سبلنگ فیس پر عملدر آمد نہ ہونے سے متعلق نجی اسکول کی انتظامیہ طلب

سبلنگ فیس پر عملدر آمد نہ ہونے سے متعلق نجی اسکول کی انتظامیہ طلب

  

پشاور(نیوز رپورٹر) عدالت عالیہ پشاور نے نجی سکولوں کی جانب سے سبلنگ فیس پرعملدرآمد نہ ہونے سے متعلق رٹ پر نجی سکول کی انتظامیہ کو طلب کرلیا جبکہ جسٹس روح الامین نے ریمارکس دیئے کہ اگر ایک سکول کے مختلف برانچز میں دوبھائی پڑرہے ہوں تو ایک کو فیس میں رعایت دی جائے گی جسٹس روح الامین اورجسٹس محمد عتیق شاہ پر مشتمل دورکنی بنچ نے درخواست گزارعالمزیب کی رٹ پر سماعت کی اس موقع پر پرائیویٹ سکولز ریگولیٹری اتھارٹی کے ایم ڈی تاشفین حیدر بھی عدالت میں پیش ہوئے درخواست گزار وکیل عاصم خان کے مطابق عدالتی احکامات کے باوجودنجی سکولوں میں دوبھائیوں میں ایک کو فیس میں 20فیصد رعایت نہیں دی جارہی ہے جبکہ پی ایس آر اے بھی ان کے خلاف کارروائی نہیں کررہی ہے اور 2018سے شکایات میں اضافہ ہورہا ہے پی ایس آر اے کے ایم ڈی نے عدالت کو بتایا کہ جس نجی سکول کے خلاف شکایت کی گئی اسے دوبار جرمانہ کیا گیا پہلی بار 10ہزارجبکہ دوسری بار20ہزار جرمانہ عائد کیاجاتاہے اورعملدرآمدنہ کرنے پر تیسرے مرحلے میں رجسٹریشن ختم کردی جاتی ہے تاہم کورونا وباء کی وجہ سے کارروائیاں متاثر ہوئیں انہوں نے بتایا کہ انہیں سکول سیل کرنے کا اختیار نہیں البتہ سکول رجسٹریشن کو ختم کرسکتے ہیں اس موقع پر جسٹس روح الامین نے ایم ڈی سے مخاطب ہوئے استفسار کیا کہ آپ کیوں کمزور پڑجاتے ہیں؟ احکامات پر عملدرآمد کیوں نہیں ہورہا جس پر ایم ڈی نے بتایا کہ ان کے پاس زیادہ اختیارات نہیں ہیں جسٹس روح الامین نے ریمارکس دیئے کہ اگر ایک ہی سکول سسٹم کے دوالگ الگ برانچز مختلف مقامات پر واقع ہوں اوران میں بھائی پڑھ رہے ہیں تو ایک کوفیس میں رعایت دی جائے گی جسٹس عتیق شاہ نے کہا کہ اگر سکول سسٹم کے برانچزہوں اور ان کا بورڈ آف گورنرز اور مالک ایک ہو تو پھرسبلنگ فیس ان پرایپلائی ہوتی ہے اس موقع پر عدالت کو بتایا گیا کہ نجی سکول کا کوئی نمائندہ موجود نہیں جس پر عدالت نے نجی سکول کی انتظامیہ کو 16جولائی کو طلب کرلیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -