حکومت سے ٹی وی پر تقریر کروانی ہو تو کروا لیں، کام نہیں،اسلام آبادہائیکورٹ کے ملازمت اپ گریڈیشن کیس میں ریمارکس

حکومت سے ٹی وی پر تقریر کروانی ہو تو کروا لیں، کام نہیں،اسلام آبادہائیکورٹ ...
حکومت سے ٹی وی پر تقریر کروانی ہو تو کروا لیں، کام نہیں،اسلام آبادہائیکورٹ کے ملازمت اپ گریڈیشن کیس میں ریمارکس

  


اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)اسلام آبادہائیکورٹ میں ملازمت اپ گریڈیشن کیس میں جسٹس محسن اخترکیانی نے ریمارکس دیئے ہیں کہ حکومت سے ٹی وی پر تقریر کروانی ہو تو کروا لیں، کام نہیں،کوئی بیوروکریٹ ڈرکی وجہ سے ٹھیک کام بھی کرنے کیلئے تیارنہیں،پچھلے 5 سال والے پبلک سرونٹ اب کیس بھگت رہے ہیں۔تفصیلات کے مطابق اسلام آبادہائیکورٹ میں ملازمت اپ گریڈیشن کیس کی سماعت ہوئی ،جسٹس محسن اخترکیانی نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ صحیح کام میں بھی غلطی ہوجاتی ہے، کوئی پبلک سرونٹ غلطی کرنا نہیں چاہتا،ہم نے ایڈمنسٹریٹو آرڈرزبھی نیب کے دائرہ کارمیں دے دیے، اگرکوئی بیوروکریٹ100 آرڈرکرتے ہوں گے تو کچھ غلط بھی ہوسکتا ہے، جسٹس محسن اختر کیانی نے کہا کہ ایڈمنسٹریٹو کام مختلف اورنیب کرپشن مختلف،لیکن ہم نے دونوں ملا دیے،نائب قاصد کاکیس بھی نیب کے پاس،ڈی جی کا کیس بھی نیب کے پاس ہے۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد