2 بیٹوں کے دل میں سوراخ‘ مزدور باپ سرکاری ہسپتالوں کے دھکے کھانے لگا

2 بیٹوں کے دل میں سوراخ‘ مزدور باپ سرکاری ہسپتالوں کے دھکے کھانے لگا

ڈیرہ غازی خان(سٹی رپورٹر ،نمائندہ خصوصی) یونین کونسل نمبر3 چاہ شاہلی والا کے رہائشی محمد رمضان بلوچ نے کہا ہے میرا 18 سالہ بیٹا عمرفاروق اور چھ سالہ محمد وسیم کو پیدائشی طور پر دل میں سوراخ ہیں میں ایک غریب مزدور ہوں منڈی میں ٹرکوں سے سامان اتارتا اور لوڈ کرتا ہوں کبھی دیہاڑی لگتی ہے اور کبھی نہیں لگتی کئی سالوں سے بچوں کا سرکاری(بقیہ نمبر51صفحہ12پر )

ہسپتالوں سے علاج کروا رہاہوں تمام جمع پونجی علا ج پر خرچ ہوگئی ہے دو سال قبل ملتان میں پرویز الہی کارڈیالوجی ہسپتال میں آپریشن کے لیے نمبر ملا سات بوتلیں خون کی نکالی گئیں جب میں اپنے بچے کو لے گیا تو مجھے لاہور ریفر کردیا چیلڈرن ہسپتال میں ڈاکٹروں نے چیک کے بعد مزید ٹائم دے دیا کرایا نہ ہونے کی وجہ سے دوبارہ لاہور نہ جاسکاسرکاری ہسپتالوں کے دھکے کھا کر تھک چکا ہوں ملتان جانے کے لیے کرایہ بھی مخیر خضرات دیتے ہیں محمد رمضان نے بتایا کہ وہ ان دنوں شدید پریشانی کا شکار ہے ہر وقت بچوں کی فکر رہتی ہے علاقے کے لوگ غریب ہیں لیکن انہوں نے دل کی بیماری میں مبتلا اس بچے کی مدد کے لیے پر ممکن کوشش کی، جس سے جتنا ہو سکا اسکی مدد کی ہے اب ان کے پاس بھی اتنا نہیں ہے کہ اس کی زیادہ مدد کر سکیں علاج پر لاکھوں روپے اخراجات آئیں گے، وفاقی ، صوبائی حکومت اور مخیرحضرات سے اپیل کی ہے کہ وہ مالی تعاون کریں اورمیرے معصوم بچوں کاسرکاری خرچ پر علاج کراکربچوں کی زندگی بچائیں دونوں بیٹے دل کے مرض میں مبتلا ہو کر موت کے قریب جارہے ہیں غریب گھرانہ کسی کی مدد کا منتظر ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر