جھوٹا مقدمہ درج کرانے پر ہرجانے کے دعوے کی سماعت 17مئی تک ملتوی

جھوٹا مقدمہ درج کرانے پر ہرجانے کے دعوے کی سماعت 17مئی تک ملتوی

  

لاہور(نامہ نگار) سول جج نے میوہسپتال کے8ینگ ڈاکٹروں کے خلاف جھوٹا مقدمہ درج کرانے پر محمد افضل کے خلاف 50کروڑ روپے ہرجانے کے دعوے کی سماعت 17مئی تک ملتوی کردی۔سول جج رائے افضال کی عدالت میں ڈیرھ سالہ بچے فہد کے والد محمد افضل کے خلاف ینگ ڈاکٹروں کے خلاف قتل کا جھوٹا مقدمہ درج کرانے کی سماعت ہوئی۔50 کروڑ روپے ہرجانے کا یہ دعوی ٰمیوہسپتال کے ڈاکٹر سلمان کاظمی، ڈاکٹر عثمان، ڈاکٹر حنان،ڈاکٹر مطلوب سمیت 8 ڈاکٹروں نے بچے کے والد کے خلاف دائرکررکھا ہے ۔ سول عدالت میں دوران سماعت ڈیرھ سالہ فہد کے والد محمد افضل نے عدالت میں آٹھوں ڈاکٹروں سے معافی مانگ لی، عدالت میں حلفیہ بیان دیتے ہوئے اس نے موقف اختیار کیا کہ اس کے بیٹے کی موت میوہسپتال کی ایمر جنسی میں ڈاکٹروں کی وجہ سے نہیں ہوئی، اس کو انتظامیہ نے استعمال کیا،انہوں نے جو کہا اس نے ہاں کردی تھی، اس کو معاف کردیا جائے۔ عدالت نے ینگ ڈاکٹروں سے رائے طلب کی کہ وہ اسے معاف کرنا چاہتے ہیں یا نہیں، اس پر ینگ ڈاکٹروں کی طرف سے مہلت طلب کی گئی جس پرفاضل جج نے کیس کی مزید سماعت 17مئی تک ملتوی کردی۔

مزید :

علاقائی -