کورونا سے مزید 79جاں بحق، 3943نئے کیس، پنجاب میں احکامات پر عمل نہ کرنے والی مارکیٹیں بند کرنے کا فیصلہ، سندھ میں بھی پبلک ٹرانسپورٹ کھولنے کا اعلان، سیاحت کیلئے ایس او پیز تیار

  کورونا سے مزید 79جاں بحق، 3943نئے کیس، پنجاب میں احکامات پر عمل نہ کرنے والی ...

  

اسلام آباد، کراچی، لاہور، پشاور(سٹاف رپوقرٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) منگل کو روزملک بھر میں کورونا سے مزید 79 افراد جاں بحق اور 3943 نئے کیسز رپورٹ ہوئے اموات کی مجموعی تعداد 1653 ہوگئی جب کہ نئے کیسز سامنے آنے کے بعد مریضوں کی تعداد 78290 تک پہنچ گئی ہے اب تک سندھ میں 526 اور پنجاب میں کورونا سے 540 افراد انتقال کرچکے ہیں جب کہ خیبر پختونخوا میں 490 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں۔اس کے علاوہ بلوچستان میں 49، اسلام آباد 30، گلگت بلتستان میں 12 اور آزاد کشمیر میں مہلک وائرس سے 6 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں۔ بروز منگل ملک بھر سے کورونا کے مزید 3943 کیسز اور 79 ہلاکتیں سامنے آئی ہیں جن میں پنجاب سے 1610 کیسز 43 ہلاکتیں، سندھ 1439 کیسز 23 ہلاکتیں، خیبر پختونخوا سے 412 کیسز اور 8 ہلاکتیں، بلوچستان 121 کیسز 2 ہلاکتیں، اسلام آباد 304 کیسز 2 ہلاکتیں، گلگت بلتستان سے 41 کیسز ایک ہلاکت اور آاد کشمیر سے 16 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔ پنجاب سے کورونا کے مزید 1610 کیسز اور 43 ہلاکتیں سامنے آئی ہیں جس کی تصدیق پی ڈی ایم اے نے کی۔صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق صوبے میں کورونا کے مریضوں کی مجموعی تعداد 27850 اور ہلاکتیں 540 ہوگئی ہیں۔صوبے میں اب تک کورونا سے صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 7116ہے۔سندھ سے کورونا کے مزید 1439 کیسز اور 23 اموات سامنے آئیں جس کی تصدیق وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کی۔وزیراعلیٰ کے مطابق صوبے میں کورونا کے مریضوں کی مجموعی تعداد 31086 ہوگئی ہے جب کہ اموات 526 تک جا پہنچی ہیں۔مراد علی شاہ نے بتایا کہ 953 مزید مریض صحتیاب ہوئے ہیں جس سے صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 15538 ہوگئی ہے۔بلوچستان حکومت کی جانب سے پیر کو کورونا وائرس کے اعداد و شمار جاری نہیں کیے گئے تاہم بروز منگل جاری کیے گئے اعداد و شمار کے مطابق صوبے میں مزید 121 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی جس کے بعد صوبے میں تصدیق شدہ کورونا مریضوں کی تعداد 4514ہو گئی ہے۔اس کے علاوہ صوبے میں 2 ہلاکتیں بھی سامنے آئی ہیں جس کے بعد اموات کی تعداد 49 ہوگئی۔بلوچستان میں کورونا وائرس سے صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 1565 ہوگئی ہے۔وفاقی دارالحکومت سے آج کورونا وائرس کے مزید 304 کیسز اور 2 ہلاکتیں سامنے آئی ہیں جس کی تصدیق سرکاری پورٹل پر کی گئی ہے۔پورٹل کے مطابق اسلام آباد میں کیسز کی مجموعی تعداد 2893ہوگئی ہے جب کہ اموات 30 ہو چکی ہیں۔ا?زاد کشمیر میں بھی آج کورونا کے مزید 16کیسز سامنے آئے ہیں جس کی تصدیق سرکاری پورٹل پر کی گئی ہے۔حکومتی اعدادو شمار کے مطابق علاقے میں کورونا کے مریضوں کی تعداد 271 ہوگئی ہے جب کہ علاقے میں اب تک وائرس سے 6 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں۔خیبر پختونخوا میں منگل کو مزید 8 افراد کورونا وائرس سے جاں بحق ہوگئے جس کے بعد صوبے میں ہلاکتوں کی تعداد 490 تک جا پہنچی ہے۔صوبائی محکمہ صحت نے بتایا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مزید 412 افراد میں مہلک وائرس کی تصدیق ہوئی ہے جس کے بعد صوبے میں متاثرہ مریضوں کی تعداد 10897 ہوگئی علاوہ ازیں سندھ میں وزیر ٹرانسپورٹ اور ٹرانسپورٹرز کے درمیان مذاکرات کامیاب ہوگئے۔ سندھ حکومت نے آج سے پبلک ٹرانسپورٹ چلانے کا اعلان کر دیا۔ ٹرانسپورٹرز ایس او پیز کے تحت بسیں چلائیں گے۔ وزیر ٹرانسپورٹ سندھ اویس شاہ نے کہا ہے کہ کراچی میں آج سے ٹرانسپورٹ چلانے کی اجازت دے دی گئی، ایس اوپیز پر عملدرآمد کیلئے مانیٹرنگ اور انسپکشن ٹیم تشکیل دے دی ہیں، ایس او پیز پر عمل نہ ہوا تو گاڑیاں بند کی جائیں گی، تمام گاڑیوں میں اضافی مسافر نہیں بٹھائے جائیں گے، مسافر گاڑیوں میں ماسک اور سینیٹائزر کو لازم قرار دیا گیا ہے، صرف منظور شدہ اڈوں سے گاڑیاں نکلیں گی، خلاف ورزی پر کارروائی کی جائے گی۔حکومت کی جانب سے کورونا لاک ڈاؤن میں نرمی کے بعد سیاحتی شعبے کو کھولنے کیلئے بھی ایس او پیز تجویز کردیے گئے ہیں۔نیشنل ٹورزم کوآرڈینشن بورڈ کے مطابق ہوٹل میں داخلے سے پہلے کسی بھی فرد کے لیے ماسک پہننا لازمی قرار دیا گیا ہے اور ساتھ ہی ہوٹل سٹاف کیلئے ماسک، گلوز اور سینیٹائزر لازمی ہوگا۔نیشنل ٹورزم کوآرڈینشن بورڈ کا کہنا ہے کہ ہوٹل کے کمروں کو روزانہ ڈس انفیکٹ کیا جائے گا، اس کے علاوہ کمروں، گیلریوں اورکھانے کی جگہ پر سماجی فاصلے کو یقینی بنایا جائے گا۔دوسری طرف پنجاب حکومت نے ایس او پیز پر عملدرآمد نہ کروانے والی مارکیٹوں کو بند کروانے کا فیصلہ کرلیا،5 دن مارکیٹوں کو مانیٹر کیا جائے گا۔ کورونا وبا کا پھیلاروکنے کے لئے ایس او پیز پر عملدرآمد ہر صورت ضروری قرار دیکر عوامی آگاہی مہم کو بھی مزید تیز کیا جائے گا حکومتی ہدایات پر من وعن عمل کی اپیل کی جائے گی۔ پیر سے جمعہ تک جو مارکیٹ ایس او پیز پر عملدرآمد نہیں کرے گی اسے فوری طور پر بند کروایا جائے گا۔وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے بھی ایس او پیزکے تحت صوبے میں سیاحت کا شعبہ کھولنے کا اعلان کردیا۔پشاور میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا نے بتایا کہ صوبے میں لاک ڈاؤن میں مزید نرمی کی جا رہی ہے تاہم عوام کو ایس او پیز پر عمل درآمد کرنا ہوگا۔دریں اثناوزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت کورنا وائرس کے خلاف نبرد آزما ملکی ڈاکٹروں اور ہیلتھ کیئر ورکرز کی ضروریات پوری کرنے کے حوالے سے اعلیٰ سطحی اجلاس، اجلاس میں وزیرِ اطلاعات سینٹر شبلی فراز، وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر، معاون خصوصی ڈاکٹر ثانیہ نشتر، معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا، معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل، وزیرِ اعظم کے فوکل پرسن برائے کورونا ڈاکٹر فیصل سلطان اور دیگر سینئر افسران شریک۔ وزیرِ صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد اور وزیر صحت خیبر پختونخواہ تیمور سلیم جھگڑا بھی ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شریک، اجلاس میں کورونا کے خلاف نبردآزما ملکی ڈاکٹروں، پیرامیڈکس اور ہیلتھ کیئر ورکرز کی مختلف ضروریات کو پورا کرنے بشمول بشمول حفاظتی کٹس اور آلات کی فراہمی کے حوالے سے وفاقی و صوبائی حکومتوں کی جانب سے اٹھائے جانے والے اقدامات کا تفصیلی طور پر جائزہ لیا گیا۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیرِ اعظم نے کورنا کے خلاف نبرد آزما ڈاکٹروں اور ہیلتھ کیئر سٹاف کے جذبے کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ کورونا جیسی عالمی وبا سے قوم کو محفوظ رکھنے میں ڈاکٹر ز اور ہیلتھ کیئر سٹاف ہمارا اول دستہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ پوری قوم ان مسیحاؤں کو خراج تحسین پیش کرتی ہے جو قوم کو اس وباء سے محفوظ رکھنے کے لئے برسرِ پیکار ہیں۔ وزیرِ اعظم نے کہا کہ ڈاکٹروں اور ہیلتھ کیئر سٹاف کی تمام ضروریات پوری کرنا حکومت کی اولین ترجیح ہے اور اس ضمن میں کوئی کسر روا نہیں رکھی جائے گی۔ اجلاس میں کورونا وائرس کی صورتحال اور ملک میں موجود ہیلتھ کئیر کی سہولیات کا بھی جائزہ لیا گیا۔ اجلا س کو بتایا گیا کہ جہاں ایک طرف ٹیسٹنگ، ٹریکنگ اور کوارنٹین کی موثر حکمت عملی کی بدولت کورونا کے تشخیص اور متاثرہ افراد کی شناخت کے حوالے سے مثبت نتائج سامنے آئے ہیں وہاں ریسوس منیجمنٹ سسٹم کی بدولت ملک میں کورونا کے لئے مخصوص مراکز، وینٹی لیٹرز و دیگر سہولیات کی فراہمی کے حوالے سے موجود وسائل کا موثر اور بہترین استعمال یقینی بنانے میں بھی خاطر خواہ مدد ملی ہے۔ وزیرِ اعظم نے ہدایت کی صوبائی حکومتیں عوام کو کورونا کے حوالے سے ترتیب دیے جانے والے ایس او پیز پر عملد رآمد کی ترغیب دینے کے لئے متحرک کردار ادا کریں تاکہ عوام از خود کورونا سے بچاؤ کے لئے تجویز کردہ حفاظتی اقدامات اختیار کریں جس سے نہ صرف صحت کی موجود سہولیات پر کم بوجھ پڑے گا بلکہ وائرس کی موثر روک تھام کو بھی یقینی بنایا جاسکے گا۔

لاک ڈاؤن نرمی

لاہور (جاویداقبال)محکمہ صحت سپیشلائزڈ ہیلتھ کے سیکرٹری کیپٹن عثمان اور ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ پنجاب کورونا ٹیسٹ مثبت آنے پر اپنے اپنے گھروں میں آئسولیٹ ہو گئے ہیں جبکہ سیکرٹری ہیلتھ کے پرسنل سٹاف آفیسراور پی اے سمیت چار ملازمین بھی کورونا میں مبتلا ہو چکے ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ میڈیکل ایجوکیشن کے سیکرٹری ہیلتھ نبیل اعوان اور ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ پنجاب جہانگیر ہارون گزشتہ تین روز سے بخار اور فلو میں مبتلا پائے گئے۔ان صاحبان میں تیز بخار اور کھانسی کی علامات بھی اچانک ابھر کر سامنے آئیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ سیکرٹری ہیلتھ آفس کے چار ملازمین میں بھی وائرس کی تصدیق ہوئی ہے جن میں سیکرٹری ہیلتھ کے پی ایس او محبوب اور پی اے بلال شامل ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ہیلتھ سیکرٹریٹ کے سیکریٹری اور دیگر ملازمین میں کورونا کی علامات سامنے آنے پر پورے ہیلتھ سیکرٹریٹ اور ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ کے آفس میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے۔سیکرٹریٹ کے متعدد ملازمین نے خود کو گھروں میں قرنطینہ کر لیا ہے۔ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ پرائمری سیکنڈری ہیلتھ کے سیکرٹری کیپٹن عثمان نے اپنے دفتر میں لوگوں کا داخلہ بند کر دیا۔مین گیٹ پر سائلین سے درخواستیں وغیرہ وصول کی جا رہی ہیں۔واضح رہے کہ سروسز ہسپتال کے ایم ایس ڈاکٹر افتخار نیازی بھی کورونا کی علامات ظاہر ہونے پر اپنے گھر میں قرنطینہ ہو چکے ہیں۔ لاہور جنرل ہسپتال اور امیر الدین میڈیکل کالج کے پرنسپل پروفیسر فرید ظفر میں بھی پہلے ہی سے کورونا پازٹیو آ چکا ہے۔ ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ کوروناکے پھیلاؤ کی وجہ سے پنجاب کرونا ایکسپرٹ ا یڈوائزری گروپ کے ممبران نے خود کو آئسولیٹ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

سیکرٹری،قرنطینہ

لندن،نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک،این این آئی)دنیا بھر میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 63 لاکھ 70 ہزار 499 ہوگئی جبکہ اس سے ہلاکتیں 3 لاکھ 77 ہزار 515 ہو گئیں۔امریکی میڈیارپورٹس کے مطابق کورونا وائرس کے دنیا بھر میں 30 لاکھ 88 ہزار 294 مریض اسپتالوں اور قرنطینہ مراکز میں زیرِ علاج ہیں، جن میں سے 53 ہزار 403 کی حالت تشویش ناک ہے جبکہ 29 لاکھ 4 ہزار 690 مریض صحت یاب ہو چکے ہیں۔امریکا تاحال کورونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثرہ ملک ہے جہاں ناصرف کورونا مریض بلکہ اس سے ہلاکتیں بھی اب تک دنیا کے تمام ممالک میں سب سے زیادہ ہیں۔امریکا میں کورونا وائرس سے اب تک 1 لاکھ 6 ہزار 925 افراد موت کے منہ میں پہنچ چکے ہیں جبکہ اس سے بیمار ہونے والوں کی مجموعی تعداد 18 لاکھ 59 ہزار 323 ہو چکی ہے۔امریکا کے اسپتالوں اور قرنطینہ مراکز میں 11 لاکھ 36 ہزار 982 کورونا مریض زیرِ علاج ہیں جن میں سے 16 ہزار 949 کی حالت تشویش ناک ہے جبکہ 6 لاکھ 15 ہزار 416 کورونا مریض اب تک شفایاب ہو چکے ہیں۔کورونا وائرس کے مریضوں کی تعداد کے حوالے سے ممالک کی فہرست میں برازیل دوسرے نمبر پر پہنچ گیا ہے جہاں کورونا کے مریضوں کی تعداد 5 لاکھ 29 ہزار 405 تک جا پہنچی ہے جبکہ یہ وائرس 30 ہزار 46 زندگیاں نگل چکا ہے۔کورونا وائرس سے روس میں کل اموات 4 ہزار 855 ہو گئیں جبکہ اس کے مریضوں کی تعداد 4 لاکھ 14 ہزار 878 ہو چکی ہے۔اسپین میں کورونا کے اب تک 2 لاکھ 86 ہزار 718 مصدقہ متاثرین سامنے آئے ہیں جب کہ اس وباء سے اموات 27 ہزار 127 ہو چکی ہیں۔برطانیہ میں کورونا سے اموات کی تعداد 39 ہزار 45 ہوگئی جبکہ کورونا کے کیسز کی تعداد 2 لاکھ 76 ہزار 332 ہو گئی۔اٹلی میں کورونا وائرس کی وباء سے مجموعی اموات 33 ہزار 475 ہو چکی ہیں، جہاں اس وائرس کے اب تک کل کیسز 2 لاکھ 33 ہزار 197 رپورٹ ہوئے ہیں۔بھارت میں کورونا وائرس سے 5 ہزار 608 ہلاکتیں ہو چکی ہیں جبکہ اس سے متاثرہ مریضوں کی تعداد 1 لاکھ 98 ہزار 706 ہو گئی۔فرانس میں کورونا وائرس کے باعث مجموعی ہلاکتیں 28 ہزار 833 ہوگئیں جبکہ کورونا کیسز 1 لاکھ 89 ہزار 220 ہو گئے۔جرمنی میں کورونا سے کْل اموات کی تعداد 8 ہزار 618 ہو گئی جبکہ کورونا کے کیسز 1 لاکھ 83 ہزار 765 ہو گئے۔ترکی میں کورونا وائرس سے جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 4 ہزار 563 ہو گئی جبکہ کورونا کے کل کیسز 1 لاکھ 64 ہزار 769 ہو گئے۔ایران میں کورونا وائرس سے مرنے والوں کی کل تعداد 7 ہزار 878 ہو گئی جبکہ کورونا کے کل کیسز 1 لاکھ 54 ہزار 445 ہو گئے۔سعودی عرب میں کورونا وائرس سے اب تک کل اموات 525 رپورٹ ہوئی ہیں جبکہ اس کے مریضوں کی تعداد 87 ہزار 142 تک جا پہنچی ہے۔چین جہاں دنیا میں کورونا کا پہلا کیس سامنے آیا تھا وہاں کورونا وائرس پر کافی حد تک قابو پایا جا چکا ہے اور روزانہ صرف چند کورونا مریضوں کا اضافہ ہو رہا ہے جبکہ اس سے اموات میں کافی عرصے سے کوئی اضافہ سامنے نہیں آیا ہے، چین میں کورونا مریضوں کی تعداد 83 ہزار 22 اور اس سے اموات 4 ہزار 634 ہوگئی ہیں۔

عالمی ہلاکتیں

مزید :

صفحہ اول -