مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے اسلحہ گوداموں کی وجہ سے سول آبادیاں کو شدید خطرات

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے اسلحہ گوداموں کی وجہ سے سول آبادیاں کو شدید ...

سری نگر(کے پی آئی)مقبوضہ کشمیر کے مختلف علاقوں میں بھارتی فوج کے اسلحہ گوداموں کی وجہ سے سول آبادیاں شدید خطرات سے دوچار ہوگئی ہیں نامناسب حفاظتی انتظامات کی وجہ سے بارود کے یہ ڈھیر کسی بھی وقت تباہی کا باعث بن سکتے ہیں ۔ مقبوضہ کشمیر اسمبلی میں اس صورت حال پر تشویش کا اطہار کیا گیا ہے ۔آبادی والے علاقوں میں گولہ بارود کے ڈیپوں کا سیفٹی آڈٹ کرانے کے احکامات جاری کرتے ہوئے اسمبلی کے اسپیکر نے حکومت کو ریاست میں موجود تمام اسلحہ ڈیپوں کے حفاظتی انتظامات کی جانچ کرنے پر زور دیا ۔ اس دوران نیشنل کانفرنس کے دویندر سنگھ رانا نے کہا کہ اگر مہاراشٹرا جیسا واقع پیش آیا تو بہت نقصان ہوگا جبکہ انجینئر رشید نے انہیں ٹوکتے ہوئے کہا کہ اگر اسلحہ و بارود پھٹ بھی گیا تو بلیاں ہی مریں گی ۔ ایوان اسمبلی میں اس وقت آبادی میں موجود اسلحہ و گولہ بارود کے ڈیپوں پر تشویش کا اظہار کیا گیا جب وقفہ صفر کے بعد نیشنل کانفرنس کے سینئر لیڈر دویندر سنگھ رانا نے اسپیکر کو مخاطب ہوکر کہا کہ مہاراشٹرا میں موجود ایک اسلحہ ڈیپو میں دھماکہ ہوا ہے جس کی وجہ سے کافی نقصانات اور ہلاکتیں ہوئی ہے ۔ دویندر سنگھ رانا نے کہا کہ ان اسلحہ اور گولہ بارود کے ڈیپوں کا سیفٹی آڈٹ کرانے کی ضرورت ہے جبکہ یہ ایک بڑا مسئلہ ہے اور جس دن یہ گولہ بارود کے ذخائر پھٹیں گے تو یہ بہت بڑا نقصان ہوگا ۔

اس موقعہ پر اگرچہ اسپیکر اسمبلی نے ابتدائی طور پر معاملے میں مداخلت کرنے میں کوئی دلچسپی ظاہر نہیں کی تاہم دویندر سنگھ رانا نے کہا کہ ایوان میں کوئی بھی سننے والا نہیں ہے اور یہ ایک اہم مسئلہ ہے جس پر حکومت کو قبل از وقت جاگنا چاہئے ۔ دویندر سنگھ رانا نے کہا کہ اب ان علاقوں میں اسکول اور آبادی والے علاقے بھی ہیں اور اگر خدا نہ خواستہ کوئی سانحہ پیش آیا تو کافی نقصانات سے دوچار ہونا پڑے گا ۔ انجینئر رشید نے دویندر سنگھ رانا کو ٹوکتے ہوئے کہا کہ کوئی مسئلہ نہیں ہے جب یہ گولہ بارود کے ذخائر پھٹیں گے تو بلیاں ہی ماری جائیں گی ۔ اس پر اسپیکر اسمبلی نے ریاستی حکومت کو ہدایت دی کہ مہاراشٹرا کے گولہ بارود و اسلحہ کے ڈیپوں میں آگ کی واردات کو مد نظر رکھتے ہوئے حفاظتی انتظامات کئے جائیں اور ان ڈیپوں کے سیفٹی آڈٹ کرائے جائیں ۔ دویندر سنگھ رانا نے اگرچہ جموں کے کئی علاقوں میں موجود فوجی اسلحہ و گولہ بارود کے ڈیپوں کا ذکر کرتے ہوئے تشویش کا اظہار کیا تاہم وادی سے تعلق رکھنے والے کسی بھی ممبر اسمبلی نے اس معاملے پر اپنے لبوں کو حرکت نہیں دے جبکہ خاص طور پر جنوبی کشمیر میں واقع کھندرو فوجی اسلحہ و بارود ڈیپو کے بارے میں کوئی بھی لب کشائی نہیں کی گئی ۔

مزید : عالمی منظر