صحافیوں کا عراق میں داعش سے چھڑائے گئے علاقوں کا دورہ

صحافیوں کا عراق میں داعش سے چھڑائے گئے علاقوں کا دورہ

  

بغداد(این این آئی) صحافیوں نے عراق کے کرد اکثریتی صوبہ کردستان میں داعش کے چنگل سے چھڑائے گئے شہریوں اور داعش کے ساتھ وابستہ رہنے نوجوانوں اور خواتین کی اصلاح کے لیے قائم کردہ اصلاح سیں ٹر کا دورہ کیا۔عر ٹی وی کے مطابق اس دورے کے دوران کم عمر داعشی جنگجوؤں اور خواتین سے بھی ملاقات کی۔ انہیں کرد فورسز الپیشمرگہ اور ’الاسائچ‘ سیکیورٹی فورسز نے موصل میں جاری آپریشن کے دوران گرفتار کیا گیا تھا۔کرد فورسز کے ہاتھوں گرفتار ہونے والوں میں ’داعش‘ کے کم عمر لڑکے اور داعشی خواتین شامل ہیں۔داعش کے زیرانتظام ’خنسا بریگیڈ‘ سے وابستہ کئی خواتین بھی کرد فورسز کے ہاتھوں گرفتارہوئیں۔مجموعی طور پر ایسے 20 مردو خواتین کو حراست میں لیا گیا جو گذشتہ کچھ عرصے سیداعش کی قائم کردہ خود ساختہ حکومت میں داعش کے ملازم رہ چکے ہیں۔ خواتین میں’الحسبہ’ کی عناصر شامل ہیں جن کی اہم ترین ذمہ داریاں خواتین کی تلاشی، چیکنگ، داعش کے وضع کردہ قوانین کی خلاف ورزی پرانہیں کوڑے مارنے حتیٰ کہ قتل تک کرنے کے ذمہ داریاں شامل تھیں۔انہی خواتین میں سے بعض کی ذمہ داریاں لڑکیوں کو داعشی جنگجوؤں کے ساتھ شادیوں پر آمادہ کرنا اور انہیں قائل کرنا تھا۔کرد سیکیورٹی فورسز کے اہلکار نے بتایا کہ داعشی خواتین کو موصل، الشرقات اور بعشیقہ سے حراست میں لیا گیا۔

یہ سب داعشی جنگجوؤں کی بیگمات ہیں۔عراقی عہدیدار نے بتایا کہ گرفتار کی گئی خواتین نے اگرچہ بہت سے جرائم کا اعتراف نہیں کیا مگر ان کی تحویل میں کئی خواتین کی موت کی تصدیق ہوچکی ہے۔ غالب امکان یہ ہے کہ زیرحراست خواتین کی اموات وحشیانہ تشدد کا نتیجہ ہوسکتی ہے۔

مزید :

عالمی منظر -