شادی شدہ جوڑے کی طلاق نے اُن کی زندگی یکسر تبدیل کردی، ایک دوسرے سے دوری دونوں کو مالا مال کرنے کا سبب بن گئی

شادی شدہ جوڑے کی طلاق نے اُن کی زندگی یکسر تبدیل کردی، ایک دوسرے سے دوری ...
شادی شدہ جوڑے کی طلاق نے اُن کی زندگی یکسر تبدیل کردی، ایک دوسرے سے دوری دونوں کو مالا مال کرنے کا سبب بن گئی

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) ہمارے ہاں تو میاں بیوی میں خدانخواستہ اگر طلاق ہو جائے تو عمر بھر کے لیے ایک دوسرے کا چہرہ تک دیکھنے سے جاتے ہیں۔ اگرچہ اہل مغرب کا چلن ہم سے چنداں مختلف ہے مگر امریکہ کے اس مطلقہ جوڑے نے تو ایک ریکارڈ قائم کر دیا ہے اور طلاق کے بعد ایک دوسرے سے قطع تعلق ہوجانے والوں کے لیے ایک مثال قائم کر دی ہے۔ برطانوی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق امریکی ریاست نیو جرسی کے رہائشی کے کین(Ken) اور وینڈا بیس(Wanda Bass)کی15سالہ ازدواجی زندگی 2002ءمیں ختم ہو گئی مگر شادی کے بعد انہوں نے مل کر ایک کاروبار شروع کیا اور آج وہ کامیاب کاروباری پارٹنر ہیں۔

ہوا کچھ یوں کہ باقی جوڑوں کی طرح کین اور وینڈا میں بھی باہمی مخاصمت کا جذبہ پیدا ہو گیا تھا مگر ان دونوں کے دو بیٹے بھی تھے۔ ان دونوں نے اپنے بیٹوں کی خاطرباہمی تعلق بحال رکھنے کا فیصلہ کیا اور مختلف مواقع پر ایک دوسرے کو کارڈز بھیجتے تھے۔ مدرز ڈے پر کین وینڈا کو اور فاردرز ڈے پر وینڈا کین کو کارڈ بھیجتی، مگر وہ دونوں جب بھی کارڈ ز خریدنے سٹور پر گئے انہیں انتہائی مشکل صورتحال سے دوچار ہونا پڑا، کیونکہ وہاں انہیں ایسا کارڈ کبھی نہ مل سکا جو خاص طور پر طلاق یافتہ جوڑوں کے لیے بنایا گیا ہو اور کین اور وینڈا کے تعلق کی عکاسی کرتا ہو۔ دونوں ہی کو یہ تجربہ ہوا، دونوں نے اپنا تجربہ ایک دوسرے کے ساتھ شیئر کیا اور پھر مل کر طلاق یافتہ جوڑوں کے لیے مخصوص کارڈ ز بنانے کا کاروبار شروع کر دیا۔ اب وہ اس کاروبار سے اچھی خاصی آمدنی حاصل کر رہے ہیں۔

سعودی شہری سے شادی نے 22سالہ لڑکی کی زندگی بدل دی

رپورٹ کے مطابق کین کا کہنا تھا کہ”سٹور پر شوہر، بیوی، بیٹے ، بیٹی، دوست، غرض ہر رشتے کے لیے کارڈز موجود ہوتے تھے مگر ہم نے کبھی کسی سٹور پر ایسا کارڈ نہیں دیکھا تھا جو سابق شوہر یا سابق بیوی کے لیے ہو۔ میں جانتا تھا کہ اس وقت ہمارے معاشرے میں طلاق کی شرح 50فیصد تک ہو چکی ہے اور ہمارے علاوہ دیگر بھی کئی ایسے طلاق یافتہ جوڑے ہوں گے جو اس دشواری سے گزرتے ہوں گے۔ یہیں سے ہمیں اس کاروبار کا خیال آیا۔لہٰذا ہم نے ایکس کارڈز(Xcards) کے نام سے طلاق یافتہ جوڑوں کے لیے کارڈز بنانے شروع کر دیئے۔“ وینڈا کا کہنا تھا کہ ”ہمارے بیٹے بھی ہمارے اس مشترکہ کاروبار پر بہت خوش ہیں کیونکہ ان کارڈز سے طلاق یافتہ جوڑوں اور ان کی اولادوں پر انتہائی خوشگوار اثرات مرتب ہو رہے ہیں اور ان میں پیدا ہونے والی دوریاں کم ہو رہی ہیں۔“واضح رہے کہ کین اور وینڈا نے ایک ویب سائٹ Cards4X.comبنائی ہے جہاں سے یہ کارڈز خریدے جا سکتے ہیں۔ وہ ایک کارڈکی قیمت 2.75ڈالر (تقریباً 288روپے)وصول کرتے ہیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -