شانگلہ ،سیلاب متاثرین کے امدادی پیکج کی غیر منصفانہ تقسیم

شانگلہ ،سیلاب متاثرین کے امدادی پیکج کی غیر منصفانہ تقسیم

  

الپوری(ڈسٹرکٹ رپورٹر) شانگلہ حالیہ سیلاب سے متاثرہ ضلع شانگلہ میں امدادی پیکجز کی غیر منصفانہ تقسیم ، سیلاب متاثرین سراپا احتجا ج ، ویلج کونسل وہاب خیل کے منتخب کونسلرسلطان روم ، بادشاہ گل ، مقام خان ،عمر گل ، بخت زمان و دیگراں نے شانگلہ میڈیا سنٹر الپوری میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ شانگلہ میں غیر سرکاری تنظیم نے گزشتہ روز ضلعی انتظامیہ کے زیرنگرانی سیلاب متاثرین کے نام پیکجز کا تقسیم کیا ، تاہم پیکج لینے والوں میں کوئی بھی متاثر نہیں تھا، ان بلدیاتی نمائندوں نے ڈپٹی کمشنر شانگلہ سے ملاقات کی کوشش کی تا ہم وہ نہ مل سکا، بلدیاتی کونسلروں نے دھمکی دی ہے اگر دو دن میں تقسیم شدہ پیکجز کا لسٹ فراہم نہ کیا گیااور متاثرہ افراد کا صحیح جانچ پڑتال لگا کر مستحقین کو ان کا حق نہ پہنچایا گیا تو اپنے عوام کو سڑکوں پر نکال باہر کرکے ضلعی انتظامیہ اور شانگلہ میں غیر سرکاری تنظیموں کے خلاف بھر پور احتجاج کریں گے، جس کی ذمہ داری صوبائی حکومت کے ساتھ ساتھ ضلعی انتظامیہ پر ہوگی۔ بلدیاتی کونسلروں کا کہنا تھا کہ سیلاب میں متاثرہ افراد کو مسلسل نظر انداز کیا جارہا ہے اور فلاحی تنظیموں کی جانب سے سامان انتظامیہ کے کلرکس اور سٹاف اپس میں اقرباء پروری اور تعلقات کی بناء پر تقسیم ہوتی جارہی ہے جس میں حقیقی متاثرہ افراد نہ ہونے کے مترادف ہے، ان کونسلروں کا کہنا ہے کہ چونکہ تمام منتخب نمائندہ گان علاقے کے لوگوں کے نمائندے ہیں اسلئے صحیح مستحقین ان ہی نمائندوں کو معلوم ہونگے ، لہٰذا اسی تقسیم کے لئے منتخب نمائندوں کے ساتھ مشورہ کرنا یا ضلعی انتظامیہ کی طرف سے باقاعدہ سروے کرنا انتہائی ضروری تھا ، جبکہ دونوں بنیادی نکات ضلعی انتظامیہ اور مذکورہ غیر سرکاری تنظیم نے بالائے طاق رکھتے ہوئے اپنی مرضی کے مطابق امدادی پیکجز کا غلط طریقے سے تقسیم کیا۔ اس بارے میں متعلقہ کونسلروں نے ناظم اعلیٰ شانگلہ کے ساتھ بھی ملاقات کی ۔ ناظم اعلیٰ شانگلہ نے مذکورہ تمام لین دین سے ناخبری کا اظہار کیا۔ شانگلہ میں تمام تر ریلیف کا سامان ہمیشہ غیر مستحق افراد میں تقسیم کرنے سے جہاں غربت بڑھ رہی ہے تو وہاں عوام میں مایوسی بھی پھیل رہی ہے ، کیونکہ شانگلہ ویسے بھی ایک ایسا ضلع ہے جس میں غربت اور بے روزگاری کے مارے ہوئے عوام کے پاس زندگی گزارنے کے لئے کوئی وسائیل نہیں ہے۔شانگلہ کے عوام نے وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا ، رفاہی اداروں کے سربراہان اور ضلعی انتظامیہ سے اس سلسلے میں تحقیق اور مستحق افراد میں ریلیف کی بروقت تقسیم کی اپیل کی ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -