میپکو ریجن، بارش سے جلے، غیر معیاری 2لاکھ سے زائد میٹر خراب

میپکو ریجن، بارش سے جلے، غیر معیاری 2لاکھ سے زائد میٹر خراب

ملتان (اعجاز مرتضیٰ سے) ملتان سمیت میپکو ریجن میں بارش سے جلنے والے اور غیر معیاری 2لاکھ سے زائد میٹر خراب ہو گئے۔ میٹر تبدیل کرنے کی بجائے مسلسل ایوریج بل بھجوائے جانے لگے ۔صارفین ناجائز بلوں سے عاجز آگئے ۔ صارفین کی شکایات کے حوالے سے مظفر گڑھ سرکل ’’ بازی لے گیا(بقیہ نمبر25صفحہ12پر )

‘‘ تفصیل کے مطابق ملتان سمیت میپکو ریجن میں 2لاکھ سے زائد گھریلوصارفین کے بجلی کے میٹر خراب ہیں ۔ ان میں بیشتر میٹر بارشوں کے باعث جل چکے ہیں جبکہ دیگر میٹر مختلف وجوہات کی بنا پر ڈیڈ ہو چکے ہیں ۔میپکو کے افسران ان میٹرز کو تبدیل کرنے کی بجائے صارفین کو مسلسل ایوریج بل بھجوا رہے ہیں۔ صارفین میپکو کے دفاتر کے چکر پر چکر لگا کر ہلکان ہو چکے ہیں مگر ان کی شنوائی نہیں ہو رہی ۔ اس صورتحال میں میپکو کے اہلکارو ں کی چاندی ہو چکی ہے جو رشوت کے تناسب سے بل کی ایوریج رقم طے کرتے ہیں ۔ رشوت دینے والے صارفین کو کم ایوریج چارج کی جاتی ہے جبکہ رشوت نہ دینے والے صارفین کو بھاری جرمانوں کے ساتھ بل بھجوائے جا رہے ہیں ۔میپکو ریجن میں مظفر گڑھ سرکل میں اس سلسلے میں شکایات زیادہ ہیں جہاں میپکو افسر اور اہلکار صارفین کو دونوں ہاتھوں سے لوٹ رہے ہیں اور ان کا جینا دوبھر کر رکھا ہے ۔ متاثرہ صارفین جب سب ڈویژن دفاتر سے رجوع کرتے ہیں توان سے رشوت طلب کی جاتی ہے ۔ رشوت دینے والوں کا بل درستگی کا لیٹر جاری کرکے ایکسین آفس بھجوایا جاتا ہے جہاں ایکسین کے ٹیکنیکل اسسٹنٹ کی بھی جیب گرم کرنا پڑتی ہے ۔اس کے بعد ایکسین کے دستخط کے بعد ریونیوآفیسر کی طرف سے نیا ترمیمی بل ایشو کیا جاتا ہے ۔ ریونیو آفس کا عملہ الگ ’’نذرانے ‘‘ کا تقاضا کرتا ہے۔ اس صورتحال میں صارفین کو سب ڈویژنل اور ڈویژنل آفس کے دھکے کھانے پڑتے ہیں۔ غریب صارفین دونوں طرف سے پھنسے ہوئے ہیں کیونکہ اگر وہ رشوت نہیں دینے اور دفاتر کے چکر نہیں لگاتے تو انہیں ہر ماہ ناجائز جرمانے کے ساتھ بل ادا کرنا پڑتا ہے ۔اگر وہ میپکو کے دفاتر کے چکر لگاتے ہیں تو ان کی دیہاڑیاں ٹوٹتی ہیں ۔بتایا گیا ہے کہ اگر صارفین منہ مانگی رشوت دے دیں تو میپکو عملہ خود ہی بل کی درستگی کے مراحل سر انجام دیتا ہے ۔ اس سلسلے میں مختلف دفاتر کے اہلکار ایک دوسرے سے ’’رابطے ‘‘میں ہوتے ہیں اور ’’کمائی ‘‘ کے معاملے میں ایک دوسرے کے ساتھ بھر پور تعاون کرتے ہیں ۔ میٹر خراب ہونے کے باعث ناجائز ایوریج سے متاثرہ صارفین میں زیادہ تعداد غریبوں کی ہے جو چند ہزار روپے کے بلوں کی درستگی کے لئے میپکو دفاتر کے دھکے کھانے پر مجبور ہو چکے ہیں ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر