وہ وقت جب چیف سلیکٹر انضمام الحق نے بھارتی شہری کی بلے سے پٹائی کردی کیونکہ۔۔۔ وجہ جان کر آپ کو بھی ہنسی آ جائے گی

وہ وقت جب چیف سلیکٹر انضمام الحق نے بھارتی شہری کی بلے سے پٹائی کردی ...
وہ وقت جب چیف سلیکٹر انضمام الحق نے بھارتی شہری کی بلے سے پٹائی کردی کیونکہ۔۔۔ وجہ جان کر آپ کو بھی ہنسی آ جائے گی

  


لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) پی سی بی کے موجودہ چیف سلیکٹر انضمام الحق کے شاندار کیرئیر کو ہر کوئی خراج تحسین پیش کرتا ہے۔ انہوں نے کئی یادگار اننگز کھیلیں اور ٹیم کو فتوحات دلائیں لیکن اس کے علاوہ بھی ان کے بہت سے مشہور قصے ہیں جنہیں جب بھی سنا جائے، غصے یا افسوس کے بجائے صرف ہنسی ہی آتی ہے۔ ایسا ہی ایک واقعہ ٹورنٹو میں بھی پیش آیا جہاں انضمام الحق نے ایک بھارتی شہری کو بلے کیساتھ پیٹ ڈالا۔

سوئنگ کے سلطان وسیم اکرم نے بھارتی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ”ٹورنٹو کے ایک گراﺅنڈ میں میچ ہو رہا تھا اور میں زخمی ہونے کے باعث کمنٹری کر رہا تھا۔ وہ گراﺅنڈ اتنا بڑا نہیں تھا اور باﺅنڈری کے بالکل قریب ہی تماشائی بیٹھے ہوئے تھے اور انضمام الحق بھی باﺅنڈری کے قریب ہی فیلڈنگ پر کھڑے تھے۔ اسی دوران کچھ انڈین حضرات نے سپیکر فون پکڑا اور ”آلو آلو“ کہنا شروع کر دیا۔ اب بھلا تم دیکھو تو سہی جس بندے کو چھیڑ رہے ہوں وہ 6 فٹ 3 انچ کا تگڑا جوان ہے، تمہیں اگر شرارت سوجھ ہی رہی ہے تو چھپ کر کہہ دو یا دور جا کر کہہ دو لیکن نہیں۔

انضمام نے کچھ دیر تک تو سنا اور پھر بارہویں کھلاڑی کو اپنے پاس بلایا۔ اس کا نام محمد حسین تھا اور تعلق لاہور سے تھا، وہ آیا تو انضمام نے کہا کہ مجھے بیٹ چاہئے، اب محمد حسین نے نہیں سوچا کہ یار یہ بندہ باﺅنڈری کے قریب کھڑا فیلڈنگ کر رہا ہے اور بیٹ مانگ رہا ہے، بھلا اسے بیٹ کی کیا ضرورت پیش آ گئی ، خیر وہ واپس گیا اور بیٹ لے آیا اور جیسے ہی اوور ختم ہوا انضمام چھلانگ لگا کر باﺅنڈری کے باہر چلا گیا اور بندے کو مارنا شروع کر دیا جس پر انضمام پر وہاں کیس بھی ہوا۔

اس کے بعد 1999ءمیں دوبارہ دہلی میں بھی ایک واقعہ پیش آیا جہاں انضمام بہت اچھی بیٹنگ کر رہا تھا، میں نمبر آٹھ پرکریز پرگیا تو اس دوران پورے سٹیڈیم نے ہی ”آلو آلو“ کہنا شروع کر دیا۔ میں کپتان تھا ، انضمام الحق کے پاس گیا اور کہا کہ یار غصہ نہ کرنا اور غلط شاٹ مار کر آﺅٹ نہیں ہونا تو انضمام نے کہا کہ ”یار وسیم بھائی کیا بات کر رہے ہیں، 40 ہزار بندہ مجھے آلو کہہ رہا ہے اور آپ کہہ رہے ہو کہ غصہ نہیں کرنا“۔

مزید : کھیل