”اس دن میں اس عورت سے بات کر کے واقعی بے ہوش ہو گیا کیونکہ 60برس پہلے ۔۔۔“پاکستانی شہری نے ایسا واقعہ سنا دیا کہ جان کر آپکی آ نکھیں بھی نم ہو جائیں گی

”اس دن میں اس عورت سے بات کر کے واقعی بے ہوش ہو گیا کیونکہ 60برس پہلے ...
”اس دن میں اس عورت سے بات کر کے واقعی بے ہوش ہو گیا کیونکہ 60برس پہلے ۔۔۔“پاکستانی شہری نے ایسا واقعہ سنا دیا کہ جان کر آپکی آ نکھیں بھی نم ہو جائیں گی

  

شرینگل(ڈیلی پاکستان آن لائن ) 60سال سے بچھڑے پاکستانی بہن بھائی ایک دوسرے کو سوشل میڈیاایپ ”ایمو “ پر دیکھتے ہی بے ہوش ہو گئے۔ اپردیر کے گاﺅں داروڑہ کے نواحی علاقے گودکوہی عشیرئی درہ کی جہان سلطان کے مقبوضہ کشمیر میں موجود ہونے کا انکشاف ہوا ہے ۔

’’روزنامہ امت ‘‘کے مطابق 60 سال قبل سورہ کی بھینٹ چڑھنے والی گورکوہی عشیرئی درہ کی رہائشی جہان سلطان نامی خاتون مقبوضہ کشمیر میں پائی گئی۔ گودکوہی عشیرئی دورہ کے مکین انعام الدین ولد خان میاں نے میڈیو کو بتایا کہ 60برس قبل دادا نے ان کی بہن جہان سلطان کو کم عمری میں سورہ رسم کی بھینٹ چڑھا دیا تھا اور جب دونوں نے ایک دوسرے کو ”ایمو“ پر دیکھا تو بے ہو ش ہو گئے۔

انعام الدین نے انکشاف کیا کہ جہان سلطان کو اس کے سسرال والوں نے پنڈی میں کہیں فروخت کر دیا تھا جس کے بعد وہ لاپتہ ہو گئی۔” بہن سے ملنے کے لیے ملک کاکونہ کونہ چھان مارا لیکن کوئی معلومات نہیں ملیں تو ہم نے سوچا شاید وہ وفات پا چکی ہے “۔

اس کا مزید کہنا تھا کہ 8جنوری کو مقبوضہ کشمیر کے ضیا نامی نوجوان نے فیس بک پوسٹ میں اپنی والدہ کا تعلق عشیرئی درہ گور کوہی سے ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ وہ انعام الدین کا بھانجا ہے ۔ پوسٹ میں ملانے والے کیلئے 10لاکھ روپے انعام کا علان بھی کیا گیا تھا ، اس پوسٹ کے بعد تیمر گرہ کے رحیم الدین اور اکرام نامی شخص نے معلومات کے بعد رابطہ کیا ۔ اس موقع پر دونوں بہن بھائیوں نے 60سال بعد ایمو ایپ پر ایک دوسرے کو دیکھا ۔اس موقع پر سلطان جہان وہاں جبکہ میں یہاں بے ہوش ہو گیا ۔ انعام الدین کا کہنا ہے کہ وہ اپنی بہن سے بالمشافہ ملنے کیلئے سفارتی سطح پر کوشش کر رہا ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -