” میرا پروفیسر مسلسل 3 سال سے مجھے ۔۔۔ “ میڈیکل کی طالبہ پاکستانی لڑکی نے اپنے استاد کے بارے میں ایسا شرمناک انکشاف کردیا کہ سوشل میڈیا پر آگ لگ گئی

” میرا پروفیسر مسلسل 3 سال سے مجھے ۔۔۔ “ میڈیکل کی طالبہ پاکستانی لڑکی نے ...
” میرا پروفیسر مسلسل 3 سال سے مجھے ۔۔۔ “ میڈیکل کی طالبہ پاکستانی لڑکی نے اپنے استاد کے بارے میں ایسا شرمناک انکشاف کردیا کہ سوشل میڈیا پر آگ لگ گئی

  

فیصل آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) دنیا بھر کی خواتین کو ہراسانی کے مسائل کا سامنا رہتا ہے لیکن اگر یہ کام استاد جیسے مقدس رشتے کی جانب سے کیا جائے تو اس کی سنگینی اور بھی بڑھ جاتی ہے۔ ایسا ہی کچھ پنجاب میڈیکل کالج فیصل آباد کی طالبہ مہوش امین کے ساتھ بھی ہوا ہے جس نے الزام عائد کیا ہے کہ اس کا اپنا استاد اسے گزشتہ 3 سال سے ہراساں کر رہا ہے۔

مہوش امین نے فیس بک پوسٹ میں الزام عائد کیا کہ اس کا استاد جو کہ فرانزک میڈیسن کا اسسٹنٹ پروفیسر ہے اسے مسلسل 3 سال سے ہراساں کر رہا ہے۔ طالبہ نے کہاکہ پروفیسر خرم راجا نے طب جیسے مقدس شعبے کے تقدس کو پامال کیا ہے اور ایسا کام کیا ہے جس کی وجہ سے ڈاکٹر کمیونٹی کو شرمندگی اٹھانا پڑی ہے۔ ’ میرے پاس تمام ثبوت موجود ہیں، میری وی سی پروفیسر ڈاکٹر سید محمد علی ترمذی، ایم ایس الائیڈ ہسپتال فیصل آباد ڈاکٹر خرم الطاف اور ڈسپلنری کمیٹی سے درخواست ہے کہ اس بات کا نوٹس لیا جائے‘۔

مہوش امین نے ایک اور پوسٹ میں ان تمام میڈیکل سٹوڈنٹس اور ڈاکٹرز جو ڈاکٹر خرم راجا کے ہاتھوں ہراسانی کا شکار ہوئیں سے  اپیل کی کہ وہ بھی سامنے آئیں اور مذکورہ شخص کے خلاف معلومات فراہم کریں تاکہ اس کے خلاف بھرپور ایکشن لیا جاسکے۔

طالبہ کی جانب سے ایک اور پوسٹ میں بتایا گیا کہ جب سے اس نے ڈاکٹر راجا خرم کے خلاف آواز اٹھائی ہے تب سے اسے دھمکیوں کے ذریعے خاموش کرانے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔

مہوش امین کے الزامات پر پنجاب میڈیکل کالج کے پروفیسرز اور الائیڈ ہسپتال فیصل آباد کے ڈاکٹرز کی جانب سے بھی شاعرانہ اندازمیں اظہار یکجہتی کیا گیا ۔ متعدد پروفیسرز نے مختلف نظموں کے ذریعے ہراسانی کا شکار ہونے والی خواتین کا درد بیان کرنے کی کوشش کی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /جرم و انصاف /علاقائی /پنجاب /فیصل آباد