اقوام عالم کو افغان معاہدہ کے تحفظ کیلئے کردار ادا کرنا ہوگا،حامد الحق حقانی

اقوام عالم کو افغان معاہدہ کے تحفظ کیلئے کردار ادا کرنا ہوگا،حامد الحق حقانی

  



پبی (نما ئندہ پاکستان)جمعیت علمائے اسلام اوردفاع پاکستان کونسل کے چیئرمین مولانا حامد الحق حقانی نے کہا کہ عالم کفر کو چاہیے کہ مسلمانوں کیساتھ دنیا بھر میں جاری پنجہ آزمائی ختم کردے۔ امریکہ طالبان امن معاہدے جیسے خوش آئند اقدام کی طرح مظلوم کشمیری، فلسطینی،عراقی، شامی، برمی اور دیگر اسلامی ممالک کیساتھ بھی اپنی جاری بربریت ختم کرکے دنیا کو امن کی طرف لے جائے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے اپنے دورہ ضلع رحیم یار خان اور ضلع راجن پور میں کارکنوں کے اجتماعات سے خطاب کرتے ہوئے کیا، مولانا حامد الحق حقانی نے جامعہ عبد اللہ بن مسعود خانپور کے سالانہ اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اقوام عالم کو افغان امن معاہدے کے تحفظ کے لیے مخلصانہ کردار ادا کرنا ہوگا۔ اگر اس تاریخی نادر موقع کو معمولی باتوں پر کیڑے مکوڑے نکال کر ضائع کیا گیا تو امن کا یہ باب خدانخواستہ کہیں بند ہی نہ ہوجائے۔ جس کہ نتیجہ میں اپنے آپ کو سپر پاور، اور دنیا کے ٹھیکدار کہنے والوں کو ذلت و رسوائی کے سوا کچھ نہ ملے گا مولانا حامد الحق نے رحیم یار خان کے معروف ادارے جامعہ قادریہ کا دورہ کیا جہاں پہنچنے پر ان کا پرتپاک استقبال کیا گیا، مرکزی سیکرٹری اطلاعات مولاناسید محمدیوسف شاہ نے کارکنوں پر زور دیا کہ وہ جہاد افغانستان کے شہید مولانا سمیع الحق شہید کا نظریہ اور مشن عوام تک پہنچائیں، انہوں نے کہاکہ آج مولانا سمیع الحق شہید کے روحانی بیٹوں نے مولانا کی شہادت کا بدلہ استعماری قوتوں سے لے لیا،آج ان کی روح قبر میں خوش ہوگی۔مولانا حامد الحق نے ضلعی جماعت کی طرف سے مختلف اجتماعات میں شرکت کی اور علماء اور معززین علاقہ سے موجودہ ملکی اور بین الاقوامی سیاسی صورتحال پر تفصیل سے روشنی ڈالی،انہوں نے کہاکہ قطر معاہدہ میں پاکستان،قطر،سعودی عرب اور دیگر اسلامی ممالک کا کردار قابل تحسین ہے،اس سے استحکام کا ایک نیا دور شروع ہوگا، جو پاکستانی قوم کے لئے خوش آئندہ ہے۔ جامعہ عبداللہ بن مسعود خانپور کے اجتماع سے جامعہ کے رئیس اور جمعیت علماء اسلام کے نائب امیر مفتی حبیب الرحمن درخواستی کے علاوہ مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل مولانا فہیم الحسن تھانوی، کراچی کے سیکرٹری جنرل مفتی حماد مدنی، مولانا اسعد درخواستی، مولانا عبد الصمد درخواستی، مولانا رحمت اللہ درخواستی اور دیگر نے خطاب کیا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر