ترقیاتی پراجیکٹس پرکام کرنے والے ماہرین کی سیکیورٹی کے حوالے سے اجلاس

ترقیاتی پراجیکٹس پرکام کرنے والے ماہرین کی سیکیورٹی کے حوالے سے اجلاس

  

لا ہور (کرائم رپورٹر) صوبے بھر میں جاری ترقیاتی پراجیکٹس پر کام کرنے والے ماہرین کی سیکیورٹی کے لئے قائم کیے گئے سپیشل پروٹیکشن یونٹ کی رفتار کے جائزے، ان کی ٹریننگ،سپیشلائزڈ Homicideانوسٹی گیشن یونٹس، فائر آرمز اور ضلعوں میں موجود مال خانوں کی انسپکشن، نئی آسامیوں کی Allocation، پولیس کمپلینٹ اتھارٹی کے قیام اور دیگر اہم معاملات کا جائزہ لینے کے لئے انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب مشتاق احمد سکھیرا کی سربراہی میں گز شتہ روز سنٹرل پولیس آفس لاہور میں ایک اعلیٰ سطحی اجلاس منعقد ہوا۔اجلاس میں ایڈیشنل آئی جی ٹریننگ، کیپٹن (ر ) عثمان خٹک، ایڈیشنل آئی جی ویلفےئر اینڈ فنانس، سہیل خان، ایڈیشنل آئی جی آپریشنز/انوسٹی گیشن پنجاب، کیپٹن (ر) عارف نواز، ایڈیشنل آئی جی اسٹیبلشمنٹ پنجاب، ڈاکٹر عارف مشتاق، ڈی آئی جی اسٹیبلشمنٹ I-، اظہر حمید کھوکھر، ڈی آئی جی اسٹیبلشمنٹ II-، سلمان چوہدری،ڈی آئی جی ویلفےئر ، جان محمد،ڈی آئی جی انوسٹی گیشن،چوہدری شفیق احمد، ڈی آئی جی ہیڈ کوارٹرز، بی اے ناصر، ڈی آئی جی I.T، شاہد حنیف، ڈی آئی جی SPU، آغا یوسف، ڈی آئی جی آپریشنز، عامر ذوالفقار،ڈی آئی جیR&D،احمد اسحاق جہانگیر، اے آئی جی آپریشنز، احسن یونس، اے آئی جی ڈویلپمنٹ، کامران خان، اے آئی جی لاجسٹکس، ہمایوں بشیر تارڑ،اے آئی جی فنانس، حسین حبیب امتیاز، اے آئی جی مانیٹرنگ، وقاص الحسن ، اے آئی جی ایڈمن، زبیر دریشک اور اے آئی جی لیگل،کامران عادل کے علاوہ سی پی او کے دیگر افسران نے شرکت کی۔آئی جی پنجاب نے کہاکہ پنجاب میں جاری ترقیاتی پراجیکٹس پر کام کرنے والے چینی ماہرین کی سیکیورٹی کو یقینی بنانا ہمارا قومی فریضہ ہے اور اس کے لئے 4ہزار 76سیکیورٹی کانسٹیبلز کی بھرتی کا عمل مکمل کر لیا گیاہے۔ اس موقع پر ڈی آئی جی سپیشل پروٹیکشن یونٹ، آغا یوسف نے بریفنگ دیتے ہوئے آئی جی پنجاب کو بتایا کہ بھرتی ہونے والے کانسٹیبلز کی ٹریننگ کا مرحلہ جاری ہے اوریہ ٹریننگ 6ماہ کی ہوگی اور اس دوران سیکیورٹی کانسٹیبلز کو ماڈرن ہتھیاروں اور جدید آلات کے استعمال کی بھی ٹریننگ دی جارہی ہے جس کا پہلا بیچ 15ستمبر کو پاس آؤٹ ہو گااور ٹریننگ کا عمل مکمل ہوتے ہی انہیں ان 16پراجیکٹس پر تعینات کر دیا جائے گاجبکہ آپریشنل ڈیوٹی کے لئے آرمی کے تقریباََ 600ریٹائرڈ افسروں اور اہلکاروں کی بھرتی کا سلسلہ بھی جاری ہے۔ اس کے علاوہ قتل کی تفتیش کے لئے بنائے گئے سپیشلائزڈ Homicideانوسٹی گیشن یونٹ کی رفتار کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔میٹنگ میں صوبے بھر میں محکمہ پولیس کی تمام گاڑیوں کے لئے جاری ہونے والے پٹرول کے ریکارڈ میں شفافیت اور ڈسپلن برقرار رکھنے کے لئے ایک سافٹ وےئر کے ذریعے کمپیوٹرائزڈ کرنے کا فیصلہ کیا گیا اور اس ریکارڈ کو براہِ راست پولیس کے ایم ٹی ونگ کے ساتھ منسلک کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔

مزید :

علاقائی -