13دن گزرنے کے باوجود زہریلی مٹھائی سے جاں بحق ہونیوالے افراد کی انکوائری رپورٹ مکمل نہ ہو سکی

13دن گزرنے کے باوجود زہریلی مٹھائی سے جاں بحق ہونیوالے افراد کی انکوائری ...

لیہ +کروڑ لعل عیسن(نامہ نگار)13دن گزرنے کے باوجود زہریلی مٹھائی سے جاں بحق ہونے والے افراد کی انکوائری رپورٹ مکمل نہ ہو سکی اور نہ ہی ہلاکتوں کا سلسلہ رُک سکا ہے آئے روز متاثرہ افراد کے جاں بحق ہونے کا سلسلہ جاری گزشتہ روز وزیر اعلیٰ پنجاب میں شہباز شریف تعزیت کے لئے چک نمبر 105 پہنچ جہاں پر ٹینٹ لگا کر ایک مخصوص جگہ بنائی گئی جس میں لیہ سے اراکین اسمبلی MNAصاحبزادہ فیض الحسن،MPAقیصر خان مگسی ،چوہدری اشفاق،احمد علی اولکھ عبداشکور سواگ کمیشنر ڈی جی خان محمد یثرب ڈی آئی جی رحمت اللہ نیازی ،DCOلیہ رانا گلزار ،DPoلیہ محمد علی ضیاء EDOصحت ڈاکٹر امیر عبداللہ ،ACکروڑ تنویر یزدان خان سمیت چند مسلم لیگی افراد اور لواحقین کو بلایا گیا جبکہ دیگر جبکہ میڈیا سمیت دیگر لوگوں کو اندر داخل نہ ہونے دیاگیااس دوران باہر موجودکچھ افراد نے وزیر اعلیٰ پنجاب کی آمد پر نعرے بازی کی گو نواز گو کے نعرے بھی لگائے گئے اور احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ حکومت علاج معالجہ کی سہولت دینے میں ناکام ہو چکی ہے 31افراد کی ہلاکت اور اتنے ہی متاثرین نے پنجاب گورنمنٹ کی گڈگورننس کا پول کھول دیا ہے ،تاہم وزیر اعلیٰ پنجاب نے متاثرین سے سانحہ کے حوالے سے معلومات لیں اس موقع پر خاندان کے سربراہ عمر حیات اور خواتین نے ہسپتالوں خصوصا نشتر ہسپتال کی انتظامیہ کی شکایت کی اور کہا کہ وہاں پر اُن کے ساتھ اچھا سلوک نہیں کیا گی ہمارے جو لوگ ہسپتالوں میں داخل تھے اُن کی زندگیاں ختم ہو رہی ہیں وزیر اعلیٰ نے لوحقین کو کو تسلی دلائی کہ انہیں ہر ممکن انصاف فراہم کیا جائے گا اور ملوث افراد کوکیفر کردار تک پہنچایا جائے گا انہوں نے چک نمبر 120میں ڈسپنسری کو بیسک ہیلتھ سنٹر کا درجہ دینے کا اعلان کیااور مرحومین کے لئے فاتح خوانی کی میڈیا کے داخلے پر پابندی کی وجہ سے سرکاری طور پر ہینڈ آؤٹ لاہور سے جاری کیا گیا ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ اول