بڈو باغ خانیار میں آگ کی واردات میں 5رہائشی مکانات خاکستر

بڈو باغ خانیار میں آگ کی واردات میں 5رہائشی مکانات خاکستر

سرینگر(کے پی آئی( شمالی کشمیر میں بڈوباغ خانیار اور زرہامہ کپوارہ میں آگ کی ہولناک وارداتیں رونما ہونے کے نتیجے میں 5 رہائشی مکانات مکمل طور پر خاکستر ہو گئے ، جس کے نتیجے میں 8 غریب کنبے چھت اور عمر بھر کی جمع پونجی سے ہاتھ دھو بیٹھے ۔ اطلاعات کے مطابق شہر خاص کے خانیار علاقہ میں جمعہ کی صبح اس وقت خوف و دہشت اور تشویش کی لہر دوڑ گئی جبکہ خواتین اور بچوں نے چیخنا چلانا شروع کیا جب یہاں بڈوباغ بستی میں ایک مکان سے آگ نمودار ہوئی ۔عینی شاہدین کے مطابق آگ کے شعلوں نے جلد ہی گرد و نواح کے رہائشی مکانات کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا جس کے نتیجے میں کم از کم 4رہائشی مکانات شعلوں کی نذر ہوئے ۔بتایا جاتا ہے کہ بڈو باغ خانیار علاقہ میں آگ نمودار ہونے کی اطلاع ملتے ہی سینئر پی ڈی پی لیڈر اور ممبر قانون ساز کونسل محمد خورشید عالم جائے واردات پر پہنچ گئے اور انہوں نے فوری طور فائر اینڈ ایمرجنسی سروسز کی گاڑیوں کو یہاں طلب کر کے اپنی نگرانی میں آگ بجھانے کی کارروائی کروائی جبکہ اس دوران پولیس اہلکاروں اور مقامی نوجوانوں نے بھی آگ پر قابو پانے کی کارروائی میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ محمد خورشید عالم کی بر وقت مداخلت اور محکمہ فائرسروسز کی بر وقت بچا کارروائی کے نتیجے میں آگ کو پھیلنے سے روکا گیا ۔

انہوں نے بتایا کہ اگر آگ بجھانے کی کارروائی میں تاخیر ہوتی تو اس کے نتیجے میں نہ صرف یہ کہ مزید کئی رہائشی مکانات بھی خاکستر ہو جاتے بلکہ جانی نقصان ہونے کا اندیشہ بھی لاحق رہتا۔ادھر محمد خورشید عالم نے کے این ایس کو بتایا بڈوباغ علاقہ میں آگ کی واردات رونما ہونے کی اطلاع ملتے ہی وہ جائے واردات پر پہنچ گئے اور انہوں نے آگ بجھانے کی کارروائی اپنی نگرانی میں انجام کار تک پہنچائی ۔انہوں نے ریاستی انتظامیہ پر زور دیا کہ بڈو باغ خانیار علاقہ میں خاکستر ہوئے مکانات میں رہنے والے نصف درجن سے زیادہ کنبوں کی جلد سے جلد بازآباد کاری کیلئے اقدامات اٹھائے جائیں ۔انہوں نے کہا کہ وہ ذاتی طور متاثرہ کنبوں کی بازآباد کاری اور انہیں راحت پہنچانے کیلئے اقدامات اٹھائیں گے ۔مقامی لوگوں نے خورشید عالم کے جذبہ انسانیت کو سراہتے ہوئے کہا کہ اگر موصوف بروقت بچا کارروائی میں ذاتی دلچسپی نہ لیتے تو نہ جانے اور کتنے مکانات شعلوں کی نذر ہو گئے ہوتے ۔

مزید : عالمی منظر