آئین سے بغاوت برداشت نہیں کی جائے گی، حلیم عادل شیخ

  آئین سے بغاوت برداشت نہیں کی جائے گی، حلیم عادل شیخ

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر) پاکستان تحریک انصاف کے رہنماء و پارلیمانی لیڈر حلیم عادل شیخ نے کہا ہے کہ کسی بھی ملک میں سیاسی جماعتیں ہوتی ہی سیاست کرنے کے لیئے ہیں اور سیاست کی اجازت بھی ہے لیکن آئین سے بغاوت کی اجازت نہیں دی جاسکتی، وہ آئین جس میں میٹھا میٹھا ہپ ہپ اور کڑوا کڑوا تھو تھو نہیں ہونا چاہیے، سندھ میں 297ارب کی کرپشن ہوئی جبکہ 270ارب روپے کی بے ضابطگیاں ہوئیں سندھ میں آڈیٹر جنرل کی رپورٹ نہیں دی جاتی جبکہ 2015میں تین ہزار دو سو ارب کی کرپشن ہوئی،2017اور 2018میں پندرہ ہزار ارب کی کرپشن ہوئی، تھر میں سندھ حکومت کی نا اہلی سے بچے مر گئے کرونا وائرس کی دوائیں چوری ہو گئی ہیں، سندھ کے غریب لوگوں کو گدھا گاڑی کی ایمبولینس ملتی ہے، وزیراعلیٰ سندھ فرماتے ہیں کہ صوبہ سندھ وفاق کے لیئے ٹیکس جمع نہیں کریگا تو اس پر میں آئین کی رو سے واضح کرنا چاہوں گا کہ اگر کسی صوبے کو ٹیکسز کے حوالے سے کوئی مسئلہ ہے تو وہ پارلیمنٹ میں جائیں اور اکثریت کے ذریعے اپنے مسئلے کو حل کریں، پاکستان کے 1973کے آئین کے آرٹیکل 5کے مطابق ہر شہری ملک کا وفادار اور قانون پر عمل کرنے کا پابند ہے اور ریاست کے تمام احکامات پر عمل درآمد کرنا اس کی ذمہ داری ہے، ان خیالات کا اظہارا نہوں نے تحریک انصاف کے سیکرٹریٹ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، حلیم عاد ل شیخ نے کہا کہ کرونا وائرس کے آنے کے بعد ٹیکس کلیکشن میں کمی آئی، صوبہ پنجاب کو 476ارب روپے، کے پی کے کو 56ارب روپے کم ملے انہوں نے حالات کو دیکھا اور معاملے کی نزاکت کوسمجھا لیکن جب سندھ کو 225ارب روپے کم ملے تو انہوں نے چیخنا چلانا شروع کردیا، سندھ حکومت گھٹیا باتیں اور حرکتیں کر رہی ہے کبھی ہسپتالوں پر قبضے کرنے کا الزام لگایا جاتا ہے کبھی زرداری صاحب کو مارنے کے منصوبے تیار کرنے کا الزام لگایا جا تاہے یہ تمام باتیں پیپلز پارٹی کی جانب سے من گھڑت ہیں اور فضول ہیں ہم ایسی گھٹیا حرکتیں نہ تو کرتے ہیں اور نہ ہی ایسی گھٹیا سوچ رکھتے ہیں،انہوں نے کہا کہ بلاول صاحب سے کہتاہوں کہ تھوڑی نظرکرم اس صوبے پر کریں جہاں عوام کی بدقسمتی سے آپ کی پارٹی کی حکومت ہے خاص طور پر لاڑکانہ پر نظر ڈالیں، صوبہ سندھ کے لوگوں کو پانی نہیں مل رہا ہے، چاروں صوبوں کی پارٹی چار ضلعوں تک محدود ہوگئی ہے وزیراعلیٰ سندھ کو میں غدار میں نہیں کہوں گا لیکن اتنا ضرور کہوں گا کہ جوش خطابت میں غیر مناسب الفاظ استعمال نہ کریں، انہوں نے کہا کہ ٹیکسز سے جمع ہونے والا پیسہ کسی کا نہیں ہے وہ ہمارے ملک کے ٹیکس دینے والوں کا پیسہ ہے جو صرف غریب عوام اور ملکی ترقی کے لیے خرچ ہوتا ہے انہوں نے کہا کہ آجکل ایک پائلٹس کا ایشوز بہت گردش کر رہا ہے کیا ہماری ایئر لائن حادثوں کے لیئے رہ گئی ہے، پائلٹس اور دیگر لوگ ہمارے بھرتی کیے ہوئے نہیں ہیں بلکہ یہ چاچا اور بھتیجے کی دور حکومت کے بھرتی کیے ہوئے ہیں

مزید :

صفحہ آخر -