"عمران خان کی تقریر ختم ہوئی تو بنگلہ دیشی صحافی دوڑتا ہوا میرے پاس آیا اور کہا کہ عمران خان نے آج ترکی کے صدر طیب اردوان کی کمی پوری کر دی ہے۔ اکثر عرب صحافیوں کو عمران خان کی. . .“حامد میر نے تہلکہ خیز انکشاف کردیا

"عمران خان کی تقریر ختم ہوئی تو بنگلہ دیشی صحافی دوڑتا ہوا میرے پاس آیا اور ...

  



مکہ و مکرمہ (ڈیلی پاکستان آن لائن )وزیراعظم عمران خان نے حال ہی میں سعودی عرب کے شہر مکہ میں ہونے والے او آئی سی کے اجلاس میں شرکت کی اور خطاب بھی کیا تاہم اس دوران صحافیوں میں سے حامد میر بھی اس موقع پر موجود تھے ۔ حامد میرنے اس کانفرنس کا حال احوال بیان کرنے کیلئے کالم لکھاہے جو کہا آ ج جنگ نیوز میں شائع کیا گیاہے ۔

سینئر صحافی حامد میر نے اپنی تحریر میں کہاہے کہ وزیراعظم عمران خان کی تقریر ختم ہو ئی تو ایک بنگلہ دیشی صحافی بھاگتا ہوا میرے پاس آیا اور کہنے لگا کہ عمران خان نے آج ترکی کے صدر طیب اردگان کی کمی پوری کر دی ہے کیونکہ اکثر عرب صحافیوں کو عمران خان کی زبان سے گولان کا ذکر سن کر خوشگوار حیرت ہوئی کیونکہ اب کئی عرب حکمران گولان کا ذکر نہیں کرتے کہیں امریکہ ناراض نہ ہو جائے ۔1967کی عرب اسرائیل جنگ کے دوران اسرائیل نے گولان کا وسیع علاقہ شام سے چھین لیا تھا اور اب وہاں سے تیل و گیس نکال رہا ہے۔

عمران خان نے گولان سے اسرائیل کے انخلاءکا مطالبہ کیا اور فلسطینیوں پر اسرائیلی فوج کے مظالم کی شدید الفاظ میں مذمت کے ساتھ ساتھ کشمیر کا ذکر بھی کیا۔ سحری تک بہت سے سربراہان مملکت تقریریں کر چکے تھے اور کانفرنس میں موجود پچاس سے زائد اسلامی ممالک کے صحافیوں کی اکثریت کا خیال تھا کہ سب سے بہترین تقریر عمران خان کی تھی،اب ہمیں مکہ ڈیکلریشن کا انتظار تھا۔ یہ ڈیکلریشن بہت اہم تھا کیونکہ اسے ایک ایسی کانفرنس میں منظور ہونا تھا جو جمعتہ الوداع کے دن مکہ مکرمہ میں منعقد ہو رہی تھی۔

سینئر صحافی کا کہناتھا کہ جب ڈیکلریشن سامنے آیا تو میں اسے تیزی کے ساتھ پڑھ رہا تھا تاکہ کشمیر کا ذکر ڈھونڈ سکوں لیکن ایک قریب بیٹھے صحافی نے میری بے چینی کو دیکھتے ہوئے کہا کہ اس میں کشمیر کا ذکر نہیں ہے ۔مکہ ڈیکلریشن سے کشمیر کا لفظ غائب ہونا پاکستان کے لئے سفارتی دھچکے سے کم نہیں تھا۔

مزید : قومی


loading...