عوام کو غلط امید نہیں دلانا چاہتا، لوڈ شیڈنگ کا عذاب جھیلنے کیلئے تیار رہیں، خواجہ آصف

عوام کو غلط امید نہیں دلانا چاہتا، لوڈ شیڈنگ کا عذاب جھیلنے کیلئے تیار رہیں، ...

  



اسلام آباد(آئی این پی) وفاقی وزیر پانی و بجلی خواجہ آصف نے کہا ہے کہ لوڈشیڈنگ کو ہر ممکن حد تک کنٹرول میں رکھنے کی کوشش کریں گے‘حکومت خود سب سے بڑی نادہندہ ہے، عوام کو کوئی غلط امید نہیں دلانا چاہتالوڈ شیڈنگ کے عذاب کو جھیلنے کیلئے تیار رہنا ہو گا‘پوری قوم کو اگلے 2 سے 3 ماہ تک لوڈ شیڈنگ کا عذاب برداشت کرنا پڑے گا‘ائیر کنڈیشنرز کے استعمال سے شارٹ فال3200میگاواٹ تک پہنچا ہے ‘ بجلی نادہندگان کے خلاف ہر ممکن کارروائی ہوگی، نادہندہ وفاقی ‘ صوبائی اورنجی اداروں کے کنکشن منقطع کررہے ہیں ‘بجلی چوری میں کوئی بھی ملوث ہو کارروائی ہوگی، جو بجلی کا بل نہیں دے گا اسے بجلی نہیں دینگے‘ لوڈشیڈنگ کیخلاف احتجاج کرنے والوں کی اکثریت بلوں کی ادائیگی نہ کرنے والوں کی ہے ۔ وہ جمعہ کو یہاں وزیر اطلاعات پرویز رشید اور وزیر مملکت برائے پانی و بجلی عابد شیر علی کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔ خواجہ آصف نے کہاکہ ہم نے عوام سے کئے گئے اپنے وعدے کے مطابق بجلی کی لوڈ شیڈنگ میں کمی کی اور سردیوں کے پورے سیزن میں کارخانے اور فیکٹریاں چلتی رہیں لیکن گرمی کی شدت میں اضافے کے بعد بجلی کی طلب میں بھی اضافہ ہو گیا ہے اور بجلی کا شارٹ فال 3200 میگا واٹ تک پہنچ گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پوری قوم کو اگلے 2 سے 3 ماہ تک بجلی کے شارٹ فال کی زحمت برداشت کرنی پڑے گی، کوشش ہے کہ لوڈ شیڈنگ قابل حد تک رہے۔وزیر پانی و بجلی نے کہا کہحکومت اور اس کے مختلف ادارے خود بھی بہت بلوں کے بہت بڑے نا دہندہ ہیں، ہم نے گزشتہ چند روز میں وفاقی حکومت اور صوبائی حکومتوں کے کنیکشنز بھی منقطع کئے ہیں، کوشش ہے کہ سرکاری اور پرائیویٹ اداروں کے اس سال کے جتنے بھی بجلی کے بقایاجات ہیں وہ جون سے پہلے وصول کر لئے جائیں، بجلی کے کنیکشنز کاٹنے کی جو مہم شروع کر رکھی ہے اس سے حکومت کو 3.2 ارب روپے کی وصولی ہوئی ہے۔خواجہ آصف نے کہا کہ 2200 میگا واٹ بجلی سسٹم میں آ چکی ہے یا اگلے 2 ماہ نیشنل گرڈ اسٹیشن میں آ جائے گی جس سے لوڈ شیڈنگ کے دورانیے میں کمی واقع ہو گی۔ حکومت نے گدو اور اوچ میں بجلی کے پلانٹس کا افتتاح کیا، اس کے علاوہ نندی پور پاور پراجیکٹ کی پہلی ٹربائن سے مئی میں بجلی کی پیداوار شروع ہو جائے گی جس سے شارٹ فال میں کمی واقع ہو گی۔خواجہ آصف نے کہا کہ چند لاکھ بجلی چوروں اور نادہندگان کی وجہ سے کروڑوں صارفین کو لوڈ شیڈنگ کا عذاب برداشت کرنا پڑتا ہے، سب پر واضح کر دینا چاہتا ہوں کہ جو لوگ بجلی کا بل ادا نہیں کرتے چاہے وہ وفاقی حکومت میں ہوں یا صوبائی حکومت میں انھیں کسی صورت بجلی فراہم نہیں کی جائے گی، اگر ایک فیڈر میں 90 فیصد لوگ بجلی چوری کرتے ہیں تو اس کی وجہ سے باقی 10 فیصد کو بھی لوڈ شیڈنگ کا عذاب بھگتنا پڑتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے خلاف مظاہرے کرنے والوں میں زیادہ تعداد ان لوگوں کی ہے ہو تونادہندہ ہے یا پھر کنڈے کے ذریعے بجلی کی فراہمی چاہتے ہیں لیکن ایسا ہرگز نہیں ہو سکتا جو بجلی کا بل ادا کرے گا صرف اسے ہی بجلی فراہم کی جائے گی

مزید : صفحہ اول


loading...