اے پی بی ایف نے بجٹ تجاویز کیلئے مشاورت شروع کردی

اے پی بی ایف نے بجٹ تجاویز کیلئے مشاورت شروع کردی

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر)آل پاکستان بزنس فورم نے مالی سال2017-18کی حتمی بجٹ تجاویز کیلئے مشاورتی عمل شروع کردیا ہے ۔اس بات کا اعلان اے پی بی ایف کے صدر ابراہیم قریشی کی صدارت میں ہونے والے ایک اجلاس میں کیا گیا جو کہ بجٹ تجاویز کی تیاری کیلئے مشاورتی عمل کے آغاز کے حوالے سے طلب کیا گیا تھا،اس اجلاس میں فورم کی ایگزیکٹیو کمیٹی کے اراکین سمیت صنعتی وتجارتی تنظیموں کے نمائندگان بھی بڑی تعداد میں شریک تھے ۔اے پی بی ایف کے صدر ابراہیم قریشی کا کہنا تھا کہ ہمارے پلیٹ فارم سے مہیا کردہ تجاویز حکومت کو کاروبار دوست بجٹ بنانے میں مدد فراہم کریں گی ،ان کا کہنا تھا کہ تاجر برادری یہ بات سمجھتی ہے کہ وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار اقتصادی چیلنجز پر قابو پانے کیلئے اپنی ہر ممکن صلاحیت برائے کار لارہے ہیں ،تاہم دوسری جانب تاجر و صنعتکار خود کو ٹیکس کے بوجھ تلے دبا بھی محسوس کرتے ہیں ۔تمام دنیا میں نجی شعبہ اقتصادی پالیسیوں کی تیاری میں کلیدی کردار ادا کرتا ہے اور اسی لئے اے پی بی ایف بھی نجی شعبے کی مدد اور مشاورت سے حکومت کیلئے ہمیشہ بجٹ تجاویز کی فراہمی کیلئے اپنا کردار ادا کرتی ہے ،ہم سمجھتے ہیں کہ چھوٹے بڑے تمام اقتصادی معاملات پر حکومت اور نجی شعبے کا ایک ہی صفحے پر ہونا ضروری ہے ،اے پی بی ایف اپنی بجٹ تجاویز میں سرمایہ کاروں کو مراعات دینے،معاشی دستاویزات کے ذریعے ٹیکس کا دائرہ کار وسیع کرنے،ٹیکس نظام کو سادہ اور سہل بنانے اور ایف بی آر کی اسٹریکچرنگ سمیت انڈسٹری کے دیگر مشوروں کو بجٹ تجاویز کا حصہ بنائے گی ،اے پی بی ایف بجٹ تجاویز میں سیلز ٹیکس سلیب میں کمی،غیر ملکی سرمایہ کاری میں اضافے ،آمدن میں براہ راست ٹیکسوں کا حصہ بڑھانے سمیت دیگر سفارشات کو بھی بجٹ تجاویز میں شامل کرے گی،اے پی بی ایف کی ایگزیکٹیو کمیٹی کے تمام اراکین کو اس ضمن میں ہدایات جاری کردی گئی ہیں کہ بجٹ تجاویز کی تیاری کیلئے تاجروں اور صنعتکاروں سے رابطے تیز کردیں اور ان کے مسائل اور انکے حل سے متعلق سفارشات مرتب کریں تا کہ بجٹ تجاویز بنانے میں آسانی ہو ،اے پی بی ایف تاجروں اور صنعتکاروں کی مشاور سے تیار کردہ بجٹ تجاویز وزارت خزانہ کو ارسال کرے گی تا کہ ان بجٹ تجاویز کو وفاقی بجٹ دستاویز کا حصہ بنایا جاسکے۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -