تنخواہیں، پنشن بند،سرکاری ملازمین کا احتجاجی مظاہرہ

تنخواہیں، پنشن بند،سرکاری ملازمین کا احتجاجی مظاہرہ

  

 خانیوا ل (نامہ نگار+نمائندہ پاکستان+بیورو نیوز) سرکاری ملازمین اور پنشنرز کی بڑی تعداد نے یکم مارچ کو تنخواہیں اور پنشن نہ ملنے پر بینک کے سامنے احتجاجی مظاہرہ (بقیہ نمبر8صفحہ6پر)

کیا احتجاج کرنے والے سرکاری ملازمین اور پنشنرز کا کہنا تھا کہ نیشنل بینک مین برانچ خانیوال کافی عرصے سے یکم تاریخ تک سرکاری ملازمین اور پنشنرز کے بینک کھاتوں میں تنخواہیں اور پنشن منتقل کرنے میں ناکام ہے جبکہ ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس دفاتر سے تنخواہوں کے چیک ہر ماہ کی 26 سے 27 تاریخ کو بینکوں کو منتقل کردیے جاتے ہیں اور فنانس ڈیپارٹمنٹ کی بینکس کو سختی سے ہدایت ہے کہ وہ یکم مارچ تک ہر صورت تنخواہیں و پنشن ملازمین کے کھاتوں میں منتقل کردیں تما م نجی بینک تو یکم تاریخ کو تنخواہیں ملازمین کے اکاونٹس میں ٹرانسفر کردیتے ہیں مگر نیشنل بینک ہمیشہ تاریخ تاخیر سے تنخوائیں اس حوالے سے جب نیشنل بینک مین برانچ خانیوال کے منیجر آپریشن اکمل شاہ سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ بینک کا آن لائن سسٹم خراب ہونے کی وجہ سے ملازمین و پنشنرز کے کھاتوں میں تنخواہیں منتقل نہیں کی جاسکیں آل پاکستان کلرکس ایسوسی ایشن خانیوال ڈی سی آفس عمران کمبوہ، ایجوکیشن خانیوال کے منیر اور پنجاب ٹیچرز یونین خانیوال کے صدر طارق نیازی کا کہنا ہے کہ نیشنل بینک مین برانچ خانیوال کا ہر ماہ کی پہلی تین سے چار تاریخوں تک آن لائن سسٹم خراب رہتا ہے جبکہ باقی دنوں میں ٹھیک رہتا ہے انھوں نے گورنر سٹیٹ بینک پاکستان سے نیشنل بینک مین برانچ خانیوال کے ذمہ داروں کے خلاف کاروائی کی جائے ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفسر خانیوال چودھری غلام مصطفی نے میڈیا کو بتایا کہ ضلعی دفتر خزانہ سے ہر ماہ کی 25 سے 26 تاریخ تک تنخواہوں کے چیک نیشنل بینک سمیت تمام متعلقہ بینکس کو بھیج دیے جاتے ہیں ملازمین کو تنخواہیں ملنے میں تاخیر کے ذمہ دار بینکس ہیں۔ 

مطالبہ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -