سمیڈا‘کا5 سالہ ایس ایم ای ڈویلپمنٹ پلان وژن 2025 میں شامل

سمیڈا‘کا5 سالہ ایس ایم ای ڈویلپمنٹ پلان وژن 2025 میں شامل

  

لاہور(کامرس رپورٹر)سمال اینڈ میڈیم انٹر پرائزز ڈویلپمنٹ اتھارٹی ’سمیڈا‘ کے تحت تشکیل پانے والے پانچ سالہ ایس ایم ای ڈویلپمنٹ پلان کو حکومت پاکستان کی طرف سے منظور کردہ وژن 2025 میں شامل کر لیا گیا ہے اور اسکے مثبت اثرات جی ڈی پی، برآمدات، وسائل روزگار اور کاروباری اداروں کے فروغ پر مرتب ہورہے ہیں ۔ ایس ایم ای ڈویلپمنٹ کے حوالے سے سمیڈا کی طرف سے جاری شدہ ایک حالیہ رپورٹ میں بتا یا گیا ہے کہ گزشتہ سال کے دوران سمیڈا کے مختلف اقدامات کے نتیجے میں صنعتی و تجارتی شعبوں میں کل ۔ارب روپے کی نجی سرمایہ کاری ہوئی اور اس سلسلے میں سات ہزار ایس ایم ایز نے براہ راست سمیڈا کی خدمات سے استفادہ کیا۔ علاوہ ازیں افراد نے سمیڈا کی تربیتی پروگراموں سے کاروباری اور مسابقتی تربیت حاصل کی۔ رپورٹ میں بتا یا گیا ہے کہ یوں توں ایس ایم ایز کی موجودگی صنعت وحرفت کے ہر شعبہ میں نمایاں حیثیت رکھتی ہے ، مگر سمیڈا نے انتہائی اہمیت کے کل۔شعبوں کا تفصیلی ویلیو چین انلائسز کر کے قومی اور عالمی تناظر کو پیش نظر رکھتے ہوئے ایک قابل عمل حکمت عملی تشکیل دے رکھی ہے جس پر عملدرآمد جاری ہے۔ جس کے تحت پالیسی ، ریگولیشنز، مالیاتی وسائل تک رسائی ، بزنس ڈویلپمنٹ سروسز اور انفرا سٹرکچر جیسے امور میں مثبت تبدیلیاں رونما ہو رہی ہیں۔

سمیڈا کے بزنس اینڈ سیکٹر ڈویلپمنٹ ڈویژن کے جنرل مینیجر فواد ہاشم نے سمیڈا کی حکمت عملی پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ درحقیقت سمیڈا ، ایس ایم ای ڈویلپمنٹ کے محاذ پر ، ڈیمانڈ اورسپلائی دونوں اطراف پر کام کر رہا ہے اور اس سلسلے میں ایس ایم ایز کو حکومتی مدد سے بہرہ ور کرنے کے ساتھ ساتھ حکومتی ایوانوں کے اندر ایس ایم ایز کیلئے ہمدردانہ فضاء بھی قائم کرنے میں بھی کوشاں ہے۔ انہوں نے کہا کہ انہتائی قلیل بجٹ اور تھوڑے انسانی وسائل کے باوجود سمیڈا ، نئی ایس ایم ایز کے اجرا ء اور پہلے سے موجود ایس ایم ایز کی بقاء کیلئے قابل قدر خدمات انجا م دینے میں مصروف ہے اور اس ضمن میں سمیڈاکی سہ رخی پالیسی کے تحت ملک میں سازگار پالیسی ماحول، ایس ایم ایز کلسٹرز اور کاروباری سہولیاتی خدمات میں نمایاں بہتری آئی ہے۔ سمیڈا کے پالیسی اینڈ پلاننگ ڈویژن کی سربراہ محترمہ نادیہ جہانگیر سیٹھ نے ایس ایم ای ڈویلپمنٹ کی اہمیت پر اپنی رائے کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ دنیابھر میں معاشی ترقی کے خواہاں ممالک ایس ایم ای ڈویلپمنٹ پر بھاری رقوم خرچ کر رہے ہیں ان میں کوریا کی سمال اینڈ میڈیم بزنس ایڈمنسٹریشن؛ ایس ایم بی اے،، ترکی ، کی کوسگیب، اور امریکہ کی سمال بزنس ایڈمنسٹریشن؛ ایس بی اے نمایاں ہیں۔اگرچہ فنڈز کے اعتبار سے سمیڈا کا ان غیر ملکی اداروں کے ساتھ ہرگز کوئی موازنہ نہیں ، لیکن یہ ایک اٹل حقیقت ہے کہ سمیڈا اپنے ملک میں قلیل وسائل کے باوجود نمایاں خدمات انجام دے رہا ہے اور اس ضمن میں ترقیاتی بجٹ کی کمی کو پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام سے پورا کرنے کی کوشش کر رہاہے ۔ انہوں نے بتایا کہ سمیڈا ، پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ فنڈز سے ۵ء۱۔ارب روپے کی لاگت سے ملک بھر میں ایس ایم ایز کیلئے اب تک ۶۱۔ مشترکہ سہولیاتی مراکز قائم کر چکا ہے۔

مزید :

کامرس -