عوامی تحریک نے پاناما لیکس کی تحقیقات کیلئے ٹی او آرز تجویز کردیئے

عوامی تحریک نے پاناما لیکس کی تحقیقات کیلئے ٹی او آرز تجویز کردیئے

لاہور( خبر نگار خصوصی) عوامی تحریک نے پاناما لیکس کی تحقیقات کیلئے ٹی او آرز تجویز کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان کمیشنز آف انکوائری ایکٹ 1956 ء کے تحت سپریم کورٹ کو لکھا جانے والا خط حکومت واپس لے اور اپوزیشن جماعتوں کی مشاورت سے نئے ٹی او آرز کے ساتھ بااختیار انکوائری کمیشن کی تشکیل کیلئے آرڈیننس جاری کیا جائے ،خزانے کو نقصان پہنچانے والے ہرفرد کا کڑا احتساب کیا جائے تاہم قومی خزانے کے امین وزیر اعظم نوازشریف کا احتساب سب سے پہلے ہونا چاہیے۔پاناما لیکس انکشافات معاشی دہشتگردی ہے ،ایکشن پلان کے تحت فوجی عدالت بھی اس کی تحقیق کر سکتی ہے۔ٹی او آرز تجویز کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ مجوزہ کمیشن 1936 ء سے کاروبار کرنے کے دعویدار حکمران خاندان سے 1947 سے تاحال کاروباری تفصیل ،خاندانی اثاثوں کی تقسیم، منافع کی تفصیل ،ٹیکس کی ادائیگی اور اندرون، بیرون ملک بنائے جانے والے اثاثوں کے دستاویزی ثبوت طلب کرے۔ٹی او آرز کا اعلان پاکستان عوامی تحریک کے سیکرٹری جنرل خرم نواز گنڈاپور کی زیر صدارت منعقدہ ہنگامی اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس میں صوبائی صدور ،بریگیڈیئر(ر) محمد مشتاق، بشارت جسپال، فیاض وڑائچ، مرکزی سیکرٹری اطلاعات نوراللہ صدیقی ،ساجد بھٹی نے شرکت کی۔اجلاس کے بعد بریفنگ دیتے ہوئے خرم نواز گنڈاپور نے کہا کہ وزیراعظم کے بیٹے نے آف شور کمپنیوں کی ملکیت کا اعتراف کیا اور وفاقی وزیر داخلہ نے مے فیئرفلیٹس کا مالک وزیراعظم کو قرار دیا اور اس سے قبل وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے وزیراعظم کے لیے منی لانڈرنگ کرنے کے متعلق نیب کو اپنا تفصیلی بیان ریکارڈ کروایا اور وزیراعظم نے اپنے ٹیکس گوشواروں اور الیکشن کمیشن کو جمع کروائی گئی دستاویزات میں اپنے اور اپنے بچوں کے اثاثے ظاہر نہیں کیے۔وزیراعظم کی صاحبزادی مریم نواز نے اندرون یا بیرون ملک کسی کمپنی اور جائیداد کی ملکیت سے انکار کیا تاہم پاناما لیکس آنے کے بعد ان کا یہ دعویٰ غلط ثابت ہو چکا ہے۔حکمران خاندان کے تضادات سے بھرے ہوئے بیانات سے ظاہر ہوتا ہے کہ اس مالیاتی سکینڈل میں وزیراعظم بلواسطہ یا بلاواسطہ ملوث ہیں۔لہٰذا فوری طور پر بااختیار کمیشن تشکیل دے کر اس الجھے ہوئے مالیاتی سکینڈل کی تفتیش کی جائے اور وفاقی وزراء کو بھی طلب کر کے ان کے بیانات لیے جائیں ۔خرم نواز گنڈاپور نے کہا کہ وزیراعظم پاناما مالیاتی سکینڈل میں ملوث نظر آتے ہیں لہذا وہ کمیشن کی رپورٹ آنے تک اپنے عہدے سے بھی الگ ہو جائیں۔

ٹی او آرز تجویز

مزید : صفحہ آخر