ایف آئی اے کا بچوں سے زیادتی کے ملزم سہیل ایاز کیخلاف شرمناک سلوک ،قائمہ کمیٹی میں ہونے والےانکشاف نے تہلکہ مچا دیا

ایف آئی اے کا بچوں سے زیادتی کے ملزم سہیل ایاز کیخلاف شرمناک سلوک ،قائمہ ...
ایف آئی اے کا بچوں سے زیادتی کے ملزم سہیل ایاز کیخلاف شرمناک سلوک ،قائمہ کمیٹی میں ہونے والےانکشاف نے تہلکہ مچا دیا

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے اوورسیز پاکستانیز میں انکشاف ہوا ہے کہ ایف آئی اے کی جانب سے بچوں سے زیادتی کے ملزم سہیل ایاز کے خلاف تاحال ایف آئی آر درج نہیں کرائی گئی، کمیٹی نے ایف آئی اے حکام کی بریفنگ پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے معاملے پر آئندہ اجلاس میں دوبارا تفصیلی بریفنگ طلب کر لی جبکہ چین میں موجود پاکستانیوں کے معاملے پر وزارت خارجہ اور وزارت صحت حکام کو بھی طلب کر لیا، رکن کمیٹی مہرین رزاق بھٹو نے کہا کہ سہیل ایاز ڈی پورٹ ہوا،وہ کس طرح پاکستان میں آیا ؟اس کو نوکری بھی مل گئی، اس نے بچوں کے ساتھ ظلم کیا ہے،کیا ایف آئی اے نے اس کی ہسٹری کو چیک کیا؟ ایف آئی اے نے ایئر پورٹ پرکیوں یہ چیک نہیں کیا کہ سہیل ایاز کو ڈی پورٹ کیوں کیا گیا۔

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے اوورسیز پاکستانیز کا اجلاس چیئرمین شیخ فیاض الدین کی صدارت میں ہوا،اجلاس میں نیشنل امیگرینٹس پالیسی کے ڈرافٹ پر بریفنگ دی گئی، بریفنگ میں وزارت اوورسیز پاکستانیز نے بتایا کہ جب سے ملک بنا ہے کوئی امیگریشن پالیسی نہیں بنائی گئی، ہم نے تمام اسٹیک ہولڈرز سے مشاورت کرکے پالیسی بنائی ہے، پالیسی کا حتمی ڈرافٹ بن گیا ہے، رکن کمیٹی مہرین رزاق بھٹو نے استفسار کیا کہ حوالہ اور ہنڈی کے ذریعے کتنے پیسے آتے ہیں؟ ایک شکایت ملی ہے کہ اوورسیز پاکستانی اپنی تنخواہ ڈالر میں بھیجتے ہیں اور بینک انہیں روپے میں تبدیل کر دیتے ہیں۔ وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانیز نے کمیٹی کو بتایا کہ ایک اندازے کے مطابق 20 ارب ڈالر غیر قانونی طریقے سے آتے ہیں، وزارت اوورسیزپاکستانیز حکام نے کمیٹی کو بتایا 9.6 ملین پاکستانی بیرون ملک مقیم ہیں، 27 لاکھ سعودی عرب، 16 لاکھ یو اے ای، 15 لاکھ یوکے،دس لاکھ امریکہ اور ڈیڑھ لاکھ بحرین، قطر اور کویت میں مقیم ہیں، اجلاس میں چین میں موجود پاکستانیوں کا معاملہ بھی زیر غور آیا۔

چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ چین میں موجود پاکستانی بچوں کو واپس کیوں نہیں لایا جا رہا، رکن کمیٹی مہرین رزاق بھٹو نے کہا کہ ایران سے آنے والے زائرین کو ایئرپورٹ چیک نہیں کیا گیا وہ ایئرپورٹ سے شہر پہنچ گئے، کسی پروٹوکول کو فالو نہیں کیا جارہا،کمیٹی نے معاملے پر وزارت خارجہ اور وزارت صحت حکام کو آئندہ اجلاس میں طلب کر لیا، اجلاس میں بچوں سے زیادتی کے ملزم سہیل ایاز کا معاملہ بھی زیر غور آیا، ایف آئی اے حکام نے کمیٹی کو بتایا انکوائری چل رہی ہے،ابھی ایف آئی آر درج کرنی ہے، ایف آئی اے حکام کی بریفنگ پر کمیٹی نے عدم اطمینان کا اظہار کیا، رکن کمیٹی مہرین رزاق بھٹو نے کہا کہ سہیل ایاز ڈی پورٹ ہوا وہ کس طرح پاکستان میں آیا اس کو نوکری بھی مل گئی، اس نے بچوں کے ساتھ ظلم کیا ہے،کیا ایف آئی اے نے اس کی ہسٹری کو چیک کیا؟ ایف آئی اے نے کیوں یہ چیک نہیں کیا کہ اس کو دی پورٹ کیوں کیا گیا، کمیٹی نے آئندہ اجلاس میں معاملے پر دوبارا تفصیلی بریفنگ طلب کرلی۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد