طالبان سمیت جو بھی پاکستانی ریاست کو تسلیم کریگا اس سے مذاکرات ہوسکتے ہیں ،قمر زمان کائرہ

طالبان سمیت جو بھی پاکستانی ریاست کو تسلیم کریگا اس سے مذاکرات ہوسکتے ہیں ...

لاہور(آئی اےن پی) وفاقی وزےر اطلا عات قمر الزمان کائر ہ نے کہا ہے کہ پارلےمنٹ سب سے معتبر ادارہ ہے ‘ ججز صاحبان کو پارلےمنٹ کے بارے بات کرتے ہوئے اسکا احترام ملحوظ خاطر رکھنا چاہےے ‘صرف پارلےمنٹ کو قانون سازی اور آئےن مےں تبدےلی کا اختےار ہے ‘ طالبان سمےت جو بھی آئےن ‘قاتون اور پاکستانی رےاست کو تسلےم کر ےں اس سے مذاکرات ہوسکتے ہےں ‘آئندہ انتخابات مےں صدر اور گورنرز کا کوئی آئےنی کردار نہےں ہوگا ‘چےف الےکشن کمشنر کو خود ہی پنجاب مےں ضلعی انتظامےہ کے ذرےعے (ن) لےگ کے اراکےن اسمبلی مےں کروڑوں کے فنڈز کے استعمال اور من پسند افسران کی تعےناتےوں کا فوری نوٹس لےنا چاہےے ‘پےپلزپارٹی کےخلاف آج کی ”آئی جے آئی“ طالبان اور انتہا پسندانہ سوچ رکھنے والے بنا رہے ہےں‘ماضی مےں (ن) لےگ کو اےجنسےاں ووٹ اور نوٹ دےتی رہی ہےں آج اےسا نہےں جسکی وجہ سے (ن) لےگ گھبراٹ کا شکار ہے اور(ن) لےگ ہمےشہ اےجنسےوں کے سہارے اقتدار مےںا ٓئی ہے ‘ (ن) لےگ جن کو گا لےاں دےتی رہی ان سے ہی آج اتحاد کر رہی ہے ‘(ق) لےگ کے سےٹ اےڈجسٹمنٹ کے حوالے سے بات چےت چل رہی ہے اور دونوں جماعتوں نے اپنے امےدواروں کا فےصلہ خود کر نا ہے ۔ وہ ہفتہ کو لاہور مےں چےئر مےن متر وکہ وقف املاک بورڈ سےد آصف ہاشمی سے ملاقات کے بعد مےڈےا سے گفتگو کر رہے تھے جبکہ اس موقعہ پر پےپلزپارٹی اےگز ےکٹےو کمےٹی لاہور کے رکن ارشاد علی بھٹی اور دےگر بھی موجو د تھے ۔ وفاقی وزےر اطلا عات قمر الزمان کائر ہ نے کہا ہے کہ پاکستان پےپلزپارٹی کے خلاف پہلے آئی جے آئی بنانے والے بھی قوم کے سامنے بے نقاب ہو ئے ہےں اور آج طالبان اور انتہا پسندانہ سوچ رکھنے والے جولوگ نئی ”آئی جے آئی “ بنا رہے ہےںا نکو بھی قوم کے سامنے بے نقاب ہونا چاہےے تاکہ قوم کو معلوم ہو کہ وہ کون لوگ ہے جو انتہا پسندوں اورد ہشت گردوں کو سپورٹ کر رہے ہےں اور کون وہ لوگ ہےں جو ان دہشت گردوں کا نشانہ بننے کے باوجودا نکے خلاف کھڑے ہےں ۔ انہوں نے کہا کہ آج کچھ لوگ گور نرز کی تبدےلی کا مطالبہ کر رہے ہےں لےکن اصل مےں آئندہ انتخابات مےں صدر اور گورنرز کا کوئی آئےنی کردار ہی نہےں ہو نا بلکہ اصل کردار پو لےس اور دےگر محکموں کے ضلعی افسران کا ہو گا اسی لےے پنجاب حکو مت نگران حکو مت سے پہلے اپنے پسند کے افسران کو اپنے حلقو ں مےں لا رہی ہے تاکہ جب ملک مےں نگران حکو مت آئے تو وہ ےہ کہہ کر ان افسران کے تبادلے نہ کر ےں کہ انکے تبادلے کو کچھ دن تو ہوئے ہےں مےں سمجھتاہوں کہ الےکشن کمےشن کو اسکا خود نوٹس لےنا چاہےے ضروری تو نہےں کہ ہم الےکشن مےں جا ئے۔

قمر زمان کائرہ

مزید : صفحہ اول

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...