نواب مظفر خان شہید کی برسی سرائیکی رہنماﺅں کا مظاہرہ ،رنجیت سنگھ کا پتلا نذر آتش

نواب مظفر خان شہید کی برسی سرائیکی رہنماﺅں کا مظاہرہ ،رنجیت سنگھ کا پتلا ...

  



ملتان، ڈیرہ غازیخان ( سٹی رپورٹر)نواب مظفر خان کی قربانی رنگ لائے گی اور وسیب کے لوگ اپنی مکمل حدود اور شناخت کے مطابق صوبہ سرائیکستان بہت جلد حاصل کریں گے۔ وسیب کو تقسیم کرنے کے فارمولے اپنی موت آپ مر جائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار سرائیکستان صوبہ محاذ اور (بقیہ نمبر36صفحہ12پر )

پاکستان سرائیکی پارٹی کے رہنماﺅں نے نواب مظفر خان شہید کی برسی کے موقع پر احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ احتجاجی مظاہرے سے خواجہ غلام فرید کوریجہ، پروفیسر شوکت مغل، ظہور دھریجہ، مہر مظہر کات، علامہ اقبال وسیم، مقصود خان لنگاہ، اُجالا لنگاہ، حاجی احمد نواز سومرو، فادر یونس عالم، ملک جاوید چنڑ ایڈووکیٹ، سردار عبدالقیوم خان ایڈووکیٹ، سید غلام علی شاہ، غلام رسول خان گورمانی، شریف خان لشاری، سید ناصر شاہ، مختیار لنگاہ، ملک اکرم گھلو و دیگر نے خطاب کیا جبکہ درگاہ حضرت بہاﺅالدین زکریا ملتانیؒ کے احاطہ میں مدفون نواب مظفر خان شہید کی قبرپر فاتحہ خوانی کے ساتھ چادر پوشی کی گئی۔ اس موقع پر شرکاءنے حلف اٹھایا کہ جب تک سرائیکی صوبہ نہیں بنے گا ہم خاموش نہیں رہیں گے۔ سرائیکی رہنماﺅں نے کہا کہ نواب مظفر خان شہید نے اپنے 7 بیٹوں اور اپنی صاحبزادی سمیت جان کی قربانی دے دی لیکن کافر رنجیت سنگھ کے سامنے ہتھیار نہ پھینک کر نہ صرف ملتان بلکہ پوری امت مسلمہ کا سر فخر سے بلند کر دیا وہ حقیقی معنوں میں شہید اسلام ہیں۔ سرائیکی رہنماﺅں نے کہا کہ وسیب کے لوگ پنجاب کی تقسیم کا نہیں بلکہ رنجیت سنگھ کی تجاوزات کا خاتمہ چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صوبہ سرائیکستان کے قیام تک ہم خاموش نہیں رہیں گے۔ انہوں نے کہا کہ وقت آگیا ہے کہ رنجیت سنگھ اور انگریز سامراج کی طرف سے چھینے گئے وسیب کے لوگوں کو اُن کا حق واپس کیا جائے کہ سرائیکی وسیب کا نام ہی پاکستان ہے اور وسیب کے لوگ پاکستان سے محبت کرتے ہیں کہ پاکستان اُن کی سرزمین پر قائم ہے۔ مقررین کے خطاب کے بعد رنجیت سنگھ کا پتلا نذر آتش کیا گیا۔ اس موقع پر پولیس اور شرکاءکے درمیان تو تکرار ہوئی مگر شرکاءنے کہا کہ ہم ہر صورت اپنے وسیب کے ہیرو کی قبر پر فاتحہ خوانی بھی کریں گے اور رنجیت سنگھ کا پتلا بھی نذر آتش کریں گے۔ اس موقع پر نواب مظفر خان شہید زندہ باد ، رنجیت سنگھ مردہ باد ، تیری شان میری شان، سرائیکستان سرائیکستان، بہاولپور نہ ملتان، صوبہ صرف سرائیکستان، الوداع الوداع تخت لاہور الوداع، الوداع الوداع تخت پشاور الوداع کے نعرے لگائے گئے۔دریں اثناءڈیرہ غازیخان سے سٹی رپورٹر کے مطابق پاکستان عوامی سرائیکی پارٹی کے زیراہتمام ملتان پر رنجیت سنگھ نے اس دن غازصبانہ قبضہ کیا تھااس سلسلہ میں سرائیکستان ہاوس رشید آباد کالونی سے پل ڈاٹ تک احتجاجی ریلی نکالی گئی جس میںسردار اکبر خان ملکانی ،خواجہ غلام فرید کوریجہ،احسان چنگوانی ،جمشید کامتار و دیگر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 2جون ستوط ملتان رنجیت سنگھ کے غاصبانہ قبضہ سے سرائیکی خطے کے عوام کے غلام بنانے کی ابتدا ہوئی نواب مظفر خان نے ظالم رنجیت سنگھ کی فوج کا مردانہ مقابلہ کیا اور بچوں سمیت شہید ہوگئے آج رنجیت سنگھ کے غاصبانہ قبضہ کو پورے دو سو سال سے اوپر ہو چکے ہیں ہم رنجیت سنگھ کے غاصبانہ قبضہ کی روایت کے خاتمہ تک صوبہ سرائیکستا ن کے قیام کیلئے جدوجہد کو جاری و ساری رکھیں گے آج دو کروڑ سرائیکی عوام ہر قیمت پر صوبہ سرائیکستان کا قیام عمل میں لائیں گے۔

پتلا نذر آتش

مزید : ملتان صفحہ آخر