ڈی جی ریسکیو ہنجاب کا تمام اضلاع میں ریسکیو 1122 کی کارگردگی کا جائزہ

ڈی جی ریسکیو ہنجاب کا تمام اضلاع میں ریسکیو 1122 کی کارگردگی کا جائزہ

  



لاہور( کرائم سیل)ڈی جی ریسکیو پنجاب ڈاکٹر رضوان نصیرنے پنجاب کے تمام اضلاع میں ریسکیو 1122کی کارکردگی کا جائزہ لیاجسکا مقصد سروس کی کارکردگی کو مزید بہتر بنانا ہے۔ایمرجنسی سروس کے اعدادو شمار کے مطابق ریسکیو1122نے اپریل میں پنجاب بھر میں 46889 ریسکیوآپریشن کے دوران 49064ایمرجنسی متاثرین کو ریسکیوکیا، جبکہ سروس نے اس مہینے میں اوسط ریسپانس ٹائم7منٹ برقرار رکھا۔ اس دوران ریسکیو 1122کو موصول ہونے والی ایمرجنسی کالز کا موازنہ کیا جائے تو ان میں16869کال ٹریفک حادثات،22311 میڈیکل ایمرجنسی،1197آگ لگنے کے واقعات ،2178جرائم کی کال88,ڈوبنے کے واقعات, 67عمارتیں منہدم ہونے کے واقعات ، اور19دھماکوں کے واقعات اور 4160دیگر ریسکیو آپریشن جن پر ریسکیو1122نے ریسپانڈ کیا۔ گذشتہ روز ریسکیو1122ہیڈ کوارٹرز میں ایک میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر رضوان نصیر نے کہا کہ فائر سیفٹی ہی لائف سیفٹی ہے جبکہ بلڈنگ بائی لاز کے مطابق فائرسیفٹی کوڈز پرعملدرآمد وقت کی اہم ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایکسٹرنل سٹیل سٹیئرکیس، فائرڈورز، ایکسٹرنل ہائیڈرنٹس، ایمرجنسی انخلاء کانقشہ، ایمرجنسی پلان، آگ بجھانے کے آلات، اور بلندوبالاعمارت کی چھتوں اور اردگرد تجاوزات کو ہٹانے سے آتشزدگی کے واقعات پرجلدکنٹرول کیاجاسکتاہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پنجاب بھر میں روڈ ٹریفک کریشز کے تناسب میں اضافہ ہواہے جیساکہ ریسکیو1122روزانہ کی بنیاد پر اوسطً 500سے زائد روڈ ٹریفک حادثات پر ریسپانڈ کرتا ہے۔زندگیوں کو بچانے کے لیے شہریوں کو چاہیے کہ وہ اپنا اہم کردار ادا کریں۔ ڈی جی ریسکیو پنجاب کا کہنا تھا کہ اگرچہ ریسکیو1122لوگوں کی مدد کے لیے ہر وقت موجود ہے لیکن افراد اپنی زندگیاں خطرے میں مت ڈالیں۔ انہوں نے کہا کہ شہری حفاظتی اقدامات اہم کردار ادا کر سکتے ہیں کیونکہ احتیاط علاج سے بہتر ہے۔

مزید : علاقائی