یورپی ملک کے فوجیوں کی مہاجرین کی کشتی پر براہ راست فائرنگ، خود کو انسانی حقوق کا محافظ کہنے والے یورپ کے لیے انتہائی شرمناک خبر آگئی

یورپی ملک کے فوجیوں کی مہاجرین کی کشتی پر براہ راست فائرنگ، خود کو انسانی ...
یورپی ملک کے فوجیوں کی مہاجرین کی کشتی پر براہ راست فائرنگ، خود کو انسانی حقوق کا محافظ کہنے والے یورپ کے لیے انتہائی شرمناک خبر آگئی

  



ایتھنز(مانیٹرنگ ڈیسک) یورپ ممالک خود کو انسانی حقوق کے محافظ کہلاتے ہیں لیکن اب یورپی ملک یونان کے متعلق ایسی اندوہناک خبر آ گئی ہے کہ انسانیت شرم سے پانی پانی ہو گئی۔ میل آن لائن کے مطابق گزشتہ روز یونانی کوسٹ گارڈز نے پناہ گزینوں کی ایک کشتی پر فائرنگ کر ڈالی اور پھر لوہے کے راڈ سے نہ صرف کشتی میں بیٹھے پناہ گزینوں کو تشدد کا نشانہ بنایا بلکہ اسی راڈ سے کشتی کو سمندر میں ڈبونے کی کوشش بھی کی۔

اس واقعے کی ویڈیو انٹرنیٹ پر پوسٹ کی گئی ہے جو تیزی سے وائرل ہو رہی ہے۔ یہ پناہ گزین ترکی سے یونان میں داخل ہونے کے لیے جا رہے تھے جب یونانی کوسٹ گارڈز دو کشتیوں پر وہاں آ گئے۔ ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ کوسٹ گارڈز کی کشتی پہلے تیزی سے پناہ گزینوں کی کشتی کو سائیڈ مارتی ہوئی گزرتی ہے اور پھر دور جا کر اہلکار کشتی پر فائرنگ کرتے ہیں۔ پھر دو کشتیاں وہاں آتی ہیں اور اہلکار لوہے کے راڈ سے پناہ گزینوں پرتشدد اور کشتی ڈبونے کی کوشش شروع کر دیتے ہیں۔ ویڈیو یہیں ختم ہو جاتی ہے، چنانچہ یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ ان بیچارے پناہ گزینوں کا انجام کیا ہوا۔

واضح رہے کہ گزشتہ دنوں بھی پناہ گزینوں کی ایک کشتی ڈوبنے سے ایک معصوم بچہ جاں بحق ہو گیا تھا۔ ان پناہ گزینوں کو اب تک ترکی نے اپنے ہاں روک رکھا تھا تاہم گزشتہ دنوں ترکی کے صدر رجب طیب اردگان نے اپنے ایک بیان میں یورپ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا تھا کہ اب وہ پناہ گزینوں کو قبول کرے اور اپنے ہاں آنے کی اجازت دے۔

مزید : بین الاقوامی