہم کی جائے این ایف سی ایوارڈ میں چھ فیصد حصہ دیکر تباہ حال ا نفرا سٹرکچر کی دوبارہ بحالی کیلئے ہنگامی اقدامات کرکے قبائل کے احساس محرومی کا خاتمہ کیا جائے اُنہوں نے فاٹا اصلاحات کے حوالے سے آرمی چیف کے بیان کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ آرمی چیف اور مقتدر قوتیں فاٹا اصلاحات کے معاملے میں مداخلت کرکے فاٹا میں 1973 کا آئین لاگوں کرنے کیلئے اقدامات کریں ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر