100گیڈر بھی آجائیں تو شیر کھڑا رہتا ہے : نواز شریف

100گیڈر بھی آجائیں تو شیر کھڑا رہتا ہے : نواز شریف

  

لیہ(مانیٹرنگ ڈیسک ،اے پی پی)وزیراعظم پاکستان محمد نوازشریف نے کہا ہے کہ مخالفین کا ایجنڈا تخریب کاری ،جھوٹ ،دشنام اور الزام تراشی ہے۔وہ ہمیں گالیاں نکالتے ہیں لیکن ہم گالی کا جواب گالی سے نہیں دیتے۔وہ روز جھوٹ بولتے ہیں ہم صرف عوام کی خدمت پر یقین رکھتے ہیں۔وہ کیسے قوم کے لیڈر بن سکتے ہیں جن کی اپنی زبان ہی اپنی قابو میں نہ ہو۔انہوں نے کہاکہ 100گیدڑ بھی مقابلے میں آجائیں تو شیر کا کچھ نہیں بگاڑسکتے۔عوام نے آج لیہ میں جس محبت سے نوازامجھے یقین ہوگیا ہے کہ ماضی کی طرح 2018ء کے الیکشن میں بھی مخالفین کو کامیابی نہیں ہوگی بلکہ ان کی ضمانتیں ضبط ہوجائیں گی۔ان خیالات کااظہارانہوں نے منگل کے روز لیہ میں ایک بہت بڑے جلسہ عام سے خطاب کے دوران کیا۔وزیراعظم نوازشریف نے کہاکہ شیر اپنی جگہ پر کھڑا رہتا ہے اس کے مقابلے میں 100گیدڑ بھی آجائیں تو اس کاکچھ نہیں بگاڑسکتے۔وزیراعظم نوازشریف نے کہاکہ آج لیہ میں جتنا بڑا جلسہ ہے اس میں مخالفین کی 10جلسیاں بھی سما سکتی ہیں اورپھربھی جگہ بچ جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ میں نے اسلام آباد میں ان کی جلسی کی جھلکیاں سوشل میڈیا پر دیکھی تھیں اور وہاں کرسیاں خالی نظرآرہی تھیں۔ انہوں نے کہاکہ 2013ء کے انتخابات میں لیہ کی عوام نے مخالفوں کو رد کرکے ن لیگ کو ووٹ دیاتھا۔آج کا جلسہ مجھے 2018ء کی نوید سنا رہا ہے۔کسی کو غلط فہمی میں نہیں رہنا چاہیے۔انہیں معلوم ہونا چاہیے کہ ان کی جلسیاں کام نہیں آئیں گی۔انہوں نے کہاکہ ہم عوام کی خوشحالی کے لئے کام کررہے ہیں۔میراوعدہ ہے کہ لوڈشیڈنگ ہمیشہ کے لیے ختم ہوجائے گی۔ہم نے اس پر تیزی سے کام شروع کیا ہوا ہے۔حویلی بہادر شاہ اور بلوکی میں بجلی گھروں کا جلد افتتاح ہوگا۔پچھلے چند ہفتوں کے دوران بھی ہم نے نئے بجلی گھروں کا افتتاح کیا۔آنے والے دنوں میں بھی تیزی سے یہ کام جاری رہے گااوراگلے سال کے شروع تک 10ہزار میگا واٹ بجلی سسٹم میں شامل ہوجائے گی۔اور جب ایک مرتبہ بجلی آئے گی تو پھرکبھی نہیں جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ ہم عوام کیلئے بجلی سستی کرنا چاہتے ہیں۔کاشتکاروں کے لیے ٹیوب ویل کی بجلی بھی سستی کریں گے۔نئی موٹرویز بن رہی ہیں ۔سڑکیں بنائی جارہی ہیں۔لیہ سے تونسہ تک پل بنے گا جس سے 180کلومیٹر کا فاصلہ کم ہو کر صرف24کلومیٹر رہ جائے گا اورلیہ سے انڈس ہائی وے کاسفر صرف آدھے گھنٹے میں مکمل ہوجائے گا۔انہوں نے کہاکہ نوازشریف وعدے پورے کرتا ہے۔ہم صرف فیتہ کاٹ کر نہیں چلے جاتے ۔میں نے ہدایت کی ہے کہ پل کا کام تیزی سے مکمل ہونا چاہیے۔انہوں نے مزید بتایا کہ اس پل کی تعمیر پر 700کروڑ روپے لاگت آئے گی۔وزیراعظم نے اس موقع پر کہاکہ ہم سی پیک پر کام کررہے ہیں جس سے پاکستان مضبوط ہوگا ۔عوام خوشحال ہونگے۔مخالفین سے پوچھیں کہ گزشتہ چارسال کے دوران انہوں نے شور مچانے کے علاوہ کوئی کام کی بات بھی کی۔یہ نیا پاکستان بنانے کادعوی کرتے ہیں انہیں ایک صوبے میں حکومت ملی وہاں بھی انہوں نے پرانا پاکستان کردیا۔نیا پاکستان ہم بنارہے ہیں۔ترقی کا سفر اسی طرح جاری رہے گا۔دوسری طرف وزیراعظم لیہ میں دریائے سندھ پر تعمیر ہونے والے نئے پل اور سڑک کا سنگ بنیاد رکھا۔لیہ سے تونسہ تک تعمیر ہونے والایہ پل 700کروڑ لاگت سے مکمل ہوگا۔پل کی لمبائی 1.55کلومیٹر ہے اوراس کے دونوں جانب کی سڑکوں کوملا کر منصوبے کی کل طوالت 24.1کلومیٹر بنتی ہے۔اس سڑک اورپل کی تعمیر سے لیہ اور تونسہ کے درمیان فاصلہ 50کلومیٹر کم ہوجائے گا اور دوگھنٹے کا فاصلہ صرف آدھے گھنٹے میں طے ہوسکے گا۔وزیراعظم نوازشریف نے لیہ،چوک اعظم ،فتح پور اور کروڑ لعل عیسن کے لیے سوئی گیس کی فراہمی کا بھی اعلان کیا۔وزیراعظم نے چک 128سے سمرا نشیب تک 50کلومیٹر سڑک کی تعمیر کے احکامات بھی جاری کیے۔وزیراعظم نے اعلان کیا کہ ہیلتھ کارڈ سکیم میں لیہ کوبھی شامل کیاگیا ہے اور چند روز میں مختلف ٹیمیں آکر لیہ میں سروے کریں گی جس کے بعد مستحقین کو ہیلتھ کارڈ جاری کیے جائیں گے جن کے ذریعے وہ حکومت کے خرچ پر علاج معالجے کی سہولتیں حاصل کرسکیں گے۔اس موقع پر جلسہ عام میں گورنر پنجاب ملک رفیق رجوانہ ،وفاقی وزیر خواجہ سعد رفیق اور وزیرمملکت عابد شیر علی بھی موجودتھے۔جلسہ عام میں مسلم لیگ(ن) لیہ کے رہنماء ملک احمد علی اولکھ،ایم این اے صاحبزادہ فیض الحسن سواگ اور ایم این اے سید ثقلین بخاری نے بھی خطاب کیا۔

اسلام آباد(صباح نیوز)وزیر اعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ پارلیمانی وفود کے تبادلوں سے پاکستان اور افغانستان کے دو طرفہ تعلقات مستحکم ہونگے اور علاقائی امن و استحکام کے مشترکہ مقاصد حاصل کرنے میں مدد ملے گی۔تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم نواز شریف سے سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق نے اسلام آباد میں ملاقات کی اس دوران انہوں نے پارلیمانی وفد کے دورہ افغانستان کی تفصیلات سے وزیر اعظم کو آگاہ کیا۔ اس موقع پر بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نواز شریف نے کہا کہ پاکستان اور افغانستان کے درمیان پارلیمانی وفود کا تبادلہ خوش آئند ہے ایسے دوروں سے پاک افغان تعلقات مستحکم ہونگے اور علاقائی امن و استحکام کے مشترکہ مقاصد کے حصول میں مدد ملے گی۔

سپیکر سے گفتگو

مزید :

صفحہ اول -