ہائیکورٹ،ماتحت عدلیہ کیلئے 14ارب 86کروڑ

ہائیکورٹ،ماتحت عدلیہ کیلئے 14ارب 86کروڑ

لاہور( رپورٹنگ ٹیم )پنجاب حکومت نے بجٹ 2017-18ء میں ایڈ منسٹریشن آف جسٹس کی مد میں لاہور ہائیکورٹ، اور ماتحت عدلیہ کے لیے 14ارب 86کروڑ روپے مختص کئے ہیں جبکہ پبلک آرڈر اور سیفٹی افیئرز کے لئے حکومت نے 19ارب 67کروڑجبکہ ہائیکورٹ او رماتحت عدلیہ کے لیے 18ارب 58کروڑ رکھے گئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق ایڈمنسٹریشن آف جسٹس کی مد میں رکھے گئے بجٹ میں سے 16.8ملین ہائیکورٹ کے لیے، 5.42ارب سیشن کورٹس، 9.22ارب سول کورٹس ، 158.5ملین سپیشل کورٹس اور 35.2ملین دیگر ماتحت عدلیہ کے لیے رکھے گئے ہیں۔ حکومت نے بجٹ میں 80کروڑ 18لاکھ روپے اٹارنی اور دیکر قانونی سروسسز کے لئے رکھے ہیں جس میں سے 43.1ملین محکمہ سولسٹر ، 415.8ملین مفصل اسٹیبلشمنٹ اور 342.8ملین ایڈووکیٹ جنرل آفس کے لئے رکھے گئے ہیں جبکہ 283ملین پنجاب جوڈیشل اکیڈمی کے لئے مختص کیے گئے ہیں۔پنجاب حکومت نے ججوں اور ملازمین کی تنخواہوں کی مد میں 3.1ارب روپے مختص کردئیے ہیں جن میں سے 1.3ارب روپے ججوں اور ملازمین کی تنخواہوں جبکہ 1.34ارب روپے ہائیکورٹ ملازمین کے ایڈہاک ریلیف الاؤنس کی مد میں رکھے گئے ہیں۔ غیرترقیاتی بجٹ میں چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کی بنیادی تنخواہ میں 64ہزار 917روپے اضافہ کیا گیا ہے جس کے بعد چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کی ماہانہ تنخواہ 7لاکھ 13ہزار333روپے ہو گئی ہے۔

ایڈمنسٹریشن آف جسٹس

مزید : صفحہ اول