کرونا وائرس، خامنہ ای کے مشیر سمیت مزید 12افراد ہلاک، پاک افغان بارڈر بند

      کرونا وائرس، خامنہ ای کے مشیر سمیت مزید 12افراد ہلاک، پاک افغان بارڈر ...

  



تہران/بیجنگ/ووہان/چمن/ملائشیا/اسلام آباد/تفتان/راولپنڈی(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوز ایجنسیاں): ایران میں کرونا وائرس سے سپریم لیڈر خامنہ ای کے مشیر سمیت مزید 12 افراد ہلاک ہوگئے جبکہ چین میں کرونا وائرس کے باعث مزید 42افراد ہلاک اور202نئے مصدقہ مریضوں کی تصدیق ہوئی ہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق ایرانی کونسل ممبر کے رکن اور سپریم لیڈر خامنہ ای کے مشیر 71 سالہ محمد میر محمدی کے کورونا وائرس سے انتقال کی تصدیق کی گئی جبکہ ملک بھر میں وائرس کے مزید 523 نئے کیسز سامنے آئے ہیں جس کے بعد کیسز کی تعداد 1501 ہوگئی ہے۔ میڈیا کے مطابق وائرس میں مبتلا ایران کے نائب صدر کی حالت پہلے سے قدرے بہتر ہے۔ایرانی حکومت کے ترجمان نے ٹیلی کانفرنس کے دوران وائرس کے بڑھتے کیسز پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے حکومت کے لیے ایک چیلنج قرار دیا اور کہا کہ ہمارے لیے آئندہ دو ہفتے مزید مشکلات ہوں گی۔دوسری جانب ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے وائرس سے نمٹنے کے لیے امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کی پیشکش کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ہم اس طرح کی مدد کو زیر غور نہیں لاتے اور نہ ہی زبانی مدد کو قبول کرتے ہیں، ایران ہمیشہ سے امریکا کے ارادوں کو مشکوک سمجھتا ہے۔ترجمان نے الزام لگایا کہ امریکی حکومت اس وباء پر ایرانی حکومت کو کمزور کرنے کی کوشش کررہی ہے۔دوسری جانبچین میں کرونا وائرس سے مجموعی ہلاکتیں 2912اور متاثرہ افراد کی تعداد80 ہزار 26 ہوگئی جن میں سے 7ہزار110 افراد کی حالت تاحال تشویشناک ہے۔چین کے صحت حکام کے مطابق 44ہزار 462مریضوں کو صحت یاب ہونے کے بعد فارغ کیا گیا۔کرونا وائرس کی روک تھام کیلئے حفاظتی اقدامات کے تحت پاک افغان بارڈرباب دوستی 9 مارچ تک بند رہے گا اور اس دوران کسی کو آمدورفت کی اجازت نہیں ہوگی، اس سلسلے میں تمام ٹریڈرز، گڈز ٹرانسپورٹرز کو مال بردار گاڑیاں، کسٹم ہاؤس اور دیگر یارڈ منتقل کرنے کی ہدایت کردی گئی۔حکام کے مطابق پاک افغان بارڈر پر دوطرفہ پیدل آمدورفت اور تجارتی سرگرمیاں بھی معطل رہیں گی۔حکام کے مطابق پاک افغان بارڈرپراب تک کرونا کاکوئی مریض نہیں سامنے نہیں آیا لیکن سکریننگ ٹیمیں باب دوستی پر موجود رہیں گی۔ کرونا وائرس کے باعث سلطان ازلان شاہ کپ ہاکی ٹورنامنٹ کورونا وائرس کے باعث ملتوی کر دیا گیا۔ ازلان شاہ کپ ہاکی ٹورنامنٹ ملائیشیا کے شہر ایپو میں 11 سے 18 اپریل تک کھیلا جانا تھا لیکن اب گیارہ اپریل سے شروع ہونے والے ایونٹ کے لیے 24 ستمبر سے 3 اکتوبر تک کی نئی تاریخیں تجویز کی گئی ہیں۔پاکستان ہاکی فیڈریشن نے ٹورنامنٹ کیلیے ممکنہ کھلاڑیوں کے ناموں کا اعلان کرنا تھا جبکہ کیمپ 5 مارچ کو شروع ہونا تھا۔ہیڈ کوچ خواجہ جنید کا کہنا ہے ہاکی ٹیم کے لیے نئی سرگرمیوں کے بارے میں سوچ بچار کر رہے ہیں اور اگلے ایک دو روز میں نئے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا۔دوسری جانب ایران میں کرونا وائرس سے ہونے والی اموات کے بعد پاک ایران سرحد تفتان کی بندش برقرار ہے تاہم ایران سے پاکستانی شہریوں کی پاکستان واپسی کا عمل جاری ہے۔ پاکستان آنے والے 1731افراد کو پاکستان ہاؤس میں 14 دن کیلیے قرنطینہ میں رکھا گیا ہے جہاں اْن کی طبی نگرانی اورمعائنہ کیا جارہا ہے۔صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کا کہنا ہے کہ تفتان سمیت مختلف سرحدی علاقوں میں کرونا وائرس کے حوالے سے معاونت فراہم کی جارہی ہے۔تفتان میں موجود زائرین احتجاج کرتے ہوئے قرنطینہ سے نکل کر سڑکوں پر آگئے، زائرین نے حکومت کے خلاف نعرہ بازی کرتے ہوئے گھر جانے کی اجازت دینے کا مطالبہ کیا۔ تاہم پی ڈی ایم اے حکام نے کہا کہ سکریننگ مکمل ہونے تک نہیں بھیج سکتے۔ بعد ازاں حکام کیساتھ مذاکرات کے بعد زائرین واپس قرنطینہ سینٹر منتقل ہو گئے۔ وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے ملک میں کورونا وائرس کے شکار چاروں افراد کی حالت تسلی بخش قرار دی ہے۔ڈاکٹر ظفر مرزا نے کہا ہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس سے متاثرہ چاروں افراد کی حالت بہتر ہے اور وہ بھی بہت جلد صحت یاب ہوجائیں گے۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان میں ہرکسی کوماسک پہننے کی ضرورت نہیں۔معاون خصوصی نے چین میں موجود پاکستانی طالب علموں سے متعلق بتایا کہ چین میں وائرس سے 6 متاثرہ پاکستان طلبہ بیمار ہو کر صحت یاب بھی ہوگئے اور انہیں ڈسچارج کردیا گیا ہے جبکہ ایک پاکستانی طالب علم اب تک زیر علاج ہے وہ بھی جلد صحت یاب ہو کر ڈسچارج ہوجائے گا۔کرونا وائرس سے بچاؤ کیلئے پاکستان نے اقدامات تیز کر دیئے، ایران سے لوٹنے والے 91 زائرین کی تلاش اسلام آباد راولپنڈی میں شروع کر دی گئی۔ایران سے لوٹنے والے 91 زائرین فروری میں واپس آئے تھے، تمام کا تعلق اسلام آباد اور راولپنڈی سے ہے۔ ڈی سی اسلام آباد کی ہدایت پر امیگریشن حکام سے شہریوں کی فہرست حاصل کرلی گئی ہیں، ان افراد کو تلاش کر کے کرونا وائرس کے ٹیسٹ کیے جائیں گئے۔راولپنڈی کی ضلعی انتظامیہ نے کورونا وائرس کے مریضوں کے علاج کے لیے اہم قدم اٹھاتے ہوئے 100 بیڈز پر مشتمل ہسپتال قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔راولپنڈی انسٹیٹوٹ آف یورولوجی (آر آئی یو)کے ایک حصے میں کرونا سپیشل یونٹ بنایا جائے گا۔ ضلعی انتظامیہ نے 50 بستر آر آئی یو منتقل کردیے ہیں اور مزید 50 بستر جلد پہنچا دیے جائیں گے۔علاوہ ازیں وفاقی حکومت نے کرونا وائرس سے نمٹنے کیلئے اہم قدم اٹھاتے ہوئے تمام سرکاری ہسپتالوں سے افرادی قوت کی تفصیلات طلب کرلی ہیں تاکہ عملے کی دستیابی کا جائزہ لیا جاسکے۔وائرس کے پھیلاؤ سے نمٹنے کیلئے ہسپتالوں میں عملہ کی تعیناتی سمیت نئی بھرتیاں بھی کی جاسکتی ہے۔ وزارت صحت نے ماسک کی کمی کو پوراکرنے کیلئے ہنگامی بنیادوں پر خواہشمند کمپنیوں کو ماسک کی تیاری کا لائسنس جاری کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔ حکومت نے کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے ئنی حکمت عملی تیار کرلی ہے، جس کے تحت عوام میں آگاہی پیدا کرنے کے لیے پولیو ٹیمز کی خدمات حاصل کی جائیں گی۔نیشنل ایمرجنسی آپریشن سنٹر کی جانب سے جاری مراسلہ کے مطابق کورونا وائرس کی کمیونٹی کی سطح پر آگاہی اور نشاندہی کے لیے پولیو سرویلنس ٹیمز کو میدان میں اتارنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔جاری مراسلہ کے مطابق کورونا وائرس سے متعلق آگاہی کے لیے چاروں صوبوں، آزاد جموں و کشمیر اور گلگت بلتستان کے پولیو ورکرز بھی اپنی خدمات دے گے۔علاوہ ازیں علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کے تحت بلوچستان میں گزشتہ روز سے شروع ہونے والے میٹرک اور ایف اے کے امتحانات جبکہ بی ایڈ اور ایم ایڈ کی ورکشاپس ملتوی کردی گئی ہیں جن کی نئی تاریخوں کا اعلان بعد میں کیا جائے گا۔

کرونا وائرس

مزید : صفحہ اول