کنز یو مر ایسوسی ایشن کا دودھ کی قیمتوں میں اضافے پر بائیکاٹ مہم کا اعلان 

کنز یو مر ایسوسی ایشن کا دودھ کی قیمتوں میں اضافے پر بائیکاٹ مہم کا اعلان 

  

       کراچی (اکنامک رپورٹر)کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان نے دودھ کی قیمتوں میں 40 روپے فی لیٹر من مانے اضافے پر بائیکاٹ مہم کا اعلان کر دیا صارفین کل بروز جمعرات سے دودھ کی خریداری کا مکمل بائیکاٹ کریں یہ بات صارفین کی نمائندہ تنظیم کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین کوکب اقبال نے اپنے دفتر میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے دودھ کی قیمت 120 مقرر کی ہے جبکہ گزشتہ کئی مہینوں سے شہر کراچی میں دودھ 140 روپے اعلانیہ فروخت کیا جارہا ہے بجائے اس کے حکومتی رٹ قائم کی جاتی منافع خوروں کو جیل بھیجا جاتا یا انکو لگام دینے کے لیے بھاری جرمانے کئے جاتے حکومت نے ان کے خلاف ایکشن نہیں لیا جسکا نتیجہ یہ نکلا کہ ڈیری فارمز نے مڈل مین کی ملی بھگت سے 160روپے فی لیٹر فریش دودھ کی قیمت مقرر کردی حالانکہ دودھ کی قیمت حکومت طے کرتی ہے۔کوکب اقبال نے کہا کہ کراچی میں روزانہ کی دودھ کھپت 70 لاکھ لیٹر ہے۔چالیس روپے کے اضافے سے روزانہ 28 کروڑ اور ماہانہ 8 ارب چالیس کروڑ روپے صارفین کی جیب سے نکل جائینگے۔انہوں نے واضح کیا کہ ڈیری فارمز ایسوسی ایشن کو خود ساختہ طور پر دودھ کی قیمت مقرر کرنے کا اختیار نہیں ہے۔جب بھی سرکاری قیمت مقرر کی جاتی ہے وہ اس پر عمل کرنے کی بجائے ایک دو روپیہ نہیں 10 سے 20 روپے اضافہ کردیتے ہیں۔کوکب اقبال نے کہا کہ دودھ کی قیمتوں میں حالیہ من مانہ اضافہ صارفین کو قبول نہیں۔کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان نے صارفین سے دودھ کی خریداری کی مکمل بائیکاٹ کی اپیل کی ہے کیونکہ حکومت اپنی رٹ قائم کرنے میں مکمل ناکام ہو چکی ہے۔انہوں نے کہا کہ دنیا میں صارفین کی ایسوسی ایشن قیمتوں کو کنٹرول کرنے کے لئے بائیکاٹ مہم چلاتی ہے۔کوکب اقبال نے دودھ فروش کو انتباہ کیا کہ وہ حکومت کے مقرر کردہ نرخوں پر دودھ کی فروخت کو یقینی بنائیں ورنہ ایسا نہ ہو کہ صارفین خود ڈنڈے اٹھانے پر مجبور ہو جائیں۔ ایک سوال کے جواب میں کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین کوکب اقبال نے کہا کہ معلوم نہیں کن وجوہات کی بنا پر دودھ فروشوں کو من مانی قیمت مقرر کرنے کا اختیار دے دیا گیا ہے۔ اگر یہ سلسلہ جاری رہا تو ہمیں خود ڈنڈے مار فورس تیار کرنی ہوگی۔ جو حکومتی نرخ پر دودھ فروش کو مجبور کرے گی کیونکہ اب صبر کا پیمانہ لبریز ہو چکا ہے۔انہوں نے کہا کہ ایک مہینہ کے لئے پرائس کنٹرولر کا  عہدہ مکمل اختیار کے ساتھ دے دیا جائے تو کس کی مجال ہوگی کہ وہ بلاجواز قیمتوں میں اضافہ کرے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر صارف ایک پلیٹ فارم پر متحد ہو جائیں تو یقینا کسی کو جرات نہیں ہوگی کہ وہ قیمتوں میں اضافہ کرسکے۔ کوکب اقبال نے کہا کہ شہر کراچی میں ملاوٹ والے دودھ کی فروخت کے ساتھ ساتھ ناپ تول میں بھی  ڈنڈی ماری جارہی ہے۔ صارفین کو ہر طریقے سے لوٹا جا رہا ہے اور حکومت بے بس اور خاموش ہے۔ انہوں نے کہا کہ رمضان المبارک کی آمد آمد ہے دودھ کا زیادہ استعمال رمضان المبارک میں ہوتا ہے۔صارفین اب مہنگائی سے بہت تنگ آچکے ہیں۔ انہوں نے حکومتی بے بسی پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا کہ صارفین کی جیب پر سالانہ 8 ارب چالیس کروڑ کا جو دودھ فروش ڈاکہ مار رہے ہیں اس کا جواب دار کون ہوگا۔ انہوں نے وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید سے مطالبہ کیا کہ پرائس کنٹرول کرنے کا اختیار فوری طور پر رینجرز کو منتقل کئے جائیں۔ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -