پٹولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اجاضہ مسترد ، تاجروں ، صنعتکاروں ، شہری تنظیموں کا احتجاج

پٹولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اجاضہ مسترد ، تاجروں ، صنعتکاروں ، شہری تنظیموں ...

لاہور (کامرس رپورٹر) پٹرولیم مصنوعات کے نرخوں میں اضافے کے خلاف ملک گیر مظاہرے شروع ہو گئے ہیں مختلف تاجر تنظیموں ، سیاسی جماعتوں ،ٹرانسپورٹ تنظیموں اور سول سو سائٹی کے سر کردہ افراد نے قیمتیں بڑھانے کے خلاف مختلف مقامات پر احتجاج اور مظاہرے کیے سڑکیں بلاک کر کے اس اضافے کے خلاف نعرے بازی کی گئی اور پٹرولیم مصنوعا ت میں ہو شر با اضافے کو ظالمانہ اقدام قرار دیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق نگران حکومت کی جانب سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں دو بار ریکارڈ اضافہ کو ہر طبقہ نے ظالم اقدام قرار دیا ہے اور واضح کیا ہے کہ نگران حکومت عوام پر پٹرول بم گرا کر جمہوری حکومت کو بھی پیچھے چھوڑ رہی ہے ۔ گزشتہ روز پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف قومی تاجر اتحاد صدر اظہر گلشن ، اعظم کلاتھ مارکیٹ کے صدر حافظ عابد علی ، انجمن تاجران پاکستان کے صدر خالد پرویز ، جوائنٹ سیکرٹری آل پاکستان انجمن تاجران میاں سلیم ، پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ ایسو سی ایشن کے جنرل سیکرٹری نبیل محمود طارق ، سیکرٹری اطلاعات مرزا ارشد اقبال بیگ ، متحدہ مجلس عمل کی جانب سے لیاقت بلوچ ، احمد سلمان اور سول سوسائٹی کے نمائندوں کی جانب سے مارکیٹوں و بازاروں ،وحدت روڈ، مسلم ٹاؤ ن موڑ ، ملتان روڈاور پریس کلب سمیت جی ٹی روڈ پر احتجاجی مظاہرے کیے گئے ۔ مظاہرین نے نگران حکومت کے خلاف پلے کارڈ اٹھاتے ہوئے نعرہ بازی کی اور ٹریفک کو بلاک کرتے ہوئے ٹائر جلائے جس سے ٹریفک گھنٹوں تک جام رہی ۔علاوہ ازیں عوامی رکشہ یونین کے چیئرمین نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ظالمانہ اضافے کے خلاف نکالی گئی احتجاجی ریلی کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہمارے بچے بھوکے مریں گے تو ہم حکمرانوں اور ان کے بچوں کو بددعائیں دیں گے۔ چیف جسٹس فور ی طور پر نوٹس لے کر پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے واپس کروائیں۔اگر اضافہ واپس نہ لیا گیا تو 5 جولائی کو ٹھوکر نیاز بیگ چوک سے مال روڈ تک احتجاجی ریلا نکالا جائے گا جس میں ہزاروں رکشہ ڈرائیور،عوامی پاسبان کے سینکڑوں کارکن،سول سوسائٹی کے نمائندے ، بچے بوڑھے نوجوان، مزدور، وکلاء اور تاجر وں کی بڑی تعداد شرکت کرے گی۔مجید غوری کا کہناتھا کہ ہمارا خیال تھا نگران حکومت میں انتہائی تعلیم یافتہ لوگوں کو شامل کیا گیا ہے جو ہر طرح کے حالات سے واقف ہیں اور غریبوں کو ریلیف دیں گے۔لیکن اب ان کی نا لائیکی سامنے آنا شروع ہو گئی ہے ۔بیورو کریسی کے شاطر کھلاڑیوں نے ان کو انگلیوں پر نچانا شروع کر دیا ہے اور یہ کٹ پتلیوں کی طرح ان کے اشاروں پر ناچ رہے ہیں۔چار دن کیلئے آئے حکمران طاقت کے نشے ٹن ہو کر بھرپور پروٹوکول لے رہے ہیں۔چیف جسٹس آف پاکستان ثاقب نثار کو اللہ پاک ثابت قدم اور اپنے حفظ و امان میں رکھے۔ ون مین آرمی کی طرح دن رات محنت کر رہے ہیں غریبوں کے ہر مسلے پر ان کے ساتھ کھڑے ہیں ہمارا ان سے مطالبہ ہے کہ پٹرلیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ فوری واپس کروائیں،ملک سے لوٹی ہوئی دولت فوری واپس کروائیں۔کیونکہ کرپشن مافیہ ان کے ڈر سے روپوش ہے اور ان کے ریٹائرڈ ہونے کا انتطار کر رہا ہے ان کے بعد کون آئے گا اس کے رویہ کیسا ہوگا یہ تو اللہ ہی جانتاہے لیکن موجودہ چیف جسٹس قوم کیلئے مسیحا ہے اور ہمیں امید ہے کہ چیف جسٹس مہنگائی کا نوٹس لے کر عوام کو ریلیف دلائیں گے۔دریں اثناملک بھر کے چیمبرز ، تاجروصنعتکار تنظیموں نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے کو مسترد کردیا ہے اور کہا ہے کہ یہ اضافہ عوام، صنعت اور تجارت کو بلیک میل کرنے کے مترادف ہے۔ اوگرا کو علم ہے کہ صنعت و تجارت اور عوام کی تمام سرگرمیاں پٹرولیم مصنوعات سے براہِ راست وابستہ ہیں اس لیے وہ اس صورتحال سے فائدہ اٹھاتے ہوئے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ کیے جارہا ہے۔ لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر ملک طاہر جاوید اور نائب صدر ذیشان خلیل نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے پر انتہائی سخت تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ نگران حکومت کو اوگرا کے غلط فیصلے پر عمل نہیں کرنا چاہیے تھا، اس سے صنعت ، تجارت اور معیشت کے لیے سنگین مسائل پیدا ہونگے، یہ اضافہ فوری طور پر واپس لیا جائے۔ اسلام آباد چیمبر کے صدر شیخ عامر وحید نے کہا کہ نگراں حکومت نے اپنے دور میں دوسری مرتبہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ہے جو افسوسناک ہے کیونکہ اس سے عوام کیلئے مہنگائی میں کئی گنا اضافہ ہو گا اور کاروباری سرگرمیوں پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں پہلے ہی کاروبار کی لاگت خطے میں زیادہ ہے جس سے ہماری برآمدات کو عالمی مارکیٹ میں سخت مقابلے کا سامنا ہے ، برآمدات میں کمی ہو گی اور مہنگائی بڑھنے سے عوام کی زندگی مزید اجیرن ہو جائے گی لہذا انہوں نے نگراں حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنے فیصلے پر نظرثانی کرے اور معیشت و عوام کو مزید مشکلات سے بچانے کیلئے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ واپس لے۔آل پاکستان انجمن تاجران نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے کو مسترد کرتے ہوئے کہاہے کہ اس اقدام سے مہنگائی کا نہ رکنے والا طوفان آئے گا ،تجارتی مراکز میں کاروبار میں پہلے ہی مندے کا رجحان ہے اور پیٹرولیم کی قیمتیں کئی گنا بڑھنے سے مزید منفی اثرات مرتب ہوں گے۔ اگر نگران حکومت عوام کو ریلیف فراہم نہیں کر سکتی تو اسے مزید بوجھ بھی نہیں ڈالنا چاہیے ۔ آل کراچی تاجر اتحاد کے چیئرمین عتیق میر نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے کو تشویشناک قرار دیتے ہوئے حکومتی فیصلے کی شدید مذمت کی ہے، انھوں نے کہا ہے کہ پیٹرول اور ڈالر مہنگائی کی چکی کے دو پاٹ بن گئے ہیں جن کے درمیان عوام پس کر رہ گئے ہیں،تیل اور ڈالر کی قدر و قیمت میں مسلسل اضافے سے مہنگائی کا ہولناک طوفان امنڈ آئے گا ، بیروزگاری اور مہنگائی کے ہاتھوں پریشان غریب اور متوسّط طبقہ کی کمر ٹوٹ جائیگی، ، انھوں نے چیف جسٹس آف پاکستان سے اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ پیٹرولیم مصنوعات پر عائد کیا گیا غیرمنصفانہ ٹیکس منصفانہ سطح پر لایا جائے۔چیئرمین لاہور ٹاؤن شپ انڈسٹریز ایسوسی ایشن ڈاکٹر شفیق اے نقی نے گیس اور بجلی کی قیمتوں میں اضافہ کے بعد پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 7.68 روپے سے14روپے فی لیٹر مجموعی اضافہ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے انڈسٹری پر بوجھ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ کے بعد صنعتی شعبہ کے ٹرانسپورٹیشن اخراجات بڑھیں گے جس کا لازمی اثر اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ کی صورت میں نکلے گا جس سے مہنگائی میں ہوشربا اضافہ ہوگا ۔

پٹرولیم مصنوعات

لاہور(اسد اقبال)پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے ساتھ ہی گڈز ٹرانسپورٹرز نے 10فیصد جبکہ پبلک ٹرانسپورٹرز نے13فیصد تک کرایوں میں اضافہ کر دیا ہے جس پر عملدرآمد آج سے ہوگا اور اس کے لیے نو ٹیفیکیشن جاری کر دیے گئے ہیں ۔ واضح رہے کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں گزشتہ دو ماہ کے دوران ہونے والے اضافے کے پیش نظر گڈز ٹرانسپورٹروں نے مجموعی طورپر 30فیصد جبکہ انٹر سٹی ٹرانسپورٹ کے کرایوں میں 21فیصد اضافہ کیا ہے جس سے نہ صرف شہریوں کے لیے سفر کرنا عذاب ہو گیا ہے بلکہ اشیائے خوردونوش اور اشیائے ضروریہ کی قیمتوں کو بھی پر لگ گئے ہیں۔ٹرانسپورٹروں نے چیف جسٹس آف پاکستان سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں بلا جواز کیے جانے والے حالیہ اضافے پر از خود نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے اور اعلان کیا ہے کہ اگر پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ہونے والا اضافہ واپس لے لیا جائے تو ٹرانسپورٹرز بھی اپنے کرایوں میں از خود فی الفور کمی کر دیں گے ۔پاکستان سے گفتگوکرتے ہوئے پاکستان گڈز ٹرانسپور ٹ ایسوسی ایشن کے جنرل سیکرٹری نبیل محمود طارق اور آل پاکستان بس اونرز فیڈریشن کے صدر اعظم خان نیازی نے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ہوشر با اضافہ نگران حکومت کا ظالمانہ اقدام ہے جس سے مہنگائی کا بول بالا ہو گا اور غریب غربت کی لکیر سے نیچے چلا جائے گا کیو نکہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھنے کے ساتھ ہی ہر چیز کی قیمت بڑھ جاتی ہے جس کا خمیازہ عوام کو بھگتنا پڑتا ہے حکومت کو ایسا میکنزم بنانے کی ضرورت ہے جس سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں مستحکم رہ سکیں ۔

کرائے

مزید : صفحہ اول