تحصیل ناظم اور ضلعی ناظم کے مابین مصالحتی عمل تعطل کا شکار

تحصیل ناظم اور ضلعی ناظم کے مابین مصالحتی عمل تعطل کا شکار

کرک (بیورورپورٹ )تحصیل ناظم اور ضلعی ناظم کے مابین مصالحتی عمل تعطل کا شکار ، جرگہ مشران کی پہلی نشست بے نتیجہ ختم ہو گئی ، تحصیل ناظم نے جرگہ سے قبل ضلع ناظم ، انکے والد اور دیگر حامیوں کے خلاف مقدمہ درج کرنے کی شرط عائد کر دی ۔تفصیلات کے مطابق تحصیل ناظم ، ضلع ناظم اور ان کے حامیوں میں ہونے والے تنازعہ کو جرگہ کے ذریعے حل کرانے کیلئے مشران پر مشتمل پانچ رکنی کمیٹی تشکیل دیدی گئی تھی جس کی پہلی نشست سرکٹ ہاؤس کرک میں ہفتے کے روز صبح نو بجے ہوئی تھی تاہم ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ تحصیل ناظم کرک حاجی عبد الوہاب نے شرط عائد کی ہے کہ پہلے ضلع ناظم ، ان کے والد اور دیگر حامیوں کے خلاف مقدمہ میرے دفتر پر حملے ، مجھے اور میرے ساتھیوں کو مارنے کا مقدمہ درج ہو گا اس کے بعد میں جرگہ کرونگا جرگہ کیلئے نامزد پانچ مشران نے معاملے کو اس حوالے سے پہلے نامزد اٹھ رکنی کمیٹی کے سپرد کر د یا ہے جو فریقین کے مابین معاملا ت سلجھانے کے بعد دوبارہ جرگہ کمیٹی کے مشران کو طلب کر یگی۔واضح رہے دوسری جانب تحصیل ناظم حاجی عبد الوہاب نے تنازعے کے روز دعوی کیا تھا کہ تنازعے کا باعث بننے والے ٹینڈر ز اوپن ہونے کے ساتھ ساتھ دیگر پراسز بھی مکمل کیا جار ہا ہے اور بعض ٹھیکیدار جلد ورک آرڈر ملنے کیلئے بھی پر امید ہیں جبکہ دفتر ی ذرائع ٹینڈر اوپن نہ ہونے کی تصدیق کر رہے ہیں

مزید : پشاورصفحہ آخر