’بچے رو رہے ہوں تو انہیں چپ نہیں کروانا چاہیے‘ ماہر معاشیات نے والدین کو ایسا مشورہ دے دیا کہ انٹرنیٹ میدان جنگ بن گیا

’بچے رو رہے ہوں تو انہیں چپ نہیں کروانا چاہیے‘ ماہر معاشیات نے والدین کو ...
’بچے رو رہے ہوں تو انہیں چپ نہیں کروانا چاہیے‘ ماہر معاشیات نے والدین کو ایسا مشورہ دے دیا کہ انٹرنیٹ میدان جنگ بن گیا

  



نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) بچہ رو رہا ہو تو ماں باپ تڑپ اٹھتے ہیں اور اسے ہرممکن چپ کرانے کی کوشش کرتے ہیں لیکن گزشتہ روز ایک خاتون ماہر معاشیات نے بچے کے رونے کے حوالے سے خواتین کو ایسا مشورہ دے دیا کہ مائیں اس پر برس پڑیں اور انٹرنیٹ میدان جنگ بن گیا۔ میل آن لائن کے مطابق ایملی اوسٹر نامی اس ماہر معاشیات نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر خواتین کو مشورہ دیتے ہوئے لکھا کہ ”جب آپ کا بچہ رو رہا ہو تو اسے رونے دیں، بالکل بھی چپ نہ کروائیں۔“ ایملی نے اس کی وجہ یہ بتائی کہ ”جب بچے کو روتے ہوئے چپ نہ کروایا جائے وہ زیادہ پرسکون نیند سوتا ہے، جس سے اسے کئی طبی فوائد حاصل ہوتے ہیں۔“

براﺅن یونیورسٹی کی پروفیسر ایملی اوسٹر کامزید کہنا تھا کہ ”زیادہ رونے سے بچے کی صحت کو کوئی نقصان نہیں ہوتا اور نہ ہی اس کی نشوونما متاثر ہوتی ہے۔اس کے علاوہ اس سے ماﺅں کو بھی بچے کی وجہ سے لاحق ہونے والی ڈپریشن سے نجات مل جاتی ہے۔“ تاہم خواتین کو پروفیسر ایملی کا یہ مشورہ ایک آنکھ نہیں بھایا بلکہ وہ الٹا غصے میں آ گئیں اور پروفیسر ایملی کو کھری کھری سنانے لگیں۔ڈونا سمر نامی ایک خاتون نے لکھا کہ ”انتہائی مضحکہ خیز مشورہ۔ ماں بھلا کیسے اپنے بچے کو روتا چھوڑ سکتی ہے۔ اگر ایسا ممکن ہوتا تو پھر ایسی تحقیقات کی ہی ضرورت نہ پڑتی۔“ڈیمن جے پارکس کا کہنا تھا کہ ”جب بچہ ماں کی توجہ حاصل کرنے کے لیے رو رہا ہو تو ماں اسے نظر انداز کر دے؟ کیسی احمقانہ بات ہے یہ۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...